Urdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem


Allahabad copyUrdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem
Allahabad: Cradle of Urdu literature

Muslim Saleem reciting his ghazals at Jashn-e-Muslim Saleem at MP Urdu Academy, Bhopal on December 30, 2012.(The poetry portion of this site is edited by Muslim Saleem, who is poet, writer and journalist of repute. Muslim Saleem’s ash’ar are widely popular due to being connected with grassroots. It was his idea that we created this directory of Urdu poets and writers of All-India level (-Chief Editor, Ataullah Faizan and Editor Abdul Ahad Farhan) (See Muslim Saleem’s poetry with English and Hindi translations at this web site and muslimsaleem.blogspot.com and wikipedia.org. This directory can also be seen by surfing ‘urdu poets and writers of india on google or directly in the poety section of khojkhabarnews.com)

(See Muslim Saleem’s poetry with English and Hindi translations at and http://www.muslimsaleem.blogspot.com, http://www.khojkhabarnews.com, http://www.muslimsaleem.wordpress.com and wikipedia.org)Email: muslimsaleem@rediffmail.com mobiles: 9009217456, 9893611323 phone 0755-2730580
(Note: the list of deceased litterateurs in the end of this directory)

……………………………………………………………………………………………………………………………………………(Th

Many famous writers of Urdu literature have a connection with Allahabad. Notable amongst them are Akbar Allahabadi, Raghupati Sahay Firaq Gorakhpuri Munshi Premchand, Upendra Nath ‘Ashk’, Syed Ahtesham Hussain, Syed Aijaz Hussain, Nooh Narwi, Tegh Allahabadi, Mehdi Jafar and Prof. Syed Mohammad Aqeel Rizvi. For Mushaira brand poetry, the name of Raaz Allahabadi is prominent. Novelists Ibn-e-Safi, and Adil Rasheed are also from Allahabad. Many new age poets, writers and critics like MA Qadeer, Fazle Hasnain, Jafar Askari and Muslim Saleem began their literary careers in Allahabad. Here are the profiles of some of prominent literary figures of Allahabad. (Ataullah Faizan, editor of Khojkhabarnews.com).

SEE ALSO: URDU LOVERS OF ALLAHABAD: THAT INCLUDES PROFILES OF  some brilliant Urdu lovers like Asif Usmani and Nazeer Ahmad Sami, Sagheer Ahmad Siddiqi etc.  (http://khojkhabarnews.com/?p=8559)

**************************************************************

 Prof. Syed Mohammad Aqeel Rizvi

Prof Mohammad Aqeel Rizvi

Aqeel Rizvi

 

 

 

 

 

Picture courtesy Rashid Ashraf (See also)

http://cimirror.blogspot.in/p/prof-syed-mohammad-aqeel-rizvi-ex-head.html

and

http://cimirror.blogspot.in/p/blog-page.html

 

***********************************************************************************

Atiq (Atique) Allahabadi: He was a good poet of Mushairas at All-India level. He was very kind and large-hearted. He was also a fan of my (Muslim Saleem’s) poetry and like my she’r

kaun hai is shahr main mujh se zyada bakhabar

mujhko saare bewafaon ke patey maloom hain.

Alas! Atiq passes away some years ago.

************************************************************

MA Qadeer (Mohammad Abdul Qadeer)

MA Qadeer:Mohammad Abdul Qadeer, generally known as MA Qadeer, is a great Urdu poet and writer as well as an Urdu activist. Basically, he is one of leading advocates of High Court but amazingly finds time to pen poetry, prefaces of literary books apart from Urdu activisim. He has founded Urdu Ghar literary society and has also got its building constructed. Actually, he made the Allahabad Municipal Corporation to allot the roof of one of its single-story buildings in Karela locality and then had a big hall constructed there, where literary functions are held. Urdu Ghar also serves as a publishing house of Urdu books.

Life and works: MA Qadeer was born on at Modha in Hamirpur district of Uttar Pradesh from where he completed his early education. Later, he studied law and started practice at the Allahabad High Court. Gradually, he rose to become one of the leading HC lawers. He is quite sensitive towards Islam and Urdu with thoroughly secular credentials. He is also a good Urdu poet and according to a well-established critic of Allahabad of Shabkhoon fame, his poetry is akin to the poetry of Nasikh.

Observation about MA Qadeer by Muslim Saleem: It is the good luck of the compiler of this directory to have interacted with MA Qadeer during his Allahabad stay for about five years. I don’t recall, when and where I met him for the first time but as soon as I met him I felt that I had known him for ages. Our understanding was reciprocal. MA Qadeer looks very simplistic at the first glance but when he speaks, his vast knowledge and insight leaves an awesome impact on the listener. He is also very large-hearted. It is difficult for a poet to acknowledge and praise other poets but MA Qadeer’s greatness lies in the fact that he not only praises others’ good poetry but also helps them publish their books. His observation is very sharp. Here I (Muslim Saleem) will cite an interesting episode. In the late 70s, we had an opportunity to travel together to Delhi by train. When we boarded the 3-tier compartment, a rustic had a black blanket spread on the middle berth. As MA Qadeer entered the compartment, he at once pointed out that a bug was crawling over the blanket. At first, I thought he was joking since it was very difficult for a person to spot a small, black bug on a jet black blanket. But when he put his finger on the bug, everyone was awe-struck. This incident will remain etched in my memory forever. His sensitivity and insight recently manifested in a poem “Intezar-e-Bazyabi”, which he wrote a day before a famous High Court decision was to come in an important case about the place of worship. In the poem, MA Qadeer foretold the decision correctly on the basis of insight. (See poem above)

*************************************************************

(Prof) Syed Ehtesham Hussain

Prof Ehtesham Hussain

********************************************************

  Prof. Syed Aijaz Hussain

Pror Syed Aijaz HussainDr. Syed Aijaz Hussain

Dr. Syed Aijaz Hussain, Abbas Hussaini and Husaini's father

*********************************************************

.Razia Kazmi

She is a poetess. Razia belongs to Allahabad and resides in New Jersey, USA. Email: krazia20@yahoo.com

رضیہ کاظمی،ایک مختصر تعارف
میراآبائی وطن ہندوستان کا ادبی،سیاسی،سماجی،تاریخی اور تہذیبی مرکز الہ آباد ہے۔تقریباً بارہ سالوں سےامریکہ کے ایک شمال مشرقی شہر نیو جرسی میں قیام پزیر ہوں۔
میرے والد محترم جناب سیّد مومن حسین صاحب شعلہ اپنے علاقہ کے ممتاز شعراء میں شمار کئے جاتے تھے۔ ان کا مجموعۂ کلام”نغمۂ فکر” کے نام سے ان کی زندگی ہی میں شائع ہوچکا تھا
میری ابتدائی تعلیم وتربیت گھر پر ہی اپنے والدین کے زیر نگرانی انجام پائی۔الہ آباد اورآگرہ یونیورسٹی سےاعلیٰ تعلیم مکمّل کرنے کے بعد میرا تقرّرگورنمٹ گرلس انٹر کالجوں کے لئے بحیثیت اردولکچرار ہوا۔اس طرح اردو زبان وادب سے ان کا ایک اٹوٹ رشتہ قائم ہوگیاجوکم وبیش ایک چوتھائی صدی ،پرنسپل کے عہدہ پر فائز ہونے تک جاری رہا۔
ابتدا میں میرا رجحان شعر گوئی سے زیادہ افسانہ نویسی کی طرف تھا۔رفتہ رفتہ طبیعت شاعری کی طرف مائل ہونےلگی لیکن باقاعدہ طور پر شعر گوئی کا چسکہ یہاں امریکہ آنے کے بعد ہی لگا۔ میری محبوب ترین صنف سخن غزل ہے حالانکہ میں نے قطعات،قصیدے،سلام اورتہنیت ناموں وغیرہ پر بھی طبع آزمائی کی ہے۔
میری سو غزلوں پر مشتمل مجموعۂ کلام “صدپارہ ہائےدل”کےنام سےسن 2009 کےآخرمیں مثال پبلیکیشنز فیصل آباد،پاکستان سے شائع ہوچکاہے۔
کتاب کاایک مختصرفنّی جائزہ مشرقی امریکہ کی ایک مقتدرادبی ہستی جناب مامون ایمن صاحب نے لیا ہے۔ایک طویل اور خوبصورت قطعۂ تاریخ جناب باقر حسن زیدی صاحب نے لکھاہے۔ اس کےبعد سےکافی غیرمطبوعہ کلام جمع ہوچکا ہےاوربشرط حیات جلدہی اس کی اشاعت کا ارادہ ہے۔اب یہی میرا مشغلۂ حیات ہے۔
رضیہ کاظمی
۵جولائی ۲۰۱۳

(SHE is different from Razia Kazmi who lives in Delhi and is a writer of Hindi literature. )

…………………………………………………………………………………………….

Fazle Hasnain


Fazle Hasnain: He is a prolific writer especially of humour. He is also a great human being. He is candid with courteousness, sincere and unassuming. Fazle Hasnain does not believe in bragging and does keeps doing literary work with single-minded pursuit. Unlike a self-styled critic of Allahabad, he has a good understanding of poetry as well, though he is not a poet. Fazle Hasnain instantly memorises good Asha’ar. Born on December 7, 1946 at Rawaan, Lal Gopal Ganj in Allahabad district, Fazle Hasnain had shifted to Allahabad proper long ago and has been making the city proud.

Fazle Hasnain is one of the sons of Nisar Ahmad. His works are published in Indian and foreign magazines. He has written four documentary films’ scripts for Doordarshan. Two collections of his humorous and satirical articles – Ruswa Sare Bazaar and Du Badu – have been and three collections of drama – Roshni aur Dhoop, Ret Key Mahal and Raat Dhhalti Rahi have been published. He has also published the features on veteran poets and litterateurs in Hindi by the title Hua Jin Sey Shahr Ka Naam Roshan. His book on Ghalib is included in the syllabus of Allahabad University Diploma Course. He has also translated Charles Dickens’ David Copperfield in Urdu. Several of his books have been awarded by Urdu Academies of UP, West Bengal and Bihar. He has been bestowed with All-India Meer Award. On his overall literary contribution, the Uttar Pradesh Urdu Academy gave a Rs one lakh cash award to him in 2009. It may be mentioned that this is one of the highest amounts given by UP Urdu Academy to any litterateur. Fazle Hasnain’s brief biography has been published in Sada magazine brought out from London.

Friendship with Muslim Saleem: When I (Muslim Saleem) reached Allahabad to stay there at 4, Corporation Flats, Khuldabad, I first came into contact with Nazeer Ahmad Sami and Asif Usman. They introduced me to Fazle Hasnain and thus began the saga of an unending reciprocal sincerity and understanding. Fazle Hasnain spent a lot of time with me and guided me with his invaluable pieces of advices. I am proud that I have such friends as Fazle Hasnain, MA Qadeer, Nazeer Ahmad Sami, Asif Usmani, Sagheer Hussain Siddiqui (who has shifted to Delhi and lives there at Batla House) and Zafar Ehsan-ul-Haq (A resident of Fatehpur, who resided with me for some years at Allahabad and is now in Delhi).

Books by written by Fazle Hasnain: Ruswa Sare Bazaar and Du Badu (both comprising humorous and satirical articles), three collections of drama – Roshni aur Dhoop, Ret Key Mahal and Raat Dhhalti Rahi,  Ghalib Ek Nazar Mein, Hua Jin Sey Shahr Ka Naam Roshan (features on veteran poets and litterateurs in Hindi), Baat Ka Patangar (Hindi), Phailta Prakash (Hindi), Daaire Farz Ke (Hindi).

***************************************************************

Jafar Askari

Jafar Askari was born at Lucknow on June 20, 1945. (Died at Lucknow on Thursday October 20, 2016) He did his PhD on “Josh Malihabadi bahaisiyat nasr nigar” from Lucknow University in 1988. He retired as lecturer from Shia Post Graduate College in 2007. Jafar Askar is penning high class Urdu poetry for the last 40 years. His collection of poetry will be published soon. He has also written more than two dozen articles, which are also going to the press shortly. Book: Jash Malihabadi as nasr nigar. Compilation of books: 1. Raushni ke dareeche (collection of poetry of Prof. Syed Ahtesham Hussain), 1974 2. Jadeed Adab: manzar aur pas manzar 1978, 3. Josh Malihabadi: insan aur shair 1983.

Ties with Muslim Saleem: This son of Prof. Ahtesham Hussain is a gem of a person. He is a very sensitive human being as well as poet. I (Muslim Saleem) lived at 4, Corporation Flats, Khuldabad, Allahabad. The house of Jafar Askari was a stone’s throw away from my house. Not a day passed when I did not meet Jafar Askari. Though Jafar Askari seemed to be lost and self-centred, he was a Good Samaritan from the core of his heart. Ever since I have moved from Allahabad to Bhopal, I have been missing his company.  (Written on December 21, 2010).

Address: Jafar Askari, former lecturer Shia Degree College, House No. 239 Mumtaz Mahal Compound, Gola Ganj, Lucknow-226018.

Mobile No. 09956323840

**********************************************************

Prof Ali Ahmad Fatmi

Prof. Ali Ahmad Fatmi is at present head of Allahabad University’s Urdu department. He has written five books including 1. Ham asr Urdu Navil: Ek Mutalaah, 2. Kulliyat-I Ali Sardar Jafri. 3. Paremcand, Nae Tanazur Men, 4. Danishvar, Firaq Gorakhpuri, 5. Takhliqkar Qamar Rais. He has been a good friend of Muslim Saleem. During my stay at Allahabad, we had daily sittings in which literary issues were discussed. During my Allahabad stay, Fatmi had lent me his brand new Hero cycle, which I used for many years. He also used to lend me his Lambretta scooter generously at a time when my own brother refused to let me use his scooter. Fatmi introduced me to Prof. Mohammad Aqeel Rizvi and both of them encouraged me a lot, especially as a short story writer. I used to frequent his house and had also developed cordial relations with his nephew Ahmad Hussain. I had become so enamoured with him that despite being a Sunni, I used to attend Majlis. During those times (1975 to 1980), the house of Fatmi also served as a literary hub with Fakhrul Kareem, Asrar Gandhi, Muslim Saleem and many others frequently converged there and indulged in literary work. When I moved to Bhopal, we used to communicate with each other. However, after some time, the contact was lost. However, whenever Fatmi used to visit Bhopal, I somehow met him. It was a revival of our bonhomie on December 1, 2010 when “Ek shaam Muslim Saleem ke naam” was organised at Urdu Ghar, Kareli, Allahabad, where he was one of the guests of honour along with nonagenarian retired BBC Urdu compere Mr Yawar Abbas Rizvi, renowned poet and writer MA Qadeer and famous humourist Fazle Hasnain. I am thankful to him that he recalled the good old days in his speech on the occasion . (Written on December 21, 2010). (picture caption of above pic: Prof. Ali Ahmad Fatmi addressing “Ek Sham Muslim Saleem ke naam” at Urdu Ghar, Allahabad. Yawar Abbas Rizvi, MA Qadeer, Muslim Saleem and Fazle Hasnain are also seen.

****************************************************************

Mehdi Jafar

Mehdi Jafar is a name to reckon with in the world of Urdu literary criticism. In fact, he is a literary giant of Urdu, who has not hogged due highlight since he himself underplays him out of humility. He is an extremely good poet and writer. I have the honour of interacting with him at both Allahabad and Bhopal, where Mehdi Jafar did a long stint at a top government assignment. He lived in the same Shastri Nagar colony in Bhopal where I once lived. His memory is still so sharp that when I called him over mobile from Bhopal after about 25 years, he vividly remembered that I lived at a house near the post office of Shastri Nagar. Address: Mahdi Jafar, 729 Pathan Valli, Daryabad, Allahabad-211003. MoB; +91 9452495669

Our first meeting was when both of us were felicitated at a function at Allahabad in 1981. Later, I used to meet him frequently and got enlightened by his vast knowledge. Our interaction came down due to my moving away from Shastri Nagar and then his retirement and settling in Allahabad. His memories were rekindled in my mind when I received collection of his poetry “Keemiya-e-Samri” and went through it. The contents of Keemiya-e-Samri – ghazals, azad ghazal and poems – are indeed additions to Urdu poetry. He has his own brand and style. His observation and thought are deep. The Mehdi Jafar I know never does anything in ordinary way.  (Muslim Saleem, December 25, 2010)

***********************************************************************************

Shamsurrehman Faruqui

See “Urdu poets and writers of India

*************************************************************

Sahil Ahmad

Allahabad ke namwar muhaqqiq aur tanqeed nigaar hain jo ab Delhi main muqeem hain. Aap 128 kitabon ke musannif wa muallif hain

Present adrdress:

Sahil Ahmad
Phoenix Apartment
262-Noor Nagar Ext. Jamia Nagar, New Delhi-11oo25

phone No. o9818215737

https://ur.wikipedia.org/wiki/%D8%B3%D8%A7%D8%AD%D9%84_%D8%A7%D8%AD%D9%85%D8%AF

sahil ahmadSAHIL AHMAD BOOKS

sahil ahmad books

barqi on sahil

**************************************************************************************

Tauqeer Zaidi

Tauqeer ZaidiPoet, writer and moderator or Mohabbat group on Facebook. Born: 19th april 1970, did M.A. from Allahabad university, Published books- Sangam ki Lehren – 1989 Ghazals,Sahra – 1990- Ghazals n Nazm, Ghurbat- 2000- nazme, Aaho-Fughan-2003, recently written – Daro-rasan- ghazals (not published ) Mauto-Hayat Masnavi contanaing 3000 ashaar (not published) written few songd or bollywood,,, award- Saraswat Samman by Bhartiya Parishad. Address: 52-A/1, Dariyabad, Allahabad-211003, U.P. India

Mob:  07860611776

email:- mail@tauqeerzaidi.com
web :- www,tauqeerzaidi.com

**********************************************************

Khwaja Javed Akhtar

Khwaja Jawed Akhtar (died July 13, 2013) was born on September 2, 1964 at Kankinara, 24 Parganas (North) West Bengal. He obtained M.A. in Urdu from Aligarh Muslim University, in 1989. He is working in the office of the Principal Accountant General, Uttar Pradesh, Allahabad. His first book of Ghazals collection, named “neend shart nahin” was published in 2010. Also he compiled the Ghazals collection of 25 renowned young Urdu poets of India as a guest editor of Hindi quarterly “Unnayan”, Allahabad. He wrote the editorial of Urdu monthly “Kitab Numa”, Delhi, February 2002. His Ghazals are regularly published in various literary Urdu magazines in India and abroad. Address; D/129, GTB Nagar, Kareli, Allahabad-211016(U.P.). Mobile No:-09415365384.

………………………………………………………………………………………………………………………..

Waquif Ansari

Waquif Ansari: His full name is Mohammad Ali Ansari. He was born at village Osia in Ghazipur district in UP. At present, he is PA to Director, MSME, Allahabad. Waquif Ansari is a net savvy Urdu poet and his mention is found on many a websites. I came to know of him when he posted a comment on “Urdu poets and writers of Madhya Pradesh” on khojkhbarnews.com. In that comment he had urged me to start a directory of Urdu poets of India as well. I asked him to send his profile and then started the directory “Urdu poets and writers of India and then “Urdu poets and writers of world.” Therefore, credit also goes to Waquif Ansari for my launch of the two subsequent directories. Later, I launched “Poets and writers of Kashmir (+Jammu) and Kashmiri origin”, “Drama world of India” and now “Poets and writers of Allahabad”. I also met him during my felicitation function at Allahabad on December 1 heard his poetry with words of appreciation. His future as a poet is bright. (See also “Urdu poets and writers of India.”

******************************************************************

Rashid Allahabadi

Rashid Allahabadi: He is a brother of noted writer Fazle Hasnain. His works are published in Indian and foreign magazines. His collection of poetry “Mutthi Mein Aftab” has been awarded by UP Urdu Academy. He is one of the sons of Nisar Ahmad. He was born on January, 1947 at Rawaan, Lal Gopal Ganj in Allahabad district. His works are published in Indian and foreign magazines. His collection of poetry “Mutthi Bhar Aftab” has been awarded by UP Urdu Academy. Address: Rashid Allahabadi, Rawaan, Lal Gopal Ganj in Allahabad district-229413.

Ghazal by Rashid Allahabadi

Dil se tiri yaad ke naqsh udaa ke le gaya

waqt miri zeest ke sar se rida le gaya

Jab koi rukhsat hua, jane kyun aisa laga

jaise meray jism se jaan chura ke le gaya

Wo koi khuddar tha yaa ke adakar tha

hans ke gham-e-zaat ka karb chhupa ke le gaya

Rah mein kyun ro daya, lutf-e-safar kho diya

dil se bharosa tira paon ke chhale le gaya

Yaariyan, dildaariyan, bhuli hui dastaan

koi mire shahr se rasm-e-wafa le gaya

Rashid-e-shurida sar, khud pe kabhi ek nazar

ghar se tire aaina kaun uthha ke le gaya

********************************************************************

Nawab Hashmi

Nawab Hashmi was born on July 2, 1942 in village Pakripur, post Inayatpur, district Sultanpur. Uttar Pradesh. He got initial education in his village where Urdu teaching was not available. However, his father taught him Urdu at home. He passed BA from Allahabad University, was appointed as sub inspector of police in 1964 and retired as inspector in 2000. Penning poetry since 1980. Books: 1.   ‘Chieehti Sachchaiyan’ ( 2002. ) 2. ‘Shab Chirag’ Published year 2007.3.         ‘Al Aitraf’ (In Press.  Editing:   ‘Aina-e-ash’ar’ : Dr. Mazhar Nasim (Selected poetic collection released in 2007). Address: 409/992/1, Azmat Manzil, Tulsipur, Allahabad (UP). Phone No. (0532) 2658661, Mobile No. 09935513228,  09389584325

 

***************************************************************

Haseeb Rahbar Pratapgarhi

Haseeb Rahbar Pratapgarhi: He is a poet whose collection “Tanha Shajar” has earned acclaims. He is founder president of ‘Karvan-e-Urdu”, Kareli, Allahabad, vice-president of Bazm-e-Ghalib, vice president of Anjuman Roohe-e-Adab, Allahabad, which was founded by Sir Tej Bahadur Sapru. Address: Baitul Haseeb, C-779, Kareli, Allahabad-211016. Phone No. 0532-2550803.

**************************************************************

Ahmad Niyaz Razzaqui

Born March 8, 1977. Address: Kalwari Tola, New Jhusi, Allahabad. He is a young and emerging Urdu poet of Allahabad. I was impressed by his ghazal he recited at my felicitation function at Allahabad on December 1, 2010. I hope he will carve out his niche in Urdu poetry in the furure.  (Muslim Saleem December 22, 2010.) Here is one of his ghazals:

Maazi ko bhool jaana hi behtar laga mujhe

Jab jab bhi usko yaad kiya dar laga mujhe

Baahar to raushni ki chakachaund thi bahut

Lekin Ghana andhera to andar laga mujhe

Maara to tha adu he kisi aur ko magar

Shayad mein mustahaq tha ke pathhar laga mujhe

Main saare ranj-o-gham ko, masaaib ko bhool jaoon

Ek baar apne seene say aakar laga mujhe

Muddat say meri aankhon ko tha jiska intizar

Wo saamne jo aaya to patthhar lag mujhe

*************************************************************

Farrukh Jaffri

He is good poet of Allahabad. Though I did not have much interaction with him during my stay at Allahabad, I held him in esteem. I was pleased to meet him on December 1, 2010 at my felicitation function where he recited a very good ghazal. (Muslim Saleem, December 22, 2010).

*****************************************************************

Dr. Naim  Sahil: Is a poet. He is B.Com, M.B.E.S. His address is 639/A, Wasiabad, Allahabad – 211003 (UP) – India. One of his specimen ghazals is being presented below. His poetry is published in prestigious magazines of India. Mobile: 09305179240, email: drnaimsahil@yahoo.com

………………………………………………………………………………………………………….

Asrar Gandhi

Asrar Gandhi is a short story writer. He was one of my acquaintances at Allahabad. We used to meet generally at the house of Ali Ahmad Fatmi (Now prof and head of Allahabad University Urdu Department). His collection of short stories titled “Rehai” was published in the year 2004 by Rujhan Publications, Kareli, Allahabad. Noted Urdu critic Mehdi Jafar has spoke highly about one of his short stories “Raste band hain sab”, contained in the collection. Address: J/5, Gulab Badi Colony, Allahabad 211003 Phone: 0532 2656565.

**********************************************************

Tanveer Samani: He was born at Hatia, Allahabad on February 2, 1941. Tanveer is a good poet, who have been published in esteemed periodicals of India and Pakistan for the last 40 years. Collection of his poetry titled Harf-e-Natamaam has been published two years ago. Though Tanveer Samani is a fine poet but he has not hogged the limelight he deserves due to his being a low-profile and down-to-earth person. Here is a ghazal by Tanveer Samani.

mera saya banke sehra me phira karti rahi
door tak ye kaam bhi pagal hawa karti rahi

mein kisi gehre samandar me utarta hi gaya
tishnagi kuchh lazzaton se ashna karti rahi

unke isteqbal ko mein hi nahi uttha magar
zindagi har mod par mujhse mila karti rahi

kitne tofan-e-havadis saamne aate rahe
naav kagaz ki bahar surat chala karti rahi

kho gayi ankhon se wo tanveer suraj ki kiran
fikr ki jo roshni mujh ko ata karti rahi

*****************************************************************

Intezar (also Intazar) Ghazipuri: Syed Intezar Ahmad Ghazipuri was born August 3, 1936 to CID Inspector Syed Ilyas Hussain at Lucknow. He joined medical department service in 1959 and retired on August 31, 1994. He is a disciple of Siraj Lucknowi. His collection of poetry ‘Intezar-e-Saba’ and collection of Na’ats are under compilation. Address: B-293/1, Kareli Colony, Allahabad-211016. Phone No. 0532 2656495. Some couplets:

Bas itni rasm-o-rah hai is zindagi ke saath

ik ajnabi safar mein mila ajnabi ke saath

baarish ke baad ghar ki taraf dekhte ho kya

ab ye tumahar ghar hi naheen, rahguzar bhi hai

bazaahi auj sooraj ka mitaa deta hai taron ko

magar phir bhi sitaron ki darakhshani naheen jaati

******************************************************************

Shaista Fakhri

**************************************************************

Qamar Allahabadi: poet. Does not reside in Allahabad. Address: A-125, Rajpura Exension, New Delhi-110068

******************************************************

Alia Taqvi

Alia Taqvi غزل بر ردیف ‘بعض’

عشق میںجان و دل لٹا تے ہیں بعض
جلوۂ یار خود میں پاتے ہیں بعض

ہے کٹھن اتنی راہ منزل عیش۔۔۔۔۔۔۔
آدھےرستےسےلوٹ جاتےہیں بعض

نوک نیزہ پہ ہو بھلے ہی سر۔۔۔۔۔۔۔
پھر بھی پیغام حق سنا تےہیں بعض

بارہا بار گو نکالے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھربھی محفل میں ان کی جاتےہیں بعض

غم کا دریا ہے زندگی مانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
موتی خوشیوں کےڈھونڈ لاتےہیں بعض

کچھ تودشمن کو بھی بناتےہیں دوست
اور عدو دوست کو بناتے ہیں بعض

اس کی آنکھو ںمیں جانے کیا ہے بات
اس سےنظریں بھی کم ملاتے ہیں بعض

عالیہ تیری صاف گوئی سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانےکیوں لوگ خوف کھاتےہیں بعض
عالیہ تقوی،الہ آباد

************************************************************

Gulrez Allahabadi

Gulrez Allahabadi**************************************************************

Najeeb Allahabadi

Najeeb Allahabadi

**************************************************************

Farmood Allahabadi

Farmood Allahabadi copy

**********************************************************

Mohammad Shahid Safar

Mohammad Shahid Safar

**********************************************************

Asif Ghazipuri

Asif Ghazipuri

**********************************************************

Talab Jaunpuri

Talab Jaunpuri

**********************************************************

**********************************************************

Y A A D – E – R A F T A G A A N

*************************************************************

Purnam Allahabadi

Purnam Allahabadi pic

**********************************************************

Hazrat Shah Akmal Ajmali (RA)

حضرت سید شاہ محمد اکمل اجملی رحمتہ اللہ علیہ کا شماربرصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعروں میں ہوتا ہے. برصغیر کی تاریخ میں دائرہ شاہ اجمل الہ آباد وہ اہم ادبی مقام ہے جہاں ریاضت وحق شناسی تعلیم کے ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے اور اس کا ذکر تمام تذکرہ نگاروں نے اپنی کتاب میں کیا ہے،الہ آباد کی تاریخ کا اگر مختلف ادوار پر مبنی مطالعہ کیا جائے تو محض یہ ایک داستان نہیں ہے بلکہ اپنے عہد کی تہذیبی ثقافتی، سیاسی، اور تاریخی اقدار کی آئینہ دار ہے عہد قدیم سے دور جدید کا عکس ہے یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ آج برصغیر میں دینی ،علمی، وادبی رونق باقی رہ گئی ہے ان ہی پرانے چراغوں کا صدقہ ہے، اور الہ آباد کا خطہ ان کی روشنی کا امین ہے، الہ آباد کے مشائخ عظام نے علم و ادب کی جس طرح خدمت کی ہے اس کا اندازہ میرے خال معظم سید شاہ محمد اکمل اجملی نائب سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد رحمتہ اللہ علیہ کے رشحات قلم کا ثمر ہے،حضرت قبلہ سید شاہ محمد اکمل اجملی برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے تھے ، دائرہ شاہ اجمل کی ادبی خدمات پر بڑی گہری نگاہ تھی ،الہ آباد یونیورسٹی سے فارسی میں ایم اے کرنے کے بعد الہ آباد کے مشاہیر کے ادبی کارناموں پر تحقیق کرتے رہے خال معظم مرحوم کے تصانیف میں تذکرة الاولیا،تذکرةالا صفیاء،تذکرة سراج منیر،حیات افضل النور( دنیائے اسلام کی اہم شخصیات کی حیات وکارنامہ) تبصروں کی دنیاکے علاوہ منظوم تصانیف میں مرج البحرین،( قصائد ونظموں کا مجموعہ) العصر غزلوں اور نطموں کے مجموعہ کے علاوہ حضرت رسالت مآبﷺ کی حیات مقدسہ پر مبنی 571 بندوں پر مشتعمل مسدس کے انداز میں قصیدہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جبکہ آخر الذکر الہ آباد کے جدید وقدیم شعراء کی نعتون کا مجموعہ ہے،حضرت میر سید محمد کالپوی رحمتہ اللہ علیہ کی حیات اور نقش دوام بھی اعلی تخلیقات میں شامل ہیں ، حضرت قبلہ اکمل میان رحمتہ اللہ علیہ کی زندگی کا بیشتر وقت دائرہ شاہ اجمل کے بزرگوں کے ادبی خدمات کے جائزہ میں گزرا اور یہ تصنیف بھی حضرت اکمل میاں رحمتہ اللہ علیہ کی تحقیقی کوششوں اور کاوشوں کا نادر نمونہ ہے جس میں دائرہ شاہ اجمل کے مشاہیر کی فارسی و اردو ادب کی خدمات کا جائزہ لیا جارہا ہے ، کتاب پاکستان میں تکمیل کے آخری مراحل میں ہے،

(Contributed by Shah Waliullah and Shah Saadullah)

**************************************************************************

Hazrat Shah Mohammad Khalilullah Junaidi (RA)

Takhallus : Nadeem Ghazipuri

حضرت سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رحمتہ اللہ علیہ .آپ ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا.محترم سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رخمتہ اللہ علیہ کی ہے جو بیک وقت ایک شفیق والد،ہردل عزیز استاد اور روحانی شخصیت کے مالک تھے ،،، آپ بھارت کے صوبہ اتر پردیش ( یوپی) کے شہرغازی پور کے حسنی حسینی سادات گھرانے میں 1932میں پیدا ہوئے، خاندانی اعتبار سے آپ کا شمار غازی پور کے امراء میں ہوتا تھا ،اس خاندان کے بیشتر افراد ہندوستان میں اور قیام پاکستان کے بعد ملک کے اعلی ترین عہدوں پر فائز رہے ،اور آج بھی مختلف شعبوں میں کارہائے نمایا ں انجام دئے رہے ہیں شاہ خلیل اللہ رحمتہ اللہ علیہ کے والد سید شاہ محمد حفیظ اللہ انڈین یولیس میں ایس پی کے عہدہ پر تعینات تھے شاہ صاحب قبلہ کا شمار اپنے بہن بھائیوں میں سب سے آخری تھا، پیدائش سے چند ماہ قبل ہی والد بزرگوار کا سایہ سر سے اٹھ چکا تھا اور پیدائش کے ایک سال بعد والدہ ماجدہ بھی رحلت فرما گئیں آپ کی پرورش کی ذمہ داری بڑی بہنوں اور خاندان کے دیگر بزرگوں کے حصہ میں آئی، ابتدائی تعلیم غازی پور کی ایک درسگا ہ سے حاصل کی جبکہ اعلیٰ تعلیم کے لیے کلکتہ اور الہ آباد کا سفر اختیار کیا، قیام پاکستان سے قبل الہ آباد میں قیام کے دوران ترقی پسند تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ، ترقی پسند تحریک کے ساتھیوں میں ممتاز محقق و شاعر ڈاکٹر اجمل اجملی ، تیغ الہ آباد ی جوپاکستان آمد کے بعد مصطفے زیدی کہلائے اور اردو جاسوسی ناول نگاری کے موجد اسرار احمد جوابن صفی ، اسلام چنگیزی و دیگر شامل تھے جبکہ دیگر ساتھیوں میں نعتیہ شاعرراز الہ آبادی ،نافع رضوی و دیگر شامل تھے، ناموس رسالت کی تحریک میں بھی آپ پیش پیش رہے اور اس دوران جیل کی صعوبتیں بھی برداشت کیں آپ شاعری سے بھی شغف رکھتے تھے اور ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا اسی دوران آپ درس وتدریس اور صحافت کے شعبہ سے بھی وابستہ رہے ،، ملازمت کے حصول میں میں بمبئی چلے گئے جہاں کچھ عرصے روزنامہ انقلاب سے وابستہ رہے ، ، شاہ صاحب قبلہ کے خاندان کے بیشتر افراد قیام پاکستان کے بعد کراچی اور لاہور منتقل ہوچکے تھے اور اعلی سرکاری عہدوں پر فائز تھے آپ کے بڑے ماموں شاہ نذیر عالم جو بھارت کے صوبے یوپی میں ڈی آئی جی پولیس کے عہدہ پر تعینات تھے پاکستان کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کی درخواست پر بھارت سے پاکستان چلے آئے ، اور آئی جی پولیس پاکستان کے عہدے پر فائز رہتے ہوئے محکمہ پولیس کی تنظیم نو کی ، خاندان کے بزرگوں کے حکم پر شاہ صاحب قبلہ بھی انیس سو انسٹھ میں پاکستان چلے آئے۔ خاندان کے افراد چونکہ کراچی کے علاقے ناظم آباد نمبر دومیں قیام پزیر تھے لہذ ا آپ نے بھی ناظم آباد کو ترجیح دی اور درس و تدریس کے اس سلسلے کو جس کاآغاز الہ آباد سے کیا تھا اور دوران ہجرت موقوف ہوگیاتھا ایک بار پھر کراچی پہنچنے پرجاری وساری ہوگیا، ناظم آباد کے علاقے گولیمار کے پسماندہ محلہ علی بستی میں چند دوستوں کے ساتھ مل کر ضیاء العلوم کے نام سے ایک اسکول کی بنیاد رکھی ، تاہم بعدازاں سرکاری ملازمت اختیار کرلی اور گورنمنٹ
بوائزسیکنڈری اسکول نمبر2پی ای سی ایچ ایس سوسائٹی بلاک 6 سے وابستہ ہوکر رہ گئے اور اسی اسکول سے ریٹائرمنٹ حاصل کی،1980کی دہائی میں آپ ایک بار پھر بھارت تشریف لے گئے جہان اپنے آبائی شہر غازی پور میں جد امجد قطب الااقطاب سید شاہ جنید غازی پوری رضی اللہ تعالی عنہ اور دائرہ شاہ اجمل الہ آباد میں حضرت سید شاہ محمد افضل الہ آبادی شاہ اجمل رحمتہ اللہ علیہ سمیت دیگر بزرگان دین کے مزارات پر حاضری دی ۔ الہ آباد میں قیام کے دوران حضرت موصوف میرے جد مادری حضرت ولی کامل واکمل قطب الصمدمولانا شاہ سید احمد اجملی جنیدی قادری رحمتہ اللہ علیہ سابق سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد یوپی انڈیا کے دست حق پرسلسلہ قادریہ جنیدیہ میں بیعت ہوئے حضرت نے خرقہ وخلافت سے سرفراز کیا اورچاروں سلاسل میں بیعت کی اجازت عطا ء فرمائی بھارت سے واپسی کے بعد پاکستان میں باقاعدہ سلسلہ جنیدیہ قادریہ واجملیہ کی ترویج کا کام شروع کیا ۔حضرت شاہ صاحب قبلہ 2006 میں زیارت حرمین شریفین کی غرض سے سعودی عرب تشریف لے گئے تھے جہاں 21رمضان المبارک کو مدینہ منورہ میں بعد نماز تراویح وصال فرما ء گئے حضرت شاہ صا حب کو جنت البقیع کے پرانے حصہ میں حضرت حلیمہ سعدیہ اور حضرت عثمان غنی رضی اللہ تعالی عنہ کی قبروں کے درمیان سپردخاک کیا گیا۔
شاہ صاحب کے چند اشعار

تلخ آب سہی، زہر آب سہی، پینے دے مجھے ایک جام سہی
ہنس بول کے جی لوں چند لمحے یہ زیست برائے نام سہی
ڈھلتی ہے جو شب تو ڈھلنے دو اسکا بھی مداوا ہوتا ہے
چھٹ جائے گی تاریکی یہ صبح خیالِ خام سہی
یہ کم ہے کہ تیرے غم ہی کو اشکوں سے سنوارا کرتا ہوں
تیرا یہ ندیم# ہے نغمہ سرا ،برباد سہی بدنام سہی
شاعری میں ندیم #تخلص کا استعمال کیا کرتے تھے۔ بھارت میں قیام کے دوران اٰیک ناول ”چنوتی ‘ کے نام سے‘ شائع ہوا ہے ۔

(Contributed by Shah Waliullah and Shah Saadullah)

***************************************************************************’

 

Ajmal Ajmali 

ممتاز ترقی پسند شاعر ادیب نقاد ڈاکٹر اجمل اجملی کو ہم سے بچھڑے 23 برس بیت گئے ،،
برصغیر میں ترقی پسند تحریک نے بڑے بڑے شعراء ، ادیبوں اور نثر نگاروں کو جنم دیا مگر اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیا جاسکتا کہ صرف وہی شاعر، ادیب اور نقاد بڑے ثابت ہوئے جنہوں نے ترقی پسندتحریک کے منشور کے ساتھ اپنی تخلیقی صلاحیتوں سے سماجی زندگی میں تغیر و تبدیلی پیدا کی ہے ۔۔ ایک ایسی ہی شخصیت ڈاکٹر اجمل اجملی تھے ۔۔ جو کسی تعارف کے محتاج نہیں ۔۔ وہ ترقی پسند شاعر ہی نہیں ترقی پسند انسان بھی تھے ۔۔ ڈاکٹر صاحب یکم مارچ 1932 کوبرصغیر کی قدیم خانقاہ دائرہ حضرت شاہ محمد اجمل الہ آباد انڈیا میں پیدا ہوئے ، دائرہ شاہ اجمل کو برصغیر کی تایخ میں منفرد مقام حاصل یہ وہ ادبی مرکز ہے جہاں ریاضت حق شناسی اور انسانیت کی تعلیم کے ساتھ ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے ۔ تذکرہ نگاروں نے اس خانقاہ کا ذکر کئی کتابوں میں کیا ہے ۔ اردو کے ممتاز شاعر امام بخش ناسخ کی بھی اسی دائرے سے نسبت رہی ۔۔ امام بخش ناسخ کا یہ شعر اسی دائرہ کے حوالے سے ہے
؎
ہر پھر کے دائرے ہی میں رکھتا ہوں میں قدم
آئی کہاں سے گردش پرکار پاؤں میں
ڈاکٹر اجمل اجملی کا دولت خانہ دائرہ شاہ اجمل میں محل کے نام سے مشہور ہے ۔۔ آپ کے والد گرامی قطب الصمد حضرت شاہ سید احمد اجملی جنیدی رحمتہ اللہ علیہ اس خانقاہ کے سجادہ نشین تھے ۔ اسی لیے خانقاہی ماحول ڈاکٹر صاحب کو ورثے میں ملا ۔۔ عربی اور فارسی کی تعلیم گھر پر اور مدرسہ مصباح العلوم سےحاصل کی جبکہ میٹرک اور انٹر مجیدیہ اسلامیہ کالج الہ آباد سے کیا ، اعلیٰ تعلیم کے لئے الہ آباد یونیورسٹی کا رخ کیا ۔۔ ان دنوں بھارت میں ترقی پسند تحریک زوروں پر تھی اس کے اثرات یونیورسٹی کے ماحول پر بھی واضع نظر آرہے تھے ہر طرف ترقی پسندی اور کمیونزم کا شور تھا ۔ پروفیسر ضامن علی صدر شعبہ اردو، ڈاکٹر اعجاز حسین ، فراق گورکھپوری ، ترقی پسندوں کےسرخیل تھے ۔ اجمل اجملی مرحوم کی شخصیت پر بھی اس کے اثرات غالب آئے اور آپ اس تحریک سے جڑ گئے ۔ ڈاکٹراعجاز حسین کی شاگردی اور ممتاز ترقی پسند رہنما سجاد ظہیر عرف بنے بھائی کی صحبت نے ڈاکٹراجمل اجملی کے نظریات کو مزید پختہ کردیا ۔۔ آپ نےالہ آباد یونیورسٹی سے 1957 میں ایم اے اردوکیا اور1964 میں ڈاکٹریٹ کی سند حاصل کی جبکہ صحافت کا آغاز سیاست جدید کانپور اور عوامی دور سے کیا۔ دوران تعلیم طلبا سیاست میں پیش پیش رہے اور اس حوالے سے جیل کی صعوبتیں بھی برداشت کئیں ، تحقیقی کام کے لئے 1958 میں اسلامیہ کالج سری نگر کشمیر چلے گئے ۔۔ تاہم چند برس بعد دہلی آگئے اور سوویت سفارتخانے کے شعبہ اطلاعات سے منسلک ہوگئے ۔ رسالہ سوویت دیس کے نائب مدیرمقرر ہوئے اور یوں دہلی کے ہوکر رہ گئے ۔ ڈاکٹر اجمل اجملی کے الہ آباد میں قیام کے دوران ہم عصروں میں تیغ الہ آبادی جو پاکستان آنے کے بعد مصطفیٰ زیدی کہلائے ۔ اسرار ناروی ابن صفی کہلائے ۔۔ اسی طرح عباس حسینی ، مجاوررضوی، مشتاق انصاری،اسلام بیگ چنگیزی،غلام کبریا عابد اسرار و دیگر شامل تھے ۔۔ راقم الحروف کا ڈاکٹر اجمل اجملی سے روحانی و قلبی تعلق ہے وہ میری والدہ کے چھوٹے بھائی اور میرے سب سے بڑے ماموں تھے ، اگرچہ بھارت کا سفر کئے مجھے 25 سال سے زائد کا عرصہ بیت چکا ہے لیکن وہ ایام جو میں نے الہ آباد ،غازی پور اور دہلی میں گزارے آج بھی میری نظروں کے سامنے گردش کرتے ہیں ، بھارت کے سفر کی یادیں میرے حافظہ کا ایک ایسا سرمایہ ہے جن کی کشش اوردلربائی عمر کے ساتھ فروزاں تر ہوتی جارہی ،زندگی کے شاید سب سے قیمتی ایام جن کو جوانی کہتے ہیں اس کی کچھ یادیں انہی شہروں سے وابستہ ہیں یہی ۔۔ وہ عمر ہوتی ہے جو صرف انسان کی آرزوں ، امنگوں اور مستقبل سازی کے حوالے سے بڑی اہمیت رکھتی ہے ، میرے والد مرحوم کا آبائی شہرغازی پور ہے جو دریائے گنگا کے کنارے واقع ہے ۔۔ ان کا تعلق میاں پورہ کے حسنی حسینی سادات گھرانے سے ہے ،جبکہ والدہ کی جنم بھومی قدیم شہر الہ آباد ہے جہاں دریائے گنگا ، جمنا اور سرسوتی کا سنگم ہوتا ہے ۔۔ اسی وجہ سے ہندو مذہب میں اس شہر کو مقدس تصور کیا جاتا ہے۔ قیام پاکستان کے بعد میرے والد بھارت کو خیرباد کہہ کر کراچی چلے آئے ۔۔ ننھیال سے رابطہ صرف خط و کتابت کے ذریعے قائم تھا ۔۔ ڈاکٹر اجملی اجملی (ماموں صاحب ) سے میری پہلی ملاقات 1982میں ہوئی جب ابو اور امی کے ہمراہ ہم بہن بھائیوں کا انڈیا جانا ہوا تھا ۔ لاہور سے 3 روز کا سفر کرکے ہم لوگ دہلی پہنچے تھے ہمارا قیام ماموں صاحب کے گھر69 اوکھلا جامعہ نگر میں تھا ۔ ممانی صاحبہ اور بہنوں نے ہمارا انتہائی گرم جوشی سے استقبال کیا ۔ ماموں صاحب کو امی پیار میں بھیا کہتی تھیں اسی بنا ہم لوگوں کی زبان پر بھی بھیا چڑھا ہوا تھا ۔ ماموں صاحب سے پاکستان ،اور بھارت کی مجموعی صورت حال ، اردو ادب شاعری سمیت مختلف موضوعات پر گفتگو ہوا کرتی تھی ڈاکٹر صاحب کی گفتگو میرے علم کو جلا بخشتی تھی اور معلومات میں اضافہ کرتی تھی ، ماموں صاحب کے ہمراہ نئی دہلی میں کئی مشاعروں میں شرکت کا بھی موقع ملا ۔۔ ان مشاعروں میں ، مظفر حنفی ،ڈاکٹر پروفیسرقمر رئیس ، پروفیسر سید عقیل ،عذرا رضوی سمیت متعدد شاعر ، ادیب و نقاد سے ملاقات رہی جبکہ ترقی پسند شاعرغلام ربانی تاباں اور پروفیسر مشتاق انصاری اور شبنم نقوی ،افتخار اعظمی صاحب سے گھر پر ملاقات کا شرف حاصل ہوا اسی دوران ماموں صاحب کے ہمراہ دہلی سے باہر اترپردیش کے شہر مظفر نگر میں مشاعرہ میں بھی شرکت کے لئے جانا ہوا تھا ۔ یہ مشاعرہ قصبہ کتھولی کے شعراء کی یاد میں تھا ۔۔ وہان آپ نے اپنی غزل اور ںظم سے محفل کو گرما دیا کچھ غزل کےاشعار مجھے یاد رہ گئے تھے
؎
رنگیں ہے اپنے خون سے ہر منزل حیات
برباد ہوکے ہم نے سنواری ہے یہ حیات
فرعون وقت کوئی بھی ہو سرکشی کرو
یاران شہر میری طرح زندگی کرو
امرت نہیں نصیب تو زہرآب ہی سہی
کچھ تو علاج شدت تشنہ لبی کرو
دوران سفر گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ شاعرانہ ماحول مجھے ورثے میں ملاتھا جبکہ ممتاز شاعر نوح ناروی اور مولوی متین شمسی مرحوم جنھیں ہم لوگ شمسی ابا کہتے تھے ان سے شاعری میں اصلاح لی ،ماموں صاحب کے ہمراہ سوویت دیس کے دفتر 12 کھمبا روڈ نئی دہلی بھی جانا ہوا تھا وہاں میری ملاقات عذرا آنٹی سے ہوئی تھی ماموں صاحب کے دفتر سے ہم لوگ کناٹ پیلس کے نزدیک بنگالی کلب میں ایک تقریب میں شرکت کے لئے گئے تھے شاید وہ تقریب بنگالی شاعر نذرالسلام کی یاد میں رکھی گئی تھی۔ اسی طرح جامعہ ملیہ کے ہال میں ایک محفل غزل کا اہتمام کیا گیا تھا ، اس پروگرام میں ان کے ساتھ جانا ہوا تھا جہاں جگجیت سنگھ اور چترا نےعلامہ محمد اقبال کا کلام پیش کرکے بھرپور داد پائی تھی ۔۔ ماموں صاحب سے ہونے والی گفتگو سے میں نے اندازہ لگایا کہ وہ مضبوط قوت ارادی والے شخص تھے مگر ساتھ ہی ان میں حساسیت بھی پوشیدہ تھی ، اپنے ارد گرد کے ماحول میں جبرو استحصال،طبقاتی ظلم ۔ رنگ و نسل کی تفریق ،بھوک افلاس پر دل گرفتہ دکھائی دیتے تھے ۔۔ وہ فرسودہ نظام کے خلاف جدوجہد کرکے تبدیلی لانے کے قائل تھے ۔ انھوں نے انجمن ترقی پسند مصنفین ہندوستان کے جنرل سیکرٹری کی حیثیت سے ادبی سرگرمیوں میں بھر پور حصہ لیا ۔ مختلف کانفرنس ،سمینار و مشاعروں میں شریک ہوئے جبکہ کئی غیر ملکی دورے بھی کئے ۔۔ بھارت میں 4 ماہ قیام کے بعد ہم لوگ واپس کراچی آگئے۔ 1988 کے اواخر میں میرے دوست آفتاب علی جو ان دنوں امریکا میں مقیم ہیں نے اچانک بھارت جانے اور اجمیر شریف کی درگاہ پر حاضری دینے کاارادہ ظاہر کیا بس پھر کیا تھا، میں نے رخت سفر باندھ لیا ۔ پھر بھارت پہنچ گئے ماموں صاحب اور گھر والوں کے ساتھ چند یوم گزارنے کے بعد نانی صاحبہ کی قدم بوسی کے لئے الہ آباد روانہ ہوگیا وہاں ایک ماہ قیام کے بعد اپنے دوست کے ہمراہ کانپور، گوالیار ،لکھنو،غازی پور گھومنے چلا گیا ۔ الہ آباد واپس پہنچا تو ماموں صاحب کی علالت کا علم ہوا ۔ نانا میاں کے انتقال کے بعد ۔۔ ماموں صاحب پرفالج کا حملہ ہوا تھا ۔۔ساتھ ہی دل کا مرض بھی لاحق تھا ۔ بیماری کا سن کہ میں دوسرے روز دہلی پہنچا تو ممانی صاحبہ نے بتایا کہ طبعیت زیادہ خراب ہونے پرانھیں ہولی فیملی اسپتال نئی دہلی میں داخل کردیا گیا ہے ، شام کو ممانی صاحبہ کے ہمراہ اسپتال پہنچا وہاں چھوٹی بہن زویا اجملی تیماری داری کیلئے موجود تھیں ۔۔ ماموں صاحب دواؤں کے اثر سے سوئے ہوئے تھے، ممانی صاحبہ کو صبح آفس جانا ہوتا تھا واپسی میں ماموں صاحب کے پاس اور پھر گھر کی دیکھ بھال اسی طرح میری بہنوں سیما ،لونا ، زویا،مالو کو صبح اسکول اور کالج جانا ہوتا تھا اور شام کو وہ اسپتال میں ہوتیں ۔۔ کئی راتیں بھیا کے ساتھ اسپتال میں گزاری اس دوران مجھے اپنوں اور بیگانوں کے رویہ کا بھی سامنا رہا ، ماموں صاحب کی طبعیت چونکہ بہتر ہوگئی تھی اور ساتھ ہی میرے ویزے کی مدت اختتام پذیر ہوگئی مزید توسیع نہیں ملی تھی ، بادل نخواستہ بھیا( ماموں صاحب) کو اسی حال میں چھوڑ کر واپس آنا پڑا ۔۔ پاکستان آکر بذریعہ فون ان کی خیریت کے بارے میں آگاہی لیتے رہے ۔۔ 1989 میں ممانی صاحبہ کے اچانک انتقال کی خبر ملی ۔ جو نہ صرف بھیا کے لیےایک بڑا صدمہ تھا ، بلکہ ہمارے لیے تکلیف دہ تھا ۔۔ ماموں صاحب کی تخلیقی صلاحیتوں میں ممانی صاحبہ مرحومہ کا اہم کردار تھا ، ممانی کی موت نے پہاڑ جیسے مضبوط ڈاکٹر اجمل اجملی کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا تھا ۔۔ چار برس بعد 6 اگست 1993 کو ۔ماموں صاحب بھی اپنی چار بیٹیوں اور لاکھوں چاہنے والوں کو سوگوار چھوڑ کر دارفانی سے کوچ کرگئے ۔

 

*************************************************************************

Mazhar Naseem

Mazhar Naseem was very amicable and cordial. I will always remember him for his hospitality and courteousness. He was a good poet. (Muslim Saleem, December 22, 2010).

++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++

Hairat Allahabadi

Aagah apni maut se koi bashar nahin
Saamaan sau baras ka hai kal ki khabar nahin

+++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++++

Firaq Gorakhpuri

Firaq Gorakhpuri ‘Is daur mein zindagi bashar ki…..beemar ki raat hao gayee hai’. The full name of author of this couple was Raghupati Sahay. Raghupati Sahay, was born in 1896 at Gorakhpur in a Kayastha family. He was co-opted into the Provincial Civil Service (PCS), but resigned and joined Allahabad University as a lecturer in English. His magnum opus Gul-e-Naghma which fetched him the Jnanpith Award and also the 1960 Sahitya Akademi Award in Urdu, and was later awarded the highest award of the ‘Akademi’, the Sahitya Akademi Fellowship’ in 1970. Of a very sharp intellect, he was also known for his vituperative wit. His other poetry collections include, Rooh-o-Qaayanat, Gul-e-Ra’naa, Nagma-numaa.

  He was born on to a family of Kayasth aristocrats in 1896 at village Banwarpar, tehsil Gola, district Gorakhpur. Firaq had a taste of Urdu poetry at very tender age. He started writing poetry in Urdu in teens and developed his own niche in an era that was marked by the likes of Sahir, Iqbal, Faiz and Kaifi. Although a left leaning intellectual, Firaq was never an active member of ‘Indian Progressive Writers Association’.

Firaq had been a champion of secularism all his life. He was a chief crusader against the government’s effort to brand Urdu as the language of Muslims. He was also instrumental in the allocation of funds for the promotion of the language. Jawaharlal Nehru nominated him as a member of the Rajya Sabha for his efforts in the promotion of literature and communal harmony. In his career spanning more than 50 years, Firaq wrote hundreds of heart wrenching poetries. Firaq passed away in 1982 after prolonged illness. (See also: “Urdu poets and writers of India” ) Recommended book: Firaq Gorakhpuri:Shayir-Danishwar by Prof. Ali A. Fatmi,  M.R. Publications,  2007.

***************************************************************************

Mustafa Zaidi (Tegh Allahabadi)

  Mustafa Zaidi was born in 1930 at Allahabad and died in 1970 in Pakistan where he had migrated. He was born on  October 16, 1930 to Syed Lakhte Hasnain and Binte Haider. From 1936 to 1945, he attended the Modern High School in Allahabad. He then attended the Ewing Christian College, Allahabad and passed the Intermediate exam of the Board of High School and Intermediate Education, UP, in the first division in 1948. In 1950, he was awarded a first class Bachelor of Arts degree holding the 6th position from the University of Allahabad and completed his Master’s degree in English Literature in 1953 from Government College, Lahore. Mustafa Zaidi took up a job as professor in Islamia College, Karachi and Peshawar University. His first book of nazms “Zanjeerein” was published in Allahabad1949, under the pseudonym “Tegh Allahabadi” when he was just nineteen. Zanjeerein was endorsed by two legendary Urdu poets Josh Malihabadi and Firaq Gorakhpuri, who became mentors for young Tegh Allahabadi. The second edition was published as “Roshni” published in Lahore in 1950.

Left) Mustafa Zaidi with wife and children (right) with Josh Malihabadi.

His books include 1.Zanjeerein – 1949, 2. Roshni – 1950, 3. Shehr-e-Azar 1958, 4. Mauj Meri Sadaf Sadaf – 1960, 5.Gareban – 1964, 6.Qaba-e-Saaz – 1967, 7. Koh-e- Nida

Ghazal by Mustafa Zaidi

Jab hawa, shab ko badalti huii pehluu aaee

mudattao’n apnay badan say Teri khusbhuu aaee

Meray naghmaat ki taqdeer na pohnchay tujh tak

meri faryaad ki qismat k Tujhay chuu aaee

Apnay seenay pay liay phirti hain har shakhs ka bojh

ab to in raahGuzaaro’n mein meri khuu aaee

Yuu’n umad aaee koi yaad meri aankho’n mein

chaandi jaisay nahaanay ko lab-e-juu aaee

Muzda ay dil kisi pehloo to qaraar aa hi gaya

manzil-e-daar kati, saa’t-e-gaisuu aaee

………………………………………………………………………………………………………..

Raz Allahabadi: He was a much sought-after poets in mushairas. He attended hundreds of mushairas in India and abroad. I had met him at his house in Hatia locality of Allahabad on a couple of occasions. He was a good man. I found one of his couplets in a letter in Funoon monthly published from Nagpur.

Main aap apni talaash mein hoon, mera koi rahnuma naheen hai

Wo kya batayenge raah mujhko, jinhen khud apna pataa naheen  hai

…………………………………………………………………………………………………….

Shaida Allahabadi: His full name was Maulvi Nisar Hussain. He was a poet of Reekhti, a form of Urdu poetry in which the poets expresses himself in the language of women. No one knows about details of his life and when died. However, he has himself said in his deewan that he was a resident of Daryabad locality of Allahabad. The couplet is:-

Sabhi waqif hain, baashinde hain daryabad ke shaida

Allahabad mein guiyaan jo ek chhoti si basti hai.

Reekhti is such a form of poetry in which some below standard thoughts are also expressed, but Maulvi Nisar Hussain Shaida’s remarkable contribution is that he kept his kalam free of vulgarity even though some of his couplets are below standard also. He says about his poetry:

Shaida se koi poochhe, taarif reekhti ki

Ho paak gandagi se, dhoi hui zabaan ho

He also gave vent to the burning issues of his times and launched a crusade against shamelessness, bad character, vulgarity, social evils etc through his poetry. During the period in which Shaida lives, purdah was prevalent in the Muslim society. Following are the verses depicting these views:

Khule bandon jo tum bazaaron mein ghoomogi ai begum

Na jaane kya tumhen samjhenge jaahil dekhne waale

Ghar se aurat ka jo bahar qadam amman nikla

Sharm us aankh se, us aankh se iman nikla

(For details see article “Shaida Allahabadi – ek reekhta go” by Syed Ziaul Hussain (Baitul Munawwar, behind Madah Ganj Police Chowkie, Sitapur Road, Luknow). The article has been published in March 2011 edition of Naya Daur, Lucknow.

(Posted by Muslim Saleem on July 10, 2011)

…………………………………………………………………………………………………..

Syed Mohammad Zamin Ali. He occupies a distinguished position in the realm of Urdu language and literature. He blazed a trial in the Urdu academic world by introducing graduate, post-graduate and research courses in Allahabad University. A founder-head of the Urdu Department of Allahabad University, he designed the basic structure of Urdu studies from the primary to the highest level in India. Born on… June 25 , 1880 at Mustafabad village in the Rae Bareli district of Uttar Pradesh, Zamin Ali was the youngest son of late Syed Wajid Ali. His grandfather, Nauroz Ali was a good poet of his time. Prof. Ali was a poet and also a writer with facile pen. But it was as an educationist that he excelled. He was educated at Agra and Allahabad. After a brilliant academic career, he joined the faculty of the Persian and Arabic Department of Allahabad University. His proposal to create sepearate Departments of Urdu and Hindi studies, which were then under the Oriental Department of Allahabad University, was accepted in 1922 by Sir Ganganath Jha, a noted Sanskrit scholar and Vice Chancellor of the University. Associated with the Board of studies of several universities, he formulated the curriculum of Urdu language and literature. His compilations and books on varios poets and marsiya writers found a place of prominence in the syllabus of studies at various stages. His monumental work in ‘Urdu Zaban-e-Adab’. This is the only book of Urdu linguistics and is more comprehensive than Sir George Greison’s ‘Linguistic Survey of India’. Prof. Ali was in the lineage of Munir Shikohabadi and followed the traditions of Lucknow School of Poetry. He started composing nazms and ghazals at an early age under the guidance of Mir Ali Obaid ‘Naisa’. His ghazals and marsiyas reflected the elegance and clarity of thought. He was a founder-member of the Hindustani Academy, which was founded in 1926 on the lines suggested by Mahatma Gandhi and was the editor of the Urdu Section of the Academy’s bilingual magazine ‘Hindustani’. He also edited a magazine called ‘Naisa’. He passed away on 25 April 1955. Paying tribute to Prof. Ali, Pandit Nehru described him as “the most brilliant crusader for the cause of Urdu of my time.” Indian Posts and Telegraphs Department is privileged to honour the memory of great educationist and poet by issuing a special postage stamp.

پروفیسرضامن علی صاحب ضامن

ضامن صاحب کی پیدائش ۱۸۸۸ میں قصبہ مصطفےٰ باد ضلع رائے بریلی میں ہوئی۔ علوم مشرقیہ کی تعلیم لکھنؤ میں حاصل کی۔ ایف اے آگرہ سےاور بی اے و ایم اے کی تعلیم الہ آباد سے حاصل کی۔

شعرو شاعری سےدلچسپی آپ کو بچپن ہی سے تھی۔۱۲برس کے سن سے ہی شعر کہنا شروع کردیا تھا۔ ان کی خداداد صلاحیت دیکھ کر میر علی عبّاد صاحب نیساں خود متوجّہ ہوئےاور شا عری پر اصلاح دینے لگے۔رفتہ رفتہ کلام میں پختگی نمایاں ہونےلگی۔ استاد کے انتقال کے بعد آپ کے کلام میں ایک خاص تبدیلی پیداہوگئی۔ خود ارشاد فرماتے ہیں۔

حضرت نیساں کے دم تک لطف تھا اس رنگ کا اب کہو ضامن غزل اس رنگ میں جو عام ہے

یعنی رنگ ناسخ ترک کرکے آپ نے سادگی اور صفائی کے کوچہ میں قدم رکھنا شروع کیا۔ آپ نے غزل ،قصیدہ،رباعی،مخمّس اور سلام وغیرہ سب ہی پر طبع آزمائی کی ہے۔الفاظ کے انتخاب،محاورات کے برمحل استعمال،فارسی تراکیب کی دلآویزآمیزش نے شاعری میں ایک خاص لطف پیدا کردیا ہے۔بعض اوقات تشبیہات و استعارات کی زیادتی سے کلام میں تصنّع اور قدامت کی جھک نظرآنے لگتی ہے۔

آپ کے قصائد میں تخئیل کی پروازاور معنویت کی فراوانی ایک خاص رفعت پیدا کردیتی ہے۔ تشبیب میں اکثر جدّت ہے

آپ کا انتقال ۱۹۵۵میں طویل علالت کے بعد ہوا۔پسماندگان میں اہلیہ،دو بیٹے اور تین بیٹیاں تھیں۔ اہلیہ اور بڑے بیٹے حیدر کو چھوڑ کر سب حیات ہیں۔

کاشانۂ ادب کے نام سے آپ نے خود ایک ادبی انجمن قائم کی تھی۔ اس انجمن کی نشستیں زیادہ تر گھر پر ہی ہوا کرتی تھیں جو الہ آباد کے محلّہ چک میں واقع ہے۔

آپ کا کوئی مجموعۂ کلام اب تک میری نظر سے نہیں گزرا ۔ غیر مطبوعہ کلام کہاں اور کس کی تحویل میں ہے یہ نہیں معلوم ہوسکا۔ رسالہ زمانہ کانپور کے مارچ ۱۹۳۱ میں شائع دو غزلیں الہ آباد یو نیورسٹی کی لائبریری سےمجھے اپنی ریسرچ کے دوران دستیا ب ہوئی تھیں جو پیش خدمت ہیں۔

نالۂ غم

[ازپروفیسر سید محمّد ضامن علی صاحب ایم اے]

میں اب دل کو نثار بانیٔ بیداد کرتا ہوں بڑی دولت تھی جس کو عشق میں برباد کرتا ہوں

چمن کے ہجر میں یہ نالہ و فریاد کرتا ہوں زباں جل جائے گر میں شکوۂ صیّاد کرتا ہوں

قوی ایمان ہوتا ہے تمہارا بےوفائی سے کہ جب تم بھول جاتے ہوخدا کو یاد کرتا ہوں

مرے ضبط فغاں سے ہے یہ سب ہنگامہ آرائی جہاں خاموش ہوجاتا ہےجب فریاد کرتا ہں

خفا ہوتے ہو کیوں شکوے ہیں میرےسربسر جھوٹے تمہیں بیداد کیا معلوم میں بیداد کرتا ہوں

شکستہ سازہوں گوبزم میں ہوں عیش وعشرت کی ہر اک دل پرگراں ہوتا ہوں جب فریاد کرتا ہوں

دل ویراں میں دیتا ہوں جگہ ارمان و حسرت کو میں آبادی کےپردے میں اسے برباد کرتا ہوں

ہوا میں وہ اڑاتے ہیں ہماری خاک یہ کہہ کر کہ اب تو نام ہے اس کا کہ میں برباد کرتا ہوں

پہاڑ ایسی جو ضامن کاٹتا ہوں رات فرقتت کی تو کچھ اس وقت قدر محنت فرہاد کرتا ہوں

[ص۲۱۱]

زمانہ مارچ ۱۹۳۱

میری کشتی کا آسرا ہی نہیں ناخدا ہے مگر خدا ہی نہیں

ہم سمجھتے تھے آشنا ہیں سب وقت پر کوئی آشنا ہی نہیں

ہر جگہ دیکھوہرطرف دیکھو اس کے جلوے کی انتہا ہی نہیں

پھر رہی ہے نگاہ میں منزل کس طرح پہنچوں رہنما ہی نہیں

ایسے بھی لوگ ہیں خدائی می دل سے جو قائل خدا ہی نہیں

برق نے اس طرح تباہ کیا آشیاں جیسےاپنا تھا ہی نہیں

بزم قاتل میں سب کی پرسش ہے کوئی بسمل کوپوچھتا ہی نہیں

…………………………………………………………………………………………….

Upendranath Ashk

Upendranath Ashk (1910-96) was born from a middle class family in Jhalandhar in Punjab in 1910. He started writing poetry in the Punjabi Language. Later he began writing in Urdu. His first Urdu poem was published in 1926. During the 1930 s, when he lived in Lahore, he shifted to Hindi. Ashk has been writing for different newspapers and magazines, from 1941 to 45 he worked with A.I.R., thereafter he also wrote film stories and dialogues. He made translations into Hindi(Dostoevsky, O Neill) and edited some anthologies. But he is most famous for his novels, short stories and plays. In 1965 he was awarded the Sangeet Natak Academy Award as the leading playwright of Hindi. One of his most famous novels is “Girti Diivaaren”, which was first published in 1947. In describing some years of the life of Cetan, the hero, Ashk depicts the everyday life of the urban middle class in a realistic way. It is said to contain many passages which are autobiographic. Some other works     1.  Shahar men ghoomtaa aainaa (1962)(second volume of the above mentioned novel) 2. Ek nanhi kindiil (1969)(third volume) 3. Tufan se pahle (1946)(play) 4 Udan (play) 5 Diip jalegaa (poem)

……………………………………………………………………………………………………….

Aziz Allahabadi

Aziz Allahabadi taaruf

Aziz Allahabadi pic three

*********************************************************

Ziaul Islam: He was born on July 3, 1934 at Daira Shah Ajmal, Allahabad and died on June 25, 2008. Started his literary career after completing education from Allahabad University by writing radio dramas. He also translated tales for children from other languages. His books include 1. Chandni aur Angare 2. Sadabahar Darakht 3. Mahal. He also took out a periodical “Urdu Sahitya” in Devnagri script. He was awarded by the Urdu Academies of UP and West Bengal.

**************************************************************

Syed Momin Hussain Sho’la Kararvi

 ·         Syed Momin Hussain Sho’la Kararviسیّد مومن حسین شعلہ کراروی

زمانہ آئے گاجب قدر ہوگی آپ کی شعلہ
کوئی خوبی بقدر زندگی دیکھی نہیں جاتی
آپ کی پیدائش ۱۹۰۱ع میں الہ آباد[موجودہ کوشامبی]کے مشہور قصبہ کراری کے ایک اعلیٰ نسب سیّد گھرانےکے محلّہ بارہ دری مین ہوئی تھی۔خود کہتے ہیں۔
کیوں دبوں پھر کسی سے اے شعلہ
میں ہوں سیّد وطن کراری ہے۔۔۔۔۔
ان کے ابتدائی کلام سےایک شعرہے۔
بارہ دری میں رہتا ہوں شعلہ شرف یہ ہے
اثنا عشر ہوں شکر ہے پروردگار کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ کی والدہ کا انتقال جب آپ دو سال کے تھےتب ہی ہو گیا تھا۔پرورش بڑی abida ke walidامّاں[تائی] کے ذ ریعہ عمل میں آئی۔آپ کے والد سیّد فخرالدّین حسین اپنے علاقہ میں عالم سمجھےجاتے تھے۔انھیں عربی،فارسی اور اردو کے ساتھ انگریزی زبان پر بھی عبور حاصل تھا۔خود شاعر تو نہ تھےمگر انھیں علم عروض پر اچّھی دستگاہ تھی۔ان کے شعر وادب میں لگاؤ ہی کا سبب ہوگا کہ والد صاحب نے ۱۳ سال کی عمر سےہی شاعری کی ابتدا کردی تھی۔ تنگ نظر والدین اس عمرمیں اپنی اولاد کو عشق و محبّت کے معاملات سے دوررکھنا چاہتے ہیں۔
قصبہ کراری سےمڈل پاس کرنے کےبعد والد صاحب بغرض تعلیم الہ آباد آگئےاور ماڈرن اسکول میں داخلہ لیا۔ابھی آپ انٹر میجیٹ ہی میں زیر تعلیم تھےٓاورآگےوکالت کی طرف جانے کا ارادہ تھا کہ اچانک انکے والد حرکت قلب بند ہوجانے کیوجہ سے فوت ہوگئےدونوں بڑے بھائیوں کی جانب سےکوئی مالی امداد فراہم نہ ہونےکی وجہ سے تعلیم کو خیرباد کہنا اور ملازمت کی طرف رخ کرنا پڑا۔
شاعری میں آپ نے اپنے والد کی ہدایت کے مطابق جناب نیساں شاگرد حضرت ناسخ لکھنوی سے اصلاح لی۔ان کے انتقال کےبعدجناب محبوب حسین صاحب تحمّل کی شاگردی اختیار کی۔جلد ہی آپ نےغزلگوئی میں وہ کمال حاصل کرلیاکہ مقامی مشاعروں کی روح رواں بن گئےاس زمانہ میں زیادہ تر طرحی مشاعروں کا رواج تھا۔ہراسکول کالج میں مشاعرے منعقد ہواکرتےتھے۔آپ قریب قریب ہر مقامی مشاعرہ میں مدعو کئے جاتےآس پاس کےاضلاع میں بھی اکثر شرکت کیاکرتے کہیں کہیں صدارت کے فرائض بھی انجام دیا کرتے تھے۔مختلف مقامی ادبی انجمنوں جیسے بزم ادب،روح ادب،سفینۂ ادب،ریاض ادب اور اردو اسٹڈی سرکل میں سے کسی کے ممبر اور کسی کے سکریٹری تھے۔
ابتدا میں آپ کو اپناکلام جمع کرنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا ۔۱۹۵۵ع میں ملازمت سے سبک دوش ہونے کے بعدکے کلام کو اکٹّھا کرنا شروع کیا۔دیوان کی طباعت کی تحریک امریکی شہر ہیوسٹن سے ہوئی وہاں آپ اکتوبر۱۹۷۳ع میں اپنےاکلوتے بیٹے ڈاکٹر ظفر حسنین تقوی[ جو ابھی تک اسپیس سینٹر ناسا سے منسلک رہےہیں]کےیہاں تشریف لےگئے تھےوہاں انھوں نےبہت اچّھی ادبی فضا قائم کر رکّھی ہےاور ایک اچّھے شاعر بھی ہیں۔ہیوسٹن میں بحیثیت شاعرشعلہ صاحب کی بہت عزّت افزائی ہوئی۔یہیں سے ان کے ذہن میں اپنے دیوان کی طباعت کا خیال پیدا ہوا جو۱۹۷۵ع مین پایۂ تکمیل کوپہنچا۔اسی سال ماہ مئی میں ،نغمۂ فکر، کے نام سےان کا دیوان طبع ہوکر منطر عام پر آیا.اس مین زیادہ تر غزلیں،چند سہرے اور کچھ تاریخیں ہیں۔تاریخ گوئی میں آپ کو کمال حاصل تھا۔آپ کی نکالی ہوئی تاریخوں میں پروفیسر احتشام حسین،نوح ناروی،ڈاکٹر اعجاز حسین اور سکھد یو پرساد بسمل کی تاریخیں خاص ہیں طوالت کے لحاظ سے صرف ایک ایک شعر ہی پیش ہیں۔
فکر تاریخ جب ہوئی شعلہ
کہدیا ِ،آہ ناخدائےسخن۔۔۔۔۔۔۔،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۸۲ھ
بہر تاریخ فکر شعلہ گرفت
گفتمش ِِ،،احتشام خلد آباد،،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۳۹۲ھ
عیسوی سن میں لکھوشعلہ یہ تاریخ وفات
مرغ بسمل کیوں نہ ہواردوادب بسمل کےبعد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱۹۷۵
خود اپنے دیوان کےلئےقطعہ تاریخ اس طرح لکھا۔
نغمۂ فکرسال ہجری میں میرےدیوان کی ملی تاریخ
نغمۂ فکر سےشرف بھی ملا اورملی شعلہ عیسوی تاریخ
نغمۂ فکر ۱۳۹۵
شرف ۵۸۰
۱۹۷۵
دیوان کے طبع ہونے تک ان کی شخصیت محتاج تعارف نہیں رہ گئی تھی لیکن کہ دستور کتاب میں ان کا تعارف جناب فراق گورکھپوری نے لکھا اس میں سے کچھ اقتباسات اس طرح ہیں ،،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کےکلام میں استادانہ شان ہےاور مجھےیہ کہنے میں تامّل یا باک نہیں ہےکہ شعلہ صاحب ا ن معدودےچند ہستیوں میں ہیں جنھیں ماہرین فن میں شمار کیا جاسکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شعلہ صاحب کےیہاں نہایت متوازن موزونیت ہوتی ہے ان کے کلام میں کہیں سےجھول نہیں پیدا ہوتا۔ہر لفظ نگینےکی طرح اپنی جگہ پر جڑا ہوا ہوتا ہےاور مخصوص معنویت کا حامل ہوتا ہے۔ان کےالفاظ میں مفہوم کےساتھ ایک معنویت بھی ہوتی ہےاور اشاریت و کنایت بھی۔انکی شاعری بہت سوچی اور سمجھی ہوئی فنکاری ہے ،
جناب ڈاکٹرعقیل صاحب نے ان کےبارے میں لکھاہے،شعلہ صاحب زبان و بیان اور محاوروں کے استعمال کے سلسلہ میں بہت محتاط ہیں۔وہ لکھنؤ اسکول کےاساتذہ کےپیرو ہیں اوراس لئےان باتوں پر خاص نظر رکھتے ہیں۔بعض شعراءخیال اور مضمون کی تلاش میں زبان اور اس کےمحل استعمال سے اکثر بہت دورچلےجاتے ہیں اور اس طرح ان کی شاعری کا حسن ماند پڑجاتا ہے ۔یہ بات شعلہ صاحب کےیہاں نہیں ہے
ڈاکٹرجعفر رضا صاحب نے دیوان کے پیش لفظ میں لکھا ،،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انھین فارسی زبان وادب سےذاتی اور والہانہ دل چسپی ہے۔وہ اگر ایک طرف رومی،جامی،حافظ،سعدی،نظیری،عرفی،وغیرہ کےقائل ہیں تو دوسری طرف میر،سودا، آتش،ناسخ،غالب اور انیس سےمتاثر ہیں۔اس لئےان کی خصوصیت ہے کہ ہند ایرانی شاعری کےمختلف اسالیب اور انداز کسی نہ کسی شکل میں ان کےکلام میں مل جاتے ہیں۔تصوّف کا مسلک جداگانہ ہے۔انھوں نےانصاف دوسی کا درس تصوّف کےبجائےعقائد اسلامی کی تابناکیوں سے حاصل کئے ہیں،،
ان کے دیوان کوپرانی طرز شاعری کے ہمنواؤں نے تو سراہا لیکن جدیدیت کے علم برداروں نےاس پرخاص توجّہ نہیں دی۔جہاں ایک بڑی تعداد ان کے مدّاحوں کی تھی وہیں انکے حاسدوں کا شمار بھی کچھ کم نہیں تھا۔ اس سلسلہ میں کئی اہم واقعات ہم اہل خانہ کے علاوہ اکثر ادبی حلقوں میں زبان زد ہیں[اس کا تذکرہ کبھی آئندہ کیا جاسکتا ہے]
نغمۂ فکر کی اشاعت کےبعد آپ نے اپنا کلیات مرتّب کرنا شروع کیا تومعلوم ہواکہ آپ کےقصائد،نعت اور سلام وغیرہ کا پورا غیر مطبوعہ کلام گھر سے لاپتہ ہوچکا تھا۔ اس حادثہ کا الم آپ کے دل سےتادم مرگ نہیں گیا۔ہر وقت ٹھنڈی آہیں بھرا کرتےاور کف افسوس ملاکرتے۔دھیرےدھیرے ہائی بلڈ پریشر کےمرض میں مبتلا ہو گئے غصہ بہت کرنےلگےتھے۔۱۶ اگست ۱۹۸۷ کو والدہ صاحبہ کے انتقال کےبعد کافی خاموش رہنے لگے تھے۔خوراک بہت مختصر ہوگئی تھی۔پیروں سے چلنے سے معذور ہونے لگے کمزور ہوتے گئے۔جو اصحاب تیمار داری کے لئے آتے ان سے فرماتےکہ مرنا برحق ہے۔بس میرا بھی وقت آچکا ہے۔ عقیدت مند احباب واعزّہ اکثر روتےہوئے واپس لوٹتے۔آخرش ۲۲فروری۱۹۸۸کو علی الصباح یہ شعلہ خاکستر میں تبدیل ہوگیا۔بعد عصردریاباد کے مقامی قبرستان میں تدفین عمل میں آئی۔
جناب ثمر ہلّوری صاحب نے قطعہ تاریخ لکھا۔
ہے شہر مین اداسی ماحول رنج و غم ہے
سنتے ہیں ایک مومن نے کی ہےآج رحلت
خاموش سی فضاہےاس گھرکی اےثمر کیوں
مومن حسین شعلہ کیا ہیں مقیم جنّت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جانب داری کے خیال سےمیں نےانکی شاعری کے بارے میں اپنی کوئی رائے نہیں پیش کی۔ چند غزلیں پیش کرکے والد صاحب کی شاعرانہ قدروقیمت کا اندازہ قارئین کے ادبی شعور پر چھو ڑ رہی ہوں۔
غزل
مشاعرہ طرحی ماہنامہ نخشب مصری باغ ۲۵جولائی۱۹۵۳
نام لےکرجو ترا آگ سے کھیلا ہوگا
ہاتھ میں اس کےچراغ ید بیضا ہوگا۔۔

رشتۂ عمرجوٹوٹا بھی تو پھرکیا ہوگا
فکر امروز نہ اندیشۂ فردا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔

نالہ سنجیٔ عنادل وہی سمجھا ہوگا
آشیاں جس نےاجڑتےہوئےدیکھا ہوگا

اتنا ہی حسن کا انداز جفا ہوگا پست
جتنا معیار وفا عشق کا اونچا ہوگا

راہ الفت میں قدم رکھنےسےپہلےاےدل
کچھ تو دستور محبّت کوسمجھنا ہوگا

کچھ وہی سمجھےگا دنیا کےنشیب اورفراز
زندگی کے جوہراک موڑ سےگزراہوگا

محفل افروزغزل تم نے پڑھی جوشعلہ
آتش بغض و حسد سے عدو جلتا ہوگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
کاشانۂ ادب پروفیسرسیّد ضامن علی صاحب
سرمقتل ادھروہ کھینچ کرتیغ جفا نکلے
ادھرسراپنےہاتھوں پرلئےاہل وفا نکلے

لگا اک ہاتھ ایسا خنجر بیداد کا اپنے
مری حسرت بھی اے قاتل ترا بھی مدّعانکلے

مری جان بازیوں کاامتحاں ہوجائےمقتل میں
کھنچےتیغ ستم ان کی تودل کا حوصلہ نکلے

رہ الفت میں ہےآہ دل مضطر سہارے کو
یہ زورناتوانی ہےکہ لےکرہم عصا نکلے

بھری محفل میں ظالم کو ہوئ شرمندگی حاصل
لہو میں ترجو دیوانےصف محشرمیں آنکلے

کھڑے ہیں اسلئےخاموش پیش داور محشر
نہ جانےکیا کہیں ہم اوراپنےمنھ سےکیا نکلے

تحمّل کےسبب رونق ہوئی اس بزم کی شعلہ
وہی اس ڈوبتی کشتی کےگویا ناخدا نکلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
نومبر۱۴
۱۹۶۸
چراغاں ہولگاکرآگ جب ان کےنشیمن میں
منائیں عید مرغان چمن کس طرح گلشن میں

کبھی توسوچتےہندومسلماں بیٹھ کرمن میں
نہ جانےکھوچکےکیاکچھ نہ ہم آپس کی ان بن میں

اسی کو اب نہیں رہنے کا حق ا پنے نشیمن میں
بھراہےرنگ جس نےخون سےتصویرگلشن میں

نگاہ باغباں میں خار کی صورت کھٹکتا ہے
وگرنہ چارتنکوں کےسوا کیا ہےنشیمن میں

میں سمجھوں مل گئی دادوفاعشق ومحبّت کی
جومیرے دل کی دھڑکن ہوتمہارےدل کی دھڑکن میں
ایک قطعہ
نہ ایں پر نازکرتےہیں نہ آں پرناز کرتے ہیں
نہ علم وفن نہ معنی و بیاں پرناز کرتے ہیں
کوئی استاد فن کوئی ہے استاد سخن شعلہ
مگرہم خدمت اردو زباں پر ناز کرتے ہیں
رضیہ کاظمی
نیو جرسی
۲۲،فروری۲۰۱۳

 *********************************************

Syed Mahboob Hussain Tahammul

سیّد محبوب حسین تحمّل
تحمّل صاحب میرے والد ماجد سیّدمومن حسین تقوی،شعلہ کراروی کے استاد تھے۔ ان کے پہلےاستاد میر علی عبّاد صاحب نیساں تھے۔ابھی والد صاحب کی عمر صرف سولہ سال کی ہی تھی کہ انکا انتقال ہوگیا۔بعدہْ انھوں نے تحمّل صاحب کو اپنا استاد منتخب کیا۔
تحمّل صاحب کا تعلّق الہ آباد کے مشہور مردم خیز قصبہ کراری سے تھا۔آپ یہیں ماہ شعبان ۱۳۰۴ھ میں پیدا ہوئے ۔ والد کا نام سیّد الفت حسین تھا۔ آپ کے ماموں سیّد ابوالحسن صاحب توکّل اپنے قصبے کےایک کہنہ مشق شاعر تھے۔ انھیں کے تخلّص کی
رعایت سے آپ نےاپنا تخلّص تحمّل اختیار کیا۔آپ کے بڑے سوتیلے بھائی سیّد زین العابدین بھی صاحب دیوان شاعر تھے۔ان کے دیوان کا نام دفتر انتقام تھا جو ایک طویل نظم پر مشتمل ہے۔ بہرکیف آپ کو شاعری والدین کی جانب سے ورثہ میں ملی تھی۔
محبوب صاحب کی ابتدائی تعلیم اپنے قصبے ہی میں ہوئی۔ ابھی صر پانچ چھ سال ہی کے تھے کہ اپنےبڑے بھائی تعشّق حسین کے ساتھ نقل مکانی کرکےاپنے چچا سیّد بشارت حسین کے پاس بغرض تعلیم الہ آباد آنا پڑا۔جمنا مشن اسکول میں داخلہ کرایا گیا۔ گھر پر بھی عربی اور فاسی کی تعلیم کا معقول انتظام کیا گیا۔ ۱۹۱۳ میں ہائی اسکول کا امتحان پاس کیا۔اس کے بعد قانونگوئی کی ٹریننگ اور نینی ایگریکلچر انسٹیٹیوٹ جہاں بھی داخلہ کرایا گیا وہاں دل نہ لگا اور چھوڑ کر اپنے شوقیہ مشغلوں میں لگ گئے۔
آپ کوکھیل کود کا بے حد شوق تھا۔کریکٹ اور فٹ بال کے خاص شوقین تھے اور دور دور کھیلنے جایا کرتے تھے۔اس کے علاوہ ان کے محبوب مشحلوں میں باغبانی،آتشبازی،کبوتر بازی اور شکار بھی تھے۔ شاعری تو ان کی جان تھی۔ الہ آباد شہر میں اس زمانہ میں ادبی محفلیں عروج پر تھیں۔آپ نے نیساں صاحب کی شاگردی اختیار کی۔ پھر مشق سخن و اکتساب فن شاعری میں اس قدر کھوئےکہ تعلیم کو ہی خیر باد نہیں کہابلکہ ان کا دل پھر کسی کام میں نہیں لگا حتّیٰ کہ ملازمت میں بھی ۔نتیجہ کے
طور پر ہمیشہ تنگ دستی شامل حال رہی۔ ماشا اللہ کثیرالعیال بھی رہے۔
تحمّل صاحب غالب ،میراور مصحفی کے رنگ شاعری سے خصوصیت کے ساتھ متاثّر تھے۔مرزا ثاقب بھی چونکہ ان کے ہم خیال تھے لہٰذا ان دونوں کی خوب بنتی تھی۔ان کی شاعرانہ طبیعت نےفن شاعری میں وہ مشق بہم پہنچائی کہ جلد ہی اساتذہ میں شمار کئے جانے لگے۔ ایک بڑی تعداد شاگردوں کی اکٹّھا کرلی۔ جس مشاعرہ میں شریک ہوتے
دھوم مچادیتے۔اچّھےاچّھے مقامی شعرا؍ کا رنگ پھیکا پڑجاتا۔فراق گورکھپوری جو کسی شاعر کو خاطر ہی میں نہیں لاتے تھے انھیں بھی ان کے بارے میں ایک بار کہنا پڑا:
میر کے انداز میں مصحفی بول رہا ہے
تحمّل صاحب والدہ محترمہ کنیز فاطمہ کےرشتہ میں دور کے چچا ہوتے تھے۔ ان کے چچا اور والد صاحب کے استاد کے رشتہ سے وہ اکثر ہمارے گھر آیا کرتے تھے۔ملگجی سی شیروانی چھڑی ٹیکتے آتے اور پلنگ پر لیٹ جایا کرتے تھے۔یہ میرا طالب عملی کامانہ تھا جب زبان وادب سے زیادہ امتحان میں ملنے والے نمبروں سےلگاؤہوتاہے۔ قل سماعت کے سبب بھی ان سے بات کرنا امر دشوار تھا لہٰذا شاعری کے اس بحر ذخّار کے اتنے قریب ہوتے ہوئے بھی میں اس سے کوئی فیض حاصل کرنے سےمحروم رہی۔ وہ ہمیشہ محویت کے عالم میں ہوتے اکثر ہاتھوں میں کوئی کاغذ کاپرزہ ہوتا ذرا آنکھ بند کرکے گنگناتےاور کوئی شعر دست بستہ ان کے حضور آکھڑا ہوتا۔
تحمّل صاحب بہت ہی قادرالکلام شاعر تھے۔آپ کی غزلوں میں روانی کے ساتھ پختگی پائی جاتی ہے۔قصیدے بہت ہی شاندار اور اعلیٰ پایہ کے کہتے تھے۔شاعری میں انھوں نےخوب کہا اور بہت کہا لیکن ان کا کلام زیور طباعت سے آراستہ نہیں ہوا ۔غیر مطبوعہ کلام کہاں اور کس کے پاس یہ کم از کم مجھے نہیں معلوم ہوسکا۔ کچھ کرم خوردہ اوراق مجھے والد صاحب کی وفات کے بعد انکی ردّی میں ملے تھے وہ میرے پاس محفوظ ہیں۔ ان میں سے کچھ ہدیۂ ناظرین ہیں
:
غزل
گرگیا نظروں سے ایسا انقلاب آنے کے بعد
داغ دامان چمن ہے پھول مرجھانے کے بعد

زندگی میں تھا ہزاروں آفتوں کا سامنا
دیکھئے کیا پیش آئےمجھ کو مرجانے کے بعد

ایسے دیوانوں کی حالت پر کہاں تک روئیے
راہ پر آتے نہیں جو ٹھوکریں کھانے کے بعد

اب مریض شام فرقت کو سہارا کون دے
درد بھی رخصت ہوا کروٹ بدلوانے کے بعد

بند ہوجائیں نہ جب تک میری آنکھیں ساقیا
دور میں آتا رہے پیمانہ پیمانے کے بعد

جستجوتک حسرت و ارماں کا طول عمل
رہ گئی حاجت نہ دنیا کو تجھے پانے کے بعد

غم کا افسانہ تحمّل کیا کہوں میں بار بار
داستاں بے لطف ہوجاتی ہے دہرانے کے بعد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رباعیات
ہو جاہل مطلق کہ پڑھا لکّھا ہو
لازم ہے کہ اخلاق بشر اچّھا ہو
ہنستے ہیں جو اوروں پہ ذرا سوچیں تو
ان پر بھی کوئی یوں ہی ہنسے تو کیا ہو

مرغوب تھا طبع کو ترانہ کچھ اور
چھیڑا دل ناداں نے فسانہ کچھ اور
تم آپ کوجو چاہو تحمّل سمجھو
سمجھا ہے مگر تم کو زمانہ کچھ اور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
متفرّق اشعار
خزاں کے دور میں ہے مائل سیر چمن کوئی
اب اس سےبڑھ کےہوسکتا نہیں دیوانہ پن کوئی

اٹّھا سحاب رحمت حق جھومتا ہوا
اللہ رے آبرو مژۂ اشک بار کی

سن کر مری فغان کوئی بیداد گر ہے خوش
شکر خدا کہ نالۂ دل بے اثر نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قید میں بھی زندگی کے دن گزر ہی جائیں گے
کیوں رہائی کے لئےمنّت کش صیّاد ہوں

راہ طلب میں بڑھ گیا یہ اضطراب شوق
گھبراکے پوچھتےہیں انھیں کو انھیں سےہم

تحمّل خوش نہ ہو احباب سے داد سخن لے کر
کلام ایسا تو ہو جسکا اثر ہو قلب دشمن پر

یہ سنتا ہوں تحمّل دل کو دل سے راہ ہوتی ہے
مجھےبھی انتحاں کرنا ہے اپنے جذبۂ دل کا

بڑھے جاتے ہیں آگے قافلے والےتو کیا پروا
ہمارا بھی خدا ہے ہم اگر ہیں دور منزل سے
آخر ایک دن اس پریشاں حال مسا فر کو منزل مل ہی گئی۔ ۱۸ جنوری ۱۹۵۹ع،مطابق۸رجب ۱۳۷۸ کو خدانے اپنے پاس بلالیا۔ الہ آباد شہر کے محلّہ دریا باد اپنے آبائی قبرستان میں دفن ہوئے۔ پس ماندگان میں اہلیہ تین بیٹے اور چار بیٹیاں چھوڑیں۔ والد محترم شعلہ کراروی نے دو قطعات تاریخ نظم کئے ۔بخوف طوالت جن میں سے صرف ایک پیش خدمت ہے۔
بزم ہستی سے تحمّل اٹھ گئے
بجھ گئی شمع شبستان سخن۔
سر کئے تھےجس نےلاکھوں معرکے
چل بسا وہ مرد میدان سخن
باغ شعر وشاعری مرجھا گیا
اڑ گئی بوئے گلستان سخن
الغرض حضرت تحمّل اپنے ساتھ
لے گئےروح سخن جاں سخن
گل ہوئی شعلہ ہوائے موت سے
ہائے وہ شمع شبستان سخن
۱۹۵۹ ع
رضیہ کاظمی
۲۱ جون
۲۰۱۳

**********************************************

Semi-literary Urdu writers of Allahabad

******************************************

Ibn-e-Safi or Ibne Safi

Ibne Safi: (by Muslim Saleem): A majority of critics consider suspense fiction as an outcast and don’t consider writers of this genre among litterateurs. But Ibne Safi’s case is different and that is why space is being devoted to him in this directory. It is indeed a tribute to the writers who taught chaste Urdu to lakhs of people through his absorbing novels. The characters of his novels – Faridi, Hameed, Imram and even Qasim – spoke in chaste Urdu and thus planted these words in the minds of readers sub-consciously. All the characters also observed chastity in their lives and these novels were free of any kind of vulgarity. Hats off to Ibne Safi.)

Ibne Safi was born on July 26, 1928, in the village of Nara in Allahabad district. His parents, Safiullah and Nuzaira Bibi, named him Asrar Ahmed at birth. It was much later that he came to be known as Ibne Safi. Ibne Safi’s forefathers came from the village of Nara. Originally they were Hindus of Kaistth clan. Several generations back, their clan leader Raja Vasheshar Dayal Singh had embraced Islam and came to be known as Baba Abdun Nabi. He completed Matriculation from D.A.V. School in Allahabad. Ibne Safi started writing at a young age. When he was in seventh grade, his first story appeared in the weekly Shahid. Ibne Safi also started writing poetry in eighth grade. Ibne Safi completed Intermediate (High School Certificate) from Eving Christian College in Allahabad. Ibne Safi obtained Bachelor of Arts degree from Agra University.

In the beginning Asrar Ahmed wrote poetry and satire under the pen names of Asrar Narvi, Sanki Soldier and Tughral Farghan etc. But as the time passed the pseudonym Ibne Safi took over all the other pen names and Ibne Safi spent most of his time writing detective stories. He started writing with the pen name of Ibne Safi. Containing his original characters, Inspector Faridi and Sergeant Hameed, the first novel Dilaer Mujrim (The Brave Criminal) was published in March 1952. After finishing his education, Ibne Safi migrated to Pakistan with his mother and sister in August 1952. In 1955, Ibne Safi created a new character, Imran, and started publishing the Imran Series. The first novel of this series Khaufnaak Imarat (The Frightening Building) was published in August 1955 by A & H Publications, 130 Hasan Ali Afandi Road, Karachi Pakistan whereas the Indian edition was published in November 1955 by Monthly Nikhat, Allahabad. In October 1957 Ibne Safi founded Asrar Publications, Karachi (at Lalukhet) and published first Jasoosi Duniya novel THanDee Aag (The cold Fire) from Pakistan. The same novel was published simultaneously in India by Jasoosi Duniya, Allahabad.

Ibne Safi suffered from schizophrenia during 1960 and 1963, not writing a single word in those three years. With the prayers of his family, friends, and fans, Ibne Safi finally recovered from the illness in 1963 under the treatment of Hakim Iqbal Hussain of Karachi. The author made a great comeback on November 25, 1963 with the bestseller Imran Series novel Dairh Matwaalay, which inaugurated in India by the Ex Interior Minister (later Prime Minister of India) Lal Bahadur Shastri. The demand for this novel was so high that within a week a second edition was published in India. This edition was inaugurated by the then Provincial Law Minister Ali Zaheer. During the mid-seventies, Inter Services Intelligence of Pakistan informally utilized his services for lecturing new recruits on the methods of detection.

In September 1979, Ibne Safi was diagnosed with cancer and died on July 26, 1980 (Ramadhan 12, 1400 AH), at around Faj’r time, Ibne Safi passed away (Inna Lillahe Wa Inna Ilaihe Raje’oon). His incomplete Imran Series novel Aakhri Aadmi was by his bedside. (See complete details on the website http://www.compast.com/ibnesafi/biography.htm)

Ibne Safi with parents copy

……………………………………………………………………….

Akram Allahabadi

Akram Allahabadi was a writer who attained immense popularity in the genre of Urdu detective fiction in the sub-continent. Almost a near contemporary of the legendary Ibn-e-Safi, Akram Allahabadi also had a huge fan following. His characters, particularly, Inspector Khan and sergeant Baley, also have a secured place in the history of Urdu literature. Unfortunately, Akram Allahabadi is not remembered as much, as he ought to be. In my childhood, I remember, almost every AH Wheeler bookstall across India, had his novels on display along with Jasoosi Duniya.

I still recall how elders would talk about Ibn-e-Safi’s ‘Deo Paikar Darinda’ or ‘Zamin ke Badal’ in the same breath as Allahabadi’s ‘Junction Bilara’ and ‘Salazar series’ or Sputnik which were all immensely popular novels. Syed Mohammad Akram, who was born in 1922, was born in a zamindar family in Allahabad. He was sent to Bhopal for studies but fell in love with a girl and was later sent to Kanpur. After his graduation, Akram Allahabadi took to journalism and joined an Urdu daily in Allahabad, in 1946.

Akram Allahabadi started several daily newspapers and magazines, edited journals and later shifted to Mumbai. A prolific writer, his novels were sell-outs. He married a woman who had African ancestry. Unlike H Iqbal or others who wrote novels, copying the characters of Ibn-e-Safi, viz. Imran, Faridi-Hameed, Akram Allahabadi had his own style. Sometimes, I felt, that he wrote in a hurry and didn’t take a second glance, because in a couple of his novels the story line grew fantastically but the minute details were often ignored. I remember another of his character, Inspector Madhulkar who along with his assistant Raazi, took on gangsters and mysterious criminals. After Ibn-e-Safi’s demise, Akram Allahabadi also, apparently lost interest. His ‘competitor’ had gone. A trade unionist, he remained active in his later years. Today his novels are rare to find but the legend of Akram Allahabadi grows. Akram Allahabadi [also spelt as Akram ILAHABADI] was a writer of scores of bestsellers in the era of 1950s to late 70s and thereafter. A Facebook group and the plan of his family members and fans to publish his novels has also generated interest among the lovers of Urdu detective fiction.

Akram Allahabadi's wife

…………………………………………………………………………

Shakeel Jamali

……………………………………………………………………..

Ibne Saeed

Ibne Saeed (real name Mujawir Hussain Rizvi) was born on October 4, 1930 at Allahabad. The writer of romantic novels lives in Allahabad. In colour is his latest picture contributed by scholar Rashid Ashraf from Karachi. Rashid Ashraf has included a chapter “Sitara Jo Doob Gaya, Roshni Jo Baqi Rahi” in his book on Ibne Safi entitled “Ibne Safi – Kehti hai tujhko khalqe Khuda ghaibana kya.”

Ibne Saeed was one of the founders of Nikhat publishing house, Allahabad, along with Ibne Safi, Shakeel Jamali and Abbas Hussaini. It has been mentioned in Malkzada Manzoor Ahmad’s autobiography “Raqs-e-Sharar”.

********************************************************************************

Tawakkul Karrarvi

مولوی سیّد ابو الحسن صاحب،توکّل [کراروی]۔

قصبہ کراری الہ آباد شہر سے تقریباً ۳۲میل دور ایک سادات کی بستی ہے۔ پہلے یہ شہر الہ آ باد میں شامل تھا مایاوتی چیف منسٹر کی قطع وبرید نے اسے الہ آباد سے الگ کرکے کوشامبی  سے جوڑ دیا۔ایک زمانہ میں یہ قصبہ علم وکمال کا مرکز تھا۔مولانا سیّد ظہیر الدیں،مولانا شیخ نعمت علی،حکیم مولانا سیّد نورالدین،چودھری میر فضل حسین،خان بہادر میر سیّد ،میر زین العابدین مخلص اوررئیس وتعلّقہ دارمیر احمد حسین سب اسی سر زمین کی پیداوار تھے۔

توکّل صاحب کا صحیح سن پیدائش نہیں معلوم ہوسکا انکی تاریخ فات سن ۱۹۱۲ اور اس وقت ان کی عمر ساٹھ سال کی بتائی جاتی ہے۔اس طرح ان کا سن پیدائش سن ۱۸۵۷ کے آس پاس نکلتا ہے۔ تعلیم غالباً گھر پر ہی ہوئی تھی جییسا کہ اس زمانہ میں روساء کا کے گھروں کا رواج تھا۔ اردو اور فارسی دونوں زبانوں میں اچھی دستگاہ تھی۔ آپ ان دونوں ہی زبانوں کے قادر الکلام شاعرہوئے۔ آپ کی ذات سے قصبہ کراری اور اطراف میں شعر و شاعری کا خوب چرچا ہوا۔ ہر اردو میں شدبد رکھنے والے کو شعر گوئی کا شوق پیدا ہوا آپ بہت ہی زود گو شاعر تھے اور بے تکان کہتے تھے۔

مولانا کو مذہبیات سے زیادہ دلچسپی تھی اس لئے مدح اہلبیت کے علاوہ کچھ نہیں لکھا۔ سارے اصناف سخن میں ان کا زور زیادہ تر قصیدہ پر ہی رہا۔ انھوں اپنا کلام یا تو خود جمع نہیں کیا یا  کہیں تلف ہوگیا کیونکہ ان کے ورثاء کے پاس انکا کلام موجود نہیں ہیں ہے جن روساء کی سالانہ محفل مقاصدہ میں اپناکلام پڑھتےتھےاور ان کے یہاں گلدستے شائع ہوتےتھے ان میں شاذونادر ہی کہیں کہیں انکا کلام تبرّک کی صورت میں شاید ملسکتا ہے

توکّل صاحب کے کلام میں وہ زور،مزہ،ندرت اور جاذبیت تھی کہ جب وہ سخن آرا ہوتے تو سامعین کا دل چاہتا کہ کاش یہ سلسلہ کبھی نہ ختم ہو۔ ان کے قصیدہ کی تشبیب کے عنوان میں ہمیشہ ایک نئی جدّت ہوتی تھی۔کہیں مکالمۂ روزوشب اور کہیں اور کہیں مناظرہء علم وجہل اور اس کے ساتھ بہت ہی چست گریزاور ممدوح کی بھر پور مدح۔ اگر بہار کی منظر کشی پرآتے تو سننے والے عش عش کرجاتے آپ نےکراری اور اطراف کراری میں مختلف مذہبی موقعوں ہرمحفل میں قصیدہ خوانی کی۔ ان محفلوں میں باہر کے شعراء بھی شریک ہوتے تھے۔ وہ سب آپ کا بہت احترام کرتے تھے۔ ان شعراء میں محشر لکھنوی اور عزیز لکھنوی خاص تھے۔

ایک قصیدہ کی تشبیب میں زور طبیعت ملاحظہ ہو۔۔

شاید ازفیض نمودر کف دست زاہد

دمد از دانۂ تسبیح نہال تقویٰ۔۔۔۔۔۔۔

ایک دوسری جگہ فرماتے ہیں۔

چٹکی جب کوئ کلی سنئے صباکہتی ہے

۔آج بلبل کے جلے دل کا پھپھولا پھوٹا

   ان کا انتقال بھی قصیدہ کہتے کہتے ہی ہوا۔ان کےشاگرداور بھانجےجناب محبوب حسین صاحب تحمّل کے چچا بشارت حسین صاحب قانونگوکی محفل مقاصدہ کہہ رہےتھے کہاچانک حرکت قلب بند ہوگئی او روح قفس عنصری سے پرواز کرگئی۔

ان کے کے شاگردوں کی تعداد کافی لیکن ایک دو کو چھوڑ کرسب ہی سلام اور قصیدہ کے شاعرتھے۔

افسوس کہ صرف ایک خاص علاقہ تک محدود رہنےاور کلام کے دستیاب نہ ہونے کی وجہ سےایک ایسا قادر الکلام قعر گمنامی میں کھوگیا اور آج کوئی اس کا نام بھی نہیں جانتا۔

ہوئےنامور بے نشاں کیسے کیسے

زمیں کھاگئی آسماں کیسے کیسے

رضیہ کاظمی

نیو جرسی۔امریکہ

۳۰جولائ

۲۰۱۳

I……………………………………………………………………………………………………….

Ghulam Ghaus Bekhabar

غلام غوث بے خبر اردو ادب مرزا غالب اور خاص طور پر ان کے خطوط سے دلچسپی رکھنے والے اس نام سے ضرور واقف ہونگےلیکن شاید یہ کم لوگ جانتےہونگے کہ موصوف کا تعلّق الہ آباد سے تھا۔ “خان بہادر ذوالقدر غلام غوث صاحب بے خبرمرحوم رئیس الہ آباد روایت ہے کہ ان کے مورث اعلی’سلطان زین العابدین شاہ کشمیر کی اولاد میں سے تھےاور حکومت سلاطین مغلیہ میں بعض بزرگ عہدۂ قضاۓ کشمیر پر معمور رہےاور بعض اراکین خاندان ملکی خدمتوں پر سرفراز رہے. انجام کار بعہد راجہ گلاب سنگھ ان کے والد خواجہ حضوراللّہ اور ان کے خسریعنی ان کے نانا خواجہ فرید الدین ترک وطن کرکے لاسہ(تبّت) چلے گۓ.وہاں بھی ان کی مدارات ہو ئ اور اہل اسلام کے مقدمات کا تصفیہ ان کی ذات سے متعلّق رہا. وہاں کچھ ٹھہر کردونوں صاحب ریات نیپال میں وارد ہوۓاور وہیں اقامت اختیار کرلی. چنانچہ وہیں بے خبرسن ۱۲۴۰ھ میں پیدا ہوۓ. ان کی چار برس کی عمر تھی کہ والداور نانا کو گردش ڑمانہ نے پھرترک سکونت پر مجبور کیااور اس مرتبہ بنارس میں طرح اقامت ڈالی. یہیں سن شعور کو پہنچےاور تعلیم کا سلسلہ تکمیل کو پہنچا. سن ۱۸۴۰ ع میں ملازمت کا سلسلہ شروع ہوااور اپنےخالوخان بہادر مولوی سیّد محمّد خاں میر منشی لفٹنٹ گورنرشمال مغرب کےنائب مقرّرہوۓ. انھیں ایّام میں جب لارڈ الن برا نے جب گوالیار پر چڑھائ کی تو یہ گورنرجنرل کے منشی خانےمیں منسلک ہوکرشریک مہم ہوۓاور جنگ کےخاتمہ پربہ صلۂ کار گزاری خلعت پایا. پھر کئ سال بعد(ص.۶۴۷)اپنے خالو کے بجاۓ میر منشی مقرّرہوۓاور سن ۱۸۸۵۶ تک برابر اس عہدۂ جلیلہ پرفائز رہےاور حکّام میں اعلی’ درجہ کا وقار حاصل کیا.غدر۵۷ میں خیر خواہی کے موقع پرجو دربار لارڈ لٹن نے کیااس میں آپ کو بھی تمغۂ قیصری ملا. سن ۱۸۷۵۶ میں۴۵ سال ملازمت کے بعد آپ نے پنشن لی اور خطاب خان بہادر ذوالقدرسےسرفراز ہوۓ.اسی دوران میں نواب کلب خاں نےکئ مرتبہ باصراراپنا مدارالمہام کرنا چاہامگر خان بہادر نےہمیشہ شکریہ کےساتھ اسےنا منظور کیااور آخر حصّہ زندگی کا یاد خدا میں بسر کرنا مناسب سمجھا. شاعری اورانشاپردازی میںآپ کو ایک امتیازی درجہ حاصل تھا. فارسی شعر ایسا اچّھا اور برجستہ کہ اکثر اہل زبان بھی انکی ستائش کیا کرتے تھے. غالب مرحوم سےخان بہادر مغفور کےتعلّقات نہایت دوستانہ تھے.چنانچہ اکثر خط و کتابت رہتی تھی. تصنیفات میں سےخونابۂ جگر(رقعات ونظم فارسی)اور فغان بےاثر(رقعات اردو)سن ۱۸۹۱۶احباب میں تقسیم کے لۓ شائع کۓ تھے. خطوط کا طرز تحریربھی نہایت شستہ و دلکش تھا. پیرانہ سالی میں سن ۱۹۰۵ میں انتقال کیا. آپ کی صرف ایک غزل فقیروں کی بول چال میں نظرسےگزری.ان ذات والا صفات ایک زمانہ دراز سےالہ آباد میں مرجع اہل کمال تھی.تادم واپسیں زندہ دلی و شوخ کلامی آپ کی ہمدم رہی. تبرّکاچند شعر درج ہیں . فقیروں سے جو کرتے ہو بولی بہت پیاری باتیں ہیں یہ بھولی بھولی بھکاری بتو ہم تو دیدار کے ہیں بھلا ہوگا بھر دو ہمار ی بھی جھولی نہیں بند رہتا کوئ کام اپنا گرہ دل کی ہے جب سےمرشدنےکھولی پری آج شیشےسے داتا نکالو یہ کالی بلا کیسی افیون گھولی کہاں ہم فقیر اور دنیا کے جھگڑے یہ کیچڑ تو دامن سے پہلے ہی دھولی (ماخوذاز خمخانۂ جاوید حصّۂ اول مرتبۂ لالہ سری رام) رضیہ کاظمی نیو جرسی ۳۰اگست ۲۰۱۳

*************************************************************

Shairaat (by Razia Kazmi)

[۱] اہل

شریمتی جانکی بی بی۔ یہ ۱۹ویں صدی کی ایک خوش فکر شاعرہ تھیں۔ یہ شہر کے کایستھ قوم سے تھیں۔ ان کا تذکرہ الہ آباد یونیورسٹی کے پروفیسر ضامن ععلی صاحب نے ایک کتاب چراغ محفل ٖفصاحت میں کیا ہے۔

انکی ایک طویل غزل سے چند اشعار پیش خدمت ہیں؎

اشعار

تونے تو رہا کر ہی دیا زلف دوتا سے

ہم جان سے جائیں بھی تو اب تیری بلا سے

ملتا ہے وہ مضمون ہمیں ذہن رسا سے

رہ جاتا ہے جو بندش فکر شعرا ؐ سے

کعبہ کی طرف نشہ میں کس طرح سے جاؤں

دشوار سنبھلنا ہے مجھے نغزش پا سے

لایا جو شب ہجرمیں اے اہل زباں پر

تاثیرہم آغوش ہوٗی آکے زباں سے۔۔۔۔

اس گل کا نہ لائے کبھی پیغام مرے پاس

شرمندہ کبھی میں نہ ہوا باد صبا سے

تاحشر جدا ہوں نہ میں اس حور لقا سے

خواہش ہےاگردل میں تو اتنی ہے خدا سے

لیکر کہیں چھلّےکو کرےمجھ کو نہ بدنام

اتنا ہے فقط خوف مجھےدزد حنا سے

باقی نہ رہے خواہش مے بادہ کشوں کو

بےہوش کچھ ایسے ہوئے ساقی کی صلا سے

سچ پوچھئے تو خاک در یار پہ ہم کو

آرام ہے بڑھ کر کہیں نقش کف پا سے

[۲]سوشیلا

شریمتی سوشیلا عرف برج کشوری۔ یہ ۱۸۹۸ میں الہ آباد میں پیدا ہوئی تھیں زمانہ کے لحاظ سے ان کی تعلیم گھر پرہی ہوئی تھی۔ ہندی کے علاوہ انھوں نےانگریزی اوراردو میں بھی قابلیت حاصل کی۔ انکے شوہر جو پیشہ سے اسسٹنٹ انجینیر تھے شاعری کرتے تھے

تذکرہ شعرائے کشمیری پنڈتاں المعروف بہ بہار گلشن کشمیر جلد ثانی سے ان کی دو نظمیں پیش ہیں یہ کتاب ۱۹۳۲ میں شائع ہوئی تھی۔ ناظرین سوسال پہلے ایک گھریلوعورت کےآزادئی نسواں سے متعلّق خیالات ملاحظہ فرمائیں ۔ یہ نظم کس موقع پر کہی گئی تھی اگر حوالہ دستیاب ہوتا تو پڑھ کر زیادہ لطف آتا

نظم اوّل

بحث تو یہ تھی اصولی مشفق شیریں زباں

اشتعال طبؑ کا باعث ہوا کیا مہرباں۔۔۔۔۔۔۔۔0

بندہ پرورمجھ کو ہود عویٰ سخن کا کس طرح

مدّتوں سے ہے وطن پنجاب،پنجابی زباں

یہ سنا تھا آپ کا طرز بیاں دلچسپ ہے

شاعری کا آپ کی ہے معتقد سارا جہاں

ساری کوشش کی ہے صرف داستان حسن وعشق

بتکدہ کا آپ نے چوما ہے سنگ آستاں

مرحبا شان سلاست،حبّذا ذوق سلیم۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خوب دی داد فصاحت آپ نے اے مہرباں

یہ فصاحت، یہ بلاغت، یہ سلاست آپ کی

اس پہ سونے پر سہاگہ اکبر آبادی زباں

چشم بد بیں دور، مطلع مطلع انوار ہے

جوہر پاکیزگی ہے دونوں مصرعوں سے عیاں

ٹھنڈے دل سے آپ نے سوچی کبھی یہ بات بھی

کیا ہیں وصف اردھانگنی کے،کیا ہیں اس میں خوبیاں

ہے شریک رنج وغم گوشامل راحت نہ ہو

آپ گو برہم ہوں لیکن وہ سدا ہے مہر باں

جام شیریں بادۂ الفت سے بھرتی ہے مدام

عفوکرتی ہےبرائی ،وصف سے تر ہے زباں

بیٹیاں ہوں یا ہوں بہنیں آپ کی شیدا ہیں وہ

ہے محبّت ان کی گویا ایک بحر بےکراں

کچھ ثبوت الفت ہمشیر کی حاجت نہیں

نخل الفت کے ثمر دونوں ہیں بیٹے بیٹیاں

آپ کے دم سےشجاعت میں ہےباقی ضرور

ہم نہ ہوتیں گر تو مٹ جاتا محبّت کا نشاں

دیکھئےمردوں کی خود داری کا یہ ادنیٰ ثبوت

لیڈیوں کے سامنے اٹھتی ہیں ان کی ٹوپیاں

شاستروں نے مرد کی اردھانگنی ہم کو کیا

اور بیٹر ہاف کہتا ہے ہمیں سارا جہاں

نذر کرتی آپ کو ہم ہیں جواہر بے بہا

ہے ہماری ہی بدولت نسل کا قائم نشاں

آپ موجد ہیں ہر اک ایجاد کے مانا مگر

موجدوں کے کون موجد ہیں یہ کہئےمہرباں

دہر ناقص ہےیہاں تکمیل ہےکس کونصیب

اک مکمّل ذات حق کی ہے بلا ریب و گمان

اے سوشیلا جس بلندی پر نشیمن ہے مرا

طبع موزوں کی وہاں پہچینگی کیا طغیانیاں

دیگر

سن چکے ماہ گزشتہ میں ہو مردوں کا بیاں

اب سنو میری زبانی عورتوں کی داستاں

زور بازوپر اگر مردوں کو نازو زعم ہے

ہیں تحمّل اور شکیب و صبر کی ہم پتلیاں

بھیم وارجن کی اگر طاقت پہ تم کو ناز ہے

دروپدی اور پدمنی سی ہم میں بھی تھیں رانیاں

رام چندر نے پتا کا گر وچن پالن کیا

تھی پتی برت دھرم میں سیتا بھی یکتائے زماں

تم پھروآزاد وآوارہ جہاں میں در بدر۔۔۔۔۔۔

طابع فرماں رہیں ہم اور پابند مکاں

عقل میں کچھ کم نہیں ہیں شکل میں بہترہیں ہم

تم توانا ہو یہ مانا اور ہم ہیں ناتواں

کیوں نہ ہم چلّا ئیں، چیخیں، شیوۂ بیداد پر

کیوں نہ فریادی بنیں ہم بھی تو رکھتے ہیں زباں

ایک پہیے کی کبھی گاڑی چلا کرتی نہیں

تیر گرٹوٹاہوا ہے تو کماں بار گراں

ہم تووہ ہیں جان بھی قربان کردین آپ پر

آپ ہم سے ہو رہے ناحق کوہیں یوں بدگماں

یہ تو بتلاؤ کہ آخر حاصل محنت ہے کیا

کیا کیا ہے آج تک جس پر ہو کرتے شیخیاں

ہوچکا بس ہوچکا،اب انتظام قوم و ملک

آپ کی بد انتظامی پر ہے روتا آسماں

آزمائش میں ہوئے ہو بےطرح ناکامیاب

اب یہی بہتر ہے ہم کو دو حکومت کی عناں

آگیا اب روز آزادئی نسواں آگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مدّتوں کے بعد پاؤں کی کٹینگی بیڑیاں

خواہش حشمت نہیں ہم کو نہ شوق انتقام

بے غرض اور نیک دل ہیں ہو نہ ہم سےبدگماں

*****************************************************************************

ALLAHABAD KE GHAIR-MUSLIM SHUARA

:

بسلسلۂ شعراۓ الہ آباد
تذکرۂ غیر معروف غیر مسلم شعرا۶
زبان و ادب نہ کسی کی ملکیت ہوتے ہیں اور نہ ان پر کسی کی اجارہ داری ہوتی ہے.اردو زبان کی تو پیدائش و پرورش ہی گبر  ومسلمان دونوں کی آغوش میں ہوئ . دونوں ہی اس کے فروغ وبقا میں برابر کے ساجھے دار رہے ہیں. شہر الہ آباد میں بھی یہی کہانی دہرائ جاتی رہی . ۱۹۴۷ سے پہلےاردو سرکاری اور غیر سرکاری طور ہر کہیں پڑھی لکھی اور بولی جاتی تھی اور سچ پوچھۓ تو پڑھے لکھےاور شائستہ لوگوں کی زبان سمجھی جاتی تھی . الہ آباد کا ادبی مورّخ جب یہاں کے شعرو ادب کی تاریخ کھنگولتا ہے تو اسے مسلم شعراء کے دوش بدوش بےشمار غیر مسلم شعراء کے نام بھی نظر آئینگے. ان میں کشمیری  براہمنوں سے لے کر کائستھ تک سب ہی شامل رہے ہیں. کشمیری شعراء کا تذ کرہ میں الگ دوسرے مضمون میں کرونگی. بلکہ کچھ مشہور ہندو شعراء کے بارے میں ایک الگ ہی آرٹیکل ہوگا.

رضیہ کاظمی ۱۲ فروری ۲۰۱۴

                                ۱.  نثار
منشی سدا سکھ لال نام تھا. والد کا نام منشی سنبل پرساد تھا. دہلی رہنے والے تھے لیکن الہ آباد میں مستقل سکونت اختیار کرلی تھی. مرزا محمّد رفیع سودا کے شاگرد تھے. اردو اور فارسی دونوں زبانوں مں شاعری کرتے تھے. کئ دیوان اور ایک مثنوی ان کی یادگار ہے نمونہ صرف دو اشعار پیش ہیں؛
ہمارا ہی دل جب ہمارا نہیں ہے
تو شکوہ ہمیں کچھ تمہارانہیں ہ

کیا سنگاررجھانے کو تم نے کس کی چشم
کہ بال بال در اشک جو پروۓ ہیں

۲.عزیز
بھکاریداس نام تھا. خواجہ میر درد کے شاگرد تھے. ۱۷۸۱ میں الہ آباد میں سکونت پذیر تھے..
نمونۂ کلام:
ایسا ہےلعل لب کاترے یاررنگ سرخ
یاقوت جس کے آگے لگےایک رنگ سرخ

کرے نہ یاد اگردل کوصاف کینے سے
عزیز موت بھلی پھر تو ایسے جینے سے

ملیں کیوں کر بھلااس شوخ طفل لا ابالی سے
کہ سوتےسوتے جو چونکے ہے تصویر خیالی سے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰
۳.آسان
لالہ سہج رام نام تھا. الہ آباد کےرہنے والے تھے. نمنہ کے لیے صرف ایک شعررستیاب ہو سکا ہے:
مرنے کےبعد تا بہ حشرآنکھیں جو میری وارہیں
مجھ کو تو کچھ خبر نہیں کس کا یہ انتظار تھا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰
۴.عاقل
لالہ ماکھن لال نام تھا. عدالت کلکٹری الہ آباد میں ملازم تھے.
نمونۂ کلام :
بے نشانی اس چمن میں ہےنشان عندلیب
شہپرعنقاہے چوب آستان عند لیب

ہے گلستان سخن میں عاقل شیریں سخن
ہم صفیرو ہم نوا ہم داستان عندلیب
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰
۵.فرصت
لالہ نتّیا نند نام تھا. عدالت من صفی میں وکیل تھے. بمشکل ایک شعر دستیاب ہوسکا.
نمو نۂ کلام:
پھولا ہے لالہ گلشن سینہ میں داغ ہے
افسوس اس بہار میں وہ مہ جبیں نہیں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۶. مبتلا
لالہ چندی سہاۓ نام تھا. پرتاب گڑھ کے رہنے والے تھےلیکن محکمۂ آبکاری میں ملازمت کے سبب الہ آباد ہی میں سکونت اختیار کرلی تھی.
نمونۂ کلام:
عاشق رخ ہوں سر زلف گرہ گیر نہیں
ہاۓ وحشت کو مرے زلف گرہ گیر نہیں

اٹھ گیا ہے اثر جذب محبّت یارب
یا مرے نالۂ جانکاہ میں تاثیر نہیں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۷. وفا
شنکر لال نام تھا. الہ آباد کے رہنے والے تھے.
نموۂ کلام:
زر ہے نہ مرےپاس نہ ہے جان نہ دل ہے
یاں ہے فقط اے جان جہاں نام خدا کا

جب تک کہ یہ ہے جان وفاتیرے بدن میں
لازم ہے رہے ورد زباں نام خدا کا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۸. منشی
کندن لال سکسینہ نام تھا الہ آباد کے رہنے والے تھے.
نمونۂ کلام:
چلتےہیں اٹھاۓ ہوۓ دامن وہ ادا سے
سایہ کی توقّع نہ رہی بال ہما سے/

ابرو تہہ لوح جبیں نیچے ہلال اوپر قمر
ہم جنس دونوں ہم نشیں نیچے ہلال اوپر قمر

محراب پر کھنچوائ ہےتصویر اپنی یار ے
اس عقل پر صد آفریںنیچے ہلال اوپر قمر
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۹. علم
منشی چندی سہاۓ. باپ کا نام لالہ ٹھاکر پرساد تھا.
نمونۂ کلام:
اس بادشاہ حسن کاکیا وصل ہو ممکن
سلطان مخاطب کہیں ہوتے ہیں گدا سے

وہ بھی مری تعریف میں کام آئینگے اک دن
رہ جائینگے مضموں جومرے فکر رسا سے

منھ سرخ ہے ابرو ہیں چڑھےبدلے ہیں تیور
آتے ہو نظر تم مجھے کچھ آج خفا سے

جان آگئ بیمار محبّت کے لبوں پر
اب فائدہ ہوگا نہ دعا اور نہ دعا سے
…………………….

۱۰.ہنر
بابو دیوکی نندن نام تھا.کلکٹری الہ آباد میں ملازم تھے جناب نظر الہ آبادی کے شاگرد تھے. نمو نۂ کلام:
نیند کمبخت نہیں آنکھ میں آنےدیتی
دشمن خواب ہوئ ہے شب فرقت کیسی

کیا لکھوں میں اس  سے زیادہ خوبئ قسمت کا حال
ایک خط میں سو جگہ بگڑی ہوئ تقدیر ہے

یہ آرزو نہیں اصلا کہ عز وجاہ ملے
فدا ہوں جس پہ ال’ہی وہ رشک ماہ ملے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۱. اثر
شیام
بہادر نام. موضع خواجہ پورضلع الہ آباد کے رہنےوالے تھے.ایک وکیل کے محرّر ہونے کے سبب شر ہی میں سکونت اختیار کرلی تھی.
نمونۂ کلام:
لاکھ پردوں میں تراحسن خود آرائ ہے
پھر بھی ہر شے سےعیاں جلوۂ رعنائ ہے

ان کے جاتےہی ہوۓ عیش کے ساماںرخصت
پھر وہی ہم ہیں وہی عالم تنہائ ہے

آج روتے ہو جسے دیکھکےکل ہنستے تھے
یہ وہی درد کا مارا دل شیدائ ہے

مجمع حسرت و حرماں ہےہجوم غم ویاس
دل کے ویرانے میں اک انجمن آرائ ہے

ایک مدّت سے ہوں زنداں میں اثر کیامعلوم
صحن گلشن میں خزاں ہے کہ بہار آئ ہے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۲ . تمنّا
سندر سنگھ نام تھا.والد کا نام بابو داس دیو سنگھ تھا.اردو کی معمولی استعداد کے باوجود اچّھے اشعار کہتے تھے.
نمونۂ کلام:
سن رہا ہوں آج بے چینی دل دشمن میں ہے
شکر ہے اتنا اثر تو نالہ و شیون میں ہے

زہر بھی، امرت بھی، شربت بھی، شراب ناب بھی
سچ اگر پوچھو تو سب کچھ ان کی اک چتون میں ہے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۳ . چمن
شیام بہادر ورما نام. والد کا نام بابو نرائن پرساد تھا. ۲۳ ستمبر ۱۹۱۶کو آگرہ میں پیدا ہوۓ لیک بسلسلۂ وکالت میں مقیم تھے. صرف ایک شعر حاصل ہو سکا.
نمونۂ کلام:
وصف چشم شوخ کا آیا پس مردن خیال
اہل محشرحشر میں کہتے ہیں سودائ مجھے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۴ . روح
بششردیال نام سن ۱۸۸۱۶ میں پیدا ہوۓ تھے. وطن لکھنؤ تھا لیکن ملازمت کے سللہ میں الہ آباد میں مقیم رہے. والد کا نام ٹھاکر پرساد تھا
نمونۂ کلام :
ہواۓ عدل جب چلتی ہےتو انصاف ہوتا ہے
دبے رہتے ہیں فتنے چین سے مظلوم سوتا ہے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۵ . زاہد
منشی تربینی سہاۓ نام تھا. پیشے سےوکیل تھے لیکن انھیں شاعری کا شوق اوائل عمر سے ہی تھا
نمونۂ کلام :
ہم نے وہ راحت اٹھائ خانۂ صیّاد میں
جی نہیں اب چاہتا سوۓ گلستاں دیکھیۓ

دل کا ہر اک داغ اب اپنی جگہ ہے باغ باغ
یوں تو دیکھے ہں بہت یہ بھی گلستاں دیکھیۓ
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۶ . شاد
شیو پرساد سنہا نام . الہ آباد کے مشہور وکیلوں میں تھے. شاعرانہ صلاحیت فطری تھی.
نمونۂ کلام :
ناکہاں اک ایک کرکے سب چمن میں چھپ گۓ
ان گلوں کو تو بہار جاوداں سمجھا تھا میں

اس نے آکر دے دیا دل کو سکون دائمی
موت کو تو اک بلاۓ ناگہاں سمجھا تھا میں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۷ . شاطر
منشی بدری ناتھ. مقامی کائستھ پاٹھ شالہ میں ملازم تھے.
نمونۂ کلام:
آپ بھی ناراض اس سے موت بھی اس سے خفا
کون ہوتا ہے مریض غم کا پرساں دیکھیۓ

ایک دنیا دیکھیۓ ہنگامۂ ہستی کے ساتھ
دوسرا عالم سر گور غریباں دیکھیۓ
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۸ . شوق
منشی دیونرائن. سن ۱۹۰۱ میں بمقام جھونسی الہ آباد میں پیدا ہوۓ. انجمن اردو کائستھ پاٹھ شالہ کے صدراور رسالہ کائستھ پاٹھشالہ سماچار کے اڈیٹر تھے.
نمونۂ کلام:
دل میں دو ہیں صرف وہ آپس میں مل سکتے نہیں
دل کو پھر دل سے ملانا کتنا مشکل کام تھا

زندگی میں بھی وظیفہ شوق کا تھا روز و شب
مرتے دم بھی لب پہ اس کے آپ ہی کا نام تھا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۱۹ . عشرت

رگھو راج بلی نام. والد کا نام منشی برج بہادر لعل. ۱۹۰۱ میں پرتاب گڈھ میں پیدا ہوۓ.کائستھ پاٹھ شالا میں نوکری کے سبب الہ آباد ہی میں مقیم ہو گۓتھے. شاعری ورثہ میں ملی تھی. ان کے دادا اودھ بہای لعل بھی اچّھے شاعر تھے. عشرت نوح ناروی کے شاگرد تھے.
نمونۂ کلام:
دیروحرم کا دہر سے مٹ جاۓ تفرقہ
دونوں گھروں میں کاش ہو روشن چراغ دل

شفق پھولی فلک پر، گل کھلے صحن گلستاں میں
یہ سب رنگینیاں پیدا ہوئیں خون شہیداں سے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۰. کھرے
منشی بھگوان دین نام. ۴ جولائ ۱۹۰۵ کو موضع بندھیری ضلع الہ آباد میں پیدا ہوۓ. آگرہ یو نیورسٹی سے ایم اے کرکے الہ آباد ڈی اے وی کالج میں انگریزی کے استاد مقرّر ہوۓ. شاغری زمانۂ طالب علمی سے ہی شروع کردی تھی. صرف غزل کہتےتھے.
نمونۂ کلام :
جزا کا خوف کیا ہو مجھ کو پیش داور محشر
وہ دل لاۓ ہیں میرا میں بھی ان کا تیر لایا ہوں

بارور ہوگا کسی دن نخل آزادی ضرور
کہہ رہے ہیں غیر بھی خون شہیداں دیکھ کر
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۱. مضطر
راجیندر سنگھ نام.والد کا نام لکشمی سنگھ تھا. ۱۵ اگست ۱۹۰۵ کو پیدا ہوے.وطن نظام آباد ضلع اعظم گڈھ تھا.مقامی ڈی اے وی کالج میں ملازم تھے.
نمونۂ کلام :
وہ نہ آۓ خیر مضطر موت تو آہی گئ
کچھ تو پوری ہو گئ حسرت دل ناشاد کی

بسائ جارہی ہیں بستیاں شہر خموشاں کی
وہ اجڑی بستیوں کو اس طرح آباد کرتے ہیں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۲. موج
برج بہادر نام. والد کا نام منشی ماتا غلام. ۱۹۰۱ میں الہ آباد میں پیدا ہوۓ. موضع برونہ ضلع الہ آباد کے با شندے تھے لیکن ملازمت کے سلسلہ میں ہمیشہ الہ آباد ہی میں رہے. محبوب حسین تحمّل کے شاگرد تھے.
نمونۂ کلام :
گھوم پھر کر چمن دہر کا  نقشہ دیکھا
ضیق فرصت تھی مگرپھر بھی نہ کیا کیا دیکھا

کہیں شادی نظرآئ کہیں ماتم اے موج
خوب ان آنکھوں نے دنیا کاتماشا دیکھا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۳. نشتر
بابو لالتا پرساد نام تھا.محبوب علی قوس کے شاگرد تھے.
نمو نۂ کلام :
کافروں سے نہ رہےدہر میں دب کر حیدر
جنگ میں رہتے تھے منصور و مظفّر حیدر

سب کو لے جائینگے وہ خلد بریں میں بیشک
کیونکہ ہیں گلشن فردوس کے سرور حیدر
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۴. وفا
مہادیو پرساد نام. والد کا نام منشی بدّھو لال. ۱۹۱۹ میں پیدا ہوۓ. محکمۂ صفائ میں انسپکٹر تھے. شاعری کافی عمر کے بعد شروع کی تھی.
نمونۂ کلام :
تجسّس میں تیری ہوا ہوں میں ایسا
کہ اب جستجو کو مری جستجو ہے

بے نقاب اس شمع رو پہ روۓ تاباں کردیا
آج گل ہم نے چراغ شام ہجراں کردیا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۵. آسودہ
منشی رام ناتھ سہاۓ نام. والد کا نام منشی بیج ناتھ سہاۓرئس شہر الہ آباد . دیوانی کے وکیل تھے. قیصر الہ آبادی کے شاگرد تھے.
نمو نۂ کلام :
جانے آسودہ عدو،علم سخن کو اب کیا
طفل مکتب ہے سبق تو کرے از بر اپنا

کچھ اپنا اثر گر دکھاۓ محبّت
تو معشوق ہو مبتلاۓ محبّت
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۶ . باراں
منشی لالہ جگن ناتھ نام. قیصر الہ آبادی کے شاگرد تھے.
نمونۂ کلام :
بعد فنا بھی بخت سیہ کا اثر رہا
گل ہو کیا چراغ ہمارےمزار کا

اٹھنا مثال نقش قدم اب محال ہے
یہ حا ل ہو گیا ہے ترے خاکسار کا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۷. جوش
پنڈت ہری ہر ناتھ ناگر نام . الہ اباد کے باشندے تھے. بسمل الہ آبادی کے شاگرد  تھے.
نمونۂ کلام :
زندگی اس شکل سے گزری تمہاری یاد کی
چلتے پھرتے بیٹتے اٹھتے تمہارے یاد کی

نظر آتاہے مجھ کو ہر طرح سے جلوۂ قدرت
صنم خانہ میں میں جاکر خدا کو یاد کرتا ہوں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۲۹ . مراد
منشی منموہن لال نام.والد کانام رام منشی ٹیک پرساد. ۴ جنوری ۱۸۵۷ کو پیدا ہوۓ تھے .
نمونۂ کلام :
نشہ کہتے ہیں کسے کیا ہے خمار
کیا خبر اس کو جو مینوش نہ ہو

منزل راہ حقیقت میں پہنچنے کے لیۓ
عمر کی قید نہیں وقت کی میعاد نہیں
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۳۰ . وفا
پابو وشنو شنکر. والد کا نام منشی جیت لال. ساکن کڑا ضلع الہ آباد.میر تقی میر کے شاگرد تھے. فارسی میں صاحب دیوان تھے. ۱۸۰۵ میں انتقال فرمایا.
اردو شاعری کا نمو نہ:
مدّتیں گزریں نہ یہ بھی تو ہوا ہاۓ نصیب
کہ کبھی دور ہی سے دیکھنا ہو جاۓ نصیب

مشتعل رات وہ آتش تھی مرے سینےمیں
کہ نہ رکّھا گیا ہاتھ اپنے جگر پر اپنا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۳۱ . شوکت
منشی بندیسری پرساد نام. جناب قیصرالہ آبادی کے شاگرد تھے.
نمو نۂ کلام :
محشرمیں ایسا بھڑکا شعلہ مری فغاں کا
دوزخ کے بھی زباں پر تھا شور الا ماں کا

پہلی غزل میں شوکت نازک خیا لیاں ہیں
کیا فیض ہے فروغ استاد نکتہ داں کا
……………………….

۳۲. آزاد
کرپا شنکر نام. والد کا نام منشی راجیشوری پرساد  رئیس و زمیندارمہوہ کلاں ضلع الہ آباد. ۱۹۱۵ میں پیدا ہوۓ.
نمونۂ کلام  :
تھی نہ مجھے کوئ خبر منزل حسن وعشق کی
دیدۂ حق نما نےکچہ اس کا پتہ بتادیا

عیش و نشاط دہر کی کھل گئیں سب حقیقتیں
آنکھ ہماری کب کھلی خاک میں جب ملادیا
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۳۳. ضیا
ڈاکٹر ہریش چندر. والد کا نام بابو رام کشور. وطن مانک پور ضلع الہ آباد . بسمل الہ آبادی کے شاگرد . کلام اردو رسائل میں شائع ہوتا رہا ہے.
نمو نۂ کلام :
راہ تسلیم و رضا میں یہ ہوا حا صل مجھے
اپنے دل پر مل گئ اب قدرت کامل مجھے

مطمئن راہ محبّت میں ہوں اس امّید پر
کھینچ لیگی اپنی جانب خود مری منزل مجھے
۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰

۳۴ . سوگ
منشی مہیش پرساد . نارہ ضلع الہ آباد کے سرکاری اسکول میں مدرّس تھے. نوح ناروی کے شاگرد تھے.
نمو نۂ کلام :
تو دیکھ اپنے حسن کو عا شق کی آنکھ سے
تیری نظر میں کیا ہے ہماری نظر میں کیا

بڑھ گیا کچھ اور بھی سودا بیاباں دیکھ کر
تلوے کھجلانے لگے خار مغیلاں دیکھ کر
…………………………

………………………………………..
اس مضمون کی تیّاری میں درج ذیل کتابوں سے مدد لی گئ ہے:
۱ . خمخانۂ جاوید جلد اوّل . مولّفۂ لالہ سری رام  ایم اے
۲. خمخانۂ جاوید جلد دوم .۱۹۱۱ راۓ گلاب سنگھ پریس، لاہور. مولّفۂ لالہ سری رام
۳. خمخانۂ جاوید جلد پنجم. ۱۹۴۰ مولّفۂ  لالہ سری رام
۴. شوکت قیصری . ۱۳۰۶ھ
تذ کرۂ ہندوشعراء ، موسوم بہ بہار سخن ۱۹۳۲. در مطبع ایل بی سیتاپور . مولّفۂ شیام سندر برق، ایڈو کیٹ سیتاپور
۵ . چراغ محفل فصاحت . ۱۹۴۱ مرتّبۂ پنڈت رادھے ناتھ کول گلشن. مطبو عۂ انڈین پریس لمیٹڈ، الہ آباد.

از
رضیہ کاظمی
نیو جرسی، امریکہ
۵/ اگست ۲۰۱۳

****************************************************************

Hamdoon Usmani

Hamdoon Usmani taarufHamdoon Usmani picHamdoon Usmani book

************************************************************’

NaisaN Allahabadi

میر علی عبّاد نیساں

میر علی عبّاد صاحب نیساں والد بزرگوار جناب شعلہ صاحب کےشاعری میں پہلے استاد تھے۔ والد صاحب کی عمر اپنے استاد کے انتقال کے وقت  سولہ سال کی تھی۔ وہ ہمیشہ اپنے استاد کا ذکر بہت عزّت کے ساتھ کرتے تھے۔
نیساں صاحب کاتعلّق ضلع الہ آباد کے موضع کہرہ کے ایک معزّز سید خاندان سے تھا۔ان کے والد  جناب سجّاد حسین صاحب نے اپنے گاؤں میں ایک شاندار مسجد اور کوٹھی تعمیر کروائی تھی جو انکے ورثاء کے پاکستان منتقلی کے سبب خستہ حالت میں پڑی ہوئی ہیں ۔ ہوسکتا ہے ابتک کوٹھی پر کسی نہ کسی کا قبضہ بھی ہوچکا ہو۔
ان کے پیدائش کی صحیح نہیں معلوم ہوسکی۔ کہتے ہیں ۱۹۱۷ میں اپنے انتقال کے وقت ان کی عمر نوّے سال کی تھی اس سے ان کے سال پیدائش کا تعیّن کیا جاسکتا ہے۔ تعلیم کہاں اور کتنی حاصل کی اس بارے میں معلومات نہیں حاصل ہوسکیں۔ ویسے پہلے زمانہ میں باقاعدہ اسکولی تعلیم کے بجائے گھر پر ہی تعلیم کا بندوبست کیا جاتا تھا۔ انکے کلام کے تجزیہ سے اندازہ ہوتا ہے کہ اردو کے علاوہ انھیں عربی اور فارسی زبانوں پر اچّھا عبور حاصل تھا۔ تعلیم کی تکمیل کے بعد  پہلے نائب تحصیلدار اور پھر تحصیلدار کے عہدہ پر فائز ہوئے۔ کارگزاریوں کے سلسلہ میں اوّلاً انھیں خاں صاحب پھر خاں بہادرکا خطاب گورنمنٹ انگلشیہ کی جانب سے عطا ہوا تھا۔
نیساں صاحب بہت ہی منکسرمزاج،خوش اخلاق اور متواضع انسان تھے۔ بسلسلۂ ملازمت جہاں رہے پردیس میں بھی اپنے دستر خوان پر بغیرمہمان کھانا نوش نہیں فرماتے تھے۔ نیساں صاحب نے دو شادیاں فرمائی تھیں۔ پہلی بیوی سے صرف ایک بیٹی تھی۔ انکی اولادیں پاکستان منتقل ہوگئیں۔ دوسری شادی سے جو کافی کبر سنی میں  فرمائی تھی دوبیٹے اور ایک بیٹی تولّد ہوئے تھے ۔ان کی اولادوں میں سے بھی اب ہندوستان میں کوئی مقیم نہیں رہا۔
عمر کے آخری حصّہ میں جب صحت زیادہ خراب رہنے لگی تو گاؤں چھڑ کر مستقل طور پر الہ آباد آگئے تھے۷اپریل ۱۹۱۷ کو بوقت نماز فجر انتقال فرمایا۔ان کے سوگ میں شہر کے تمام بازار پورے دن بند رہے ۔ چار بجے شان شہر کی کربلا میں تدفین عمل میں آئی۔ والد محترم نےدرج ذیل قطع تاریخ لکھا:
حضرت نیساں علی عبّاد ہائے
سیّد عالی نسب جاتا رہا
تھا رئیس ابن رئیس ابن رئیس
خاں بہادر ذی لقب جاتا رہا
کلک شعلہ قطعۂ تاریخ لکھ
شاعری کا لطف اب جاتا رہا
۱۳۳۵ھ
مطابق ۷اپریل ۱۹۱۷
مہدی حسین ناصری لکھنوی نے بھی ایک طویل قطعہ تاریخ لکھاجسکا آخری بند پیش ہے
بجھ گئی افسوس شمع ناسخ و رشک منیر
مٹ گیا وہ خانداں جسکی نہیں ممکن نظیر
یوں تو روئے گا الہ آباد کا برنا وپیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شعر کا ماتم کرینگے ہاں مگر ہم اور شہیر
ناصری دل خونچکاں وسال فوتش بر زباں
آں علی عبّاد نیساں خاں بہا در داد جاں۔۔۔۔۔۔
۱۳۳۵ ھ
نیساں صاحب کو شاعری کا شوق اوائل عمر ہی سے تھا۔سن تمیز کو پہنچنے پر منشی منیر کی شاگردی اختیارکی اور رفتہ رفتہ ان کے ارشد تلامذہ میں شمار کئے جانے لگے۔دیوان منیر میں ایسے کافی اشعار ہیں جن میں ان کی تعریف و توصیف بہت محبّت سے کی گئی ہے۔ نہایت پر گو اور صاحب کمال تھے۔  غزل،قصیدہ،مرثیہ،مثنوی اور رباعی سبھی اصناف شاعری میں دستگاہ رکھتے تھے۔ تشبیہ واستعارے کے استعمال پر عبور حاصل تھا۔ خود مشاعروں میں کم شریک ہوتے تھے ۔اگر کسی طرحی مشاعرے  میں اپنا کلام خود نہیں پڑھتے تھے بلکہ اپنے کسی عزیز شاگرد سے پڑھواتے تھے۔ اس قدر زودگو تھے کہ ہر مشاعرہ کے لئے تقریباًپانچ چھ سو غزلیں کہہ لیا کرتے تھےجنھیں اکثر دوسروں بانٹ دیا کرتے تھے۔ایک بہت بڑی تعداد شاگردوں کی رکھتے تھے جن میں واقعی کچھ کا شمار اچّھے شعراء میں تھا۔اگر موقع ملا تو اس سلسلہ میں شاید میں کچھ اور شعراء کے حالات زندگی اور کمالات شاعری پر روشنی ڈال سکوں۔
نیساں صاحب کے کچھ اشعارملاحظہ فرمائیں۔
یہ تو سچ ہے کہ مری آہ میں تاثیر نہیں
دونوں ہاتھوں سےجگرکس نےسنبھالا اپنا
چھپ کے آئینۂ دل توڑ نہ اے پردہ نشیں
ایک تو رہنے دے منھ دیکھنے والا اپنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئی خدا کی یاد دم واپسیں تو کیا
آنکھیں کلیں تو وقت نمازسحرنہ تھا
برسوں بتوں کےعشق میں تقدیرسےلڑا
بندہ ادھر رہا کہ خدا بھی جدھر نہ تھا
بھڑکا دیا ہوائے تمنّائے وصل نے
اتنا بلند شعلۂ داغ جگر نہ تھا۔۔۔۔۔۔۔
کعبہ میں شمع،دل میں چمک،دیرمیں چراغ
نور جمال یار کہاں جلوہ گر نہ تھا۔۔

اپنےوالد کےاستاد کی تاریخ وفات پرخراج عقیدت]
[
از
رضیہ کاظمی
نیوجرسی،امریکہ
۱۷اپریل
۲۰۱۳

*******************************************************

Saiyed Jafar Reza

 

Saiyed Jafar Reza Saiyed Jafar Reza is the author of The Essence of Islam

*****************************************************************************************************

Bismil Allahabadi

Nooh and others

************************************************************

About these ads

Rate this:
5 Votes

Related
Urdu poets and writers of Shahjahanpur by Muslim Saleem
In “Urdu poets and writers of Shahjahanpur”
Urdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem
With 4 comments
Urdu poets and writers of UP by Muslim Saleem
In “Urdu poets and writers of UP by Muslim Saleem”

About Muslim Saleem
Muslim Saleem (born 1950) is a great Urdu poet, writer and journalist and creator of massive directories of Urdu poets and writers on different blogs. These directories include 1. Urdu poets and writers of India part-1 2. . Urdu poets and writers of India part-II 3. Urdu poets and writers of World part-I 4. Urdu poets and writers of World part-II, 5. Urdu poets and writers of Madhya Pradesh, 6. Urdu poets and writers of Allahabad, 7. Urdu poets and writers of Shajahanpur, 8. Urdu poets and writers of Jammu-Kashmir and Kashmiri Origin, 9. Urdu poets and writers of Hyderabad, 10. Urdu poets and writers of Augrangabad, 11. Urdu poets and writers of Maharashtra 12. Urdu poets and writers of Tamil Nadu, 13, Urdu poets and writers of Karnataka 14. Urdu poets and writers of Gujarat, 15. Urdu poets and writers of Uttar Pradesh, 16. Urdu poets and writers of Canada, 17. Urdu poets and writers of Burhanpur, 18. Urdu poets and writers of West Bengal 19. Female Urdu poets and writers, 20. Hindu Naatgo Shuara etc. These directories can be seen on :- 1. www.khojkhabarnews.com 2, www.muslimsaleem.wordpress.com 3. www.urdunewsblog.wordpress.com, 4. www.khojkhabarnews.wordpress.com. 5. www.poetswritersofurdu.blogspot.in 6 www.muslimsaleem.blogspot.in 7. www.saleemwahid.blogspot.in (Life) Muslim Saleem was born in 1950 at Shahabad, Hardoi, Uttar Pradesh in India, brought up in Aligarh, and educated at Aligarh Muslim University. He is the son of the well-known Urdu poet Saleem Wahid Saleem. He has lived in Bhopal, India since 1979. (Education): Muslim Saleem studied right from class 1 to BA honours in AMU schools and University. He completed his primary education from AMU Primary School, Qazi Para Aligarh (Now converted into a girls school of AMU). He passed high school exam from AMU City School, Aligarh and B.A. Hons (Political Science) from Aligarh Muslim University Aligarh. Later, Muslim Saleem did M.A. in Arabic from Allahabad University during his stay in Allahabad. (Career) Muslim Saleem began his career as a journalist in the Urdu-language newspaper Aftab-e-Jadeed, Bhopal. He is multilingual journalist having worked on top posts with Dainik Bhaskar (Hindi), Central Chronicle (English), National Mail (English), News Express (English) and most recently as the chief copy editor of the Hindustan Times in Bhopal. At present, Muslim Saleem is English news advisor to Directorate of Public Relations, Government of Madhya Pradesh. (as on December 1, 2012). (Works and awards) Muslim Saleem has been appointed as Patron of Indo-Kuwait Friendship Society. He is the author of Aamad Aamad, a compilation of his poetry published by Madhya Pradesh Urdu Academi. Several of his couplets are well known in the Urdu language. He won the Yaad-e-Basit Tarhi Mushaira, a poetry competition, in 1982. In 1971, Muslim Saleem was awarded by Ismat Chughtai for his Afsana “Nangi Sadak Par” at AMU Aligarh. His ghazals and short stories have been published in Urdu-language publications Shair, Ahang, Asri, Adab, Agai, Naya Daur, Sada-e-Urdu, Nadeem and other periodicals and magazines. His work in service of the Urdu language was recognized in a special 2011 edition of the periodical Abadi Kiran, devoted to his work. Evenings in his honour have been organised in a number of cities. Muslim Saleem is currently compiling a massive database of poets and writers of the Urdu language, both historic and currently active. (Translation of Muslim Saleem’s work in English): Great scholar Dr. Shehzad Rizvi based in Washington has translated Muslim Saleem’s ghazal in English even though they have never met. Dr. Rizvi saw Muslim Saleem’s ghazals on websites and was so moved that he decided to translate them. (Praise by poets and writers) Great poet and scholar of Urdu and Persian Dr. Ahmad Ali Barqi Azmi has also written a number of poetic tributes to Muslim Saleem. Dr. Azmi and Muslim Saleem are yet to meet face to face. Beside this, great short-story writer and critic Mehdi Jafar (Allahabad, Bashir Badr (Bhopal), Jafar Askari (Lucknow), Prof. Noorul Husnain (Aurangabad), Kazim Jaffrey (Lahore) and a host of others have written in-depth articles defining Muslim Saleem’s poetry. (Muslim Saleem on other websites) Muslim Saleem’s life and works have been mentioned on Wikipedia, www.urduadab4u.blogspot.in, www.urduyouthforum.org and several other website. In fact, www.urduyouthforum.org has given credit to Muslim Saleem for lifting a number of pictures and entries from Muslim Saleem’s websites and blogs. (Address): Muslim Saleem, 280 Khanugaon, VIP Road, Bhopal-462001 Mobiles: 0 9009217456 0 9893611323 Email: muslimsaleem@rediffmail.com saleemmuslim@yahoo.com Best couplets: Zindagi ki tarah bikhar jaayen…… kyun ham aise jiyen ki mar jaayen kar di meeras waarison ke sipurd…. zindagi kis ke naam mar jaayen rooh ke karb ka kuchh mudaawa no tha doctor neend ki goiyan likh gaya wo dekhne mein ab bhi tanawar darakht hai haalanke waqt khod chuka hai jaden tamam My Facebook url is http://en-gb.facebook.com/pages/Muslim-Saleem/176636315722664#!/pages/Muslim-Saleem/176636315722664?sk=info Other blogs http://urdupoetswriters.blogspot.com/ http://muslimspoetry.blogspot.com/ http://abdulahadfarhan.blogspot.com/ http://ataullahfaizan.blogspot.com/ http://hamaramp.blogspot.com/ http://madhyanews.blogspot.com/ http://cimirror.blogspot.com/
View all posts by Muslim Saleem →
This entry was posted in Urdu poets and writers of Allahabad. Bookmark the permalink.
← Muslim Saleem – poetic tribute by Ahmad Ali Barqi Azmi – on Amad AmadYAUM-E-MADAR (MOTHERS DAY) BY AHMAD ALI BARQI AZMI →
21 Responses to Urdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem
Aligarh News says:
December 12, 2011 at 1:30 pm
Hello there, I discovered your blog by means of Google even as looking for a similar subject, your site came up, it appears good. I have added to favourites|added to my bookmarks.
Reply
lalitjoshiLalit Joshi says:
December 23, 2011 at 1:07 pm
Muslimsaleem bhai your blog is a mine of information for those who would like to work on the literary history of Allahabad (often misunderstood as the literary journey of Hindi). Please embellish your blog with more illustrations/instances from the works of the writers mentioned by you. A commendable effort indeed.
Lalit Joshi
Professor of History
University of Allahabad
Reply
muslimsaleem says:
December 23, 2011 at 2:25 pm
Dear Joshi Sb,
It is very kind of you to have complimented in such a way. In fact, I am doing this all alone. Even the writers and poets covered in my directory have not cooperated in sending their resumes and pictures. Despite all these, I am continuing my efforts. I have also launched the following directories:
Urdu poets and writers of India

Urdu poets and writers of world

Urdu poets and writers of West Bengal

Urdu poets and writers of Aurangabad

Urdu poets and writers of Canada

Urdu poets and writers of Shajahanpur

Hope you will enjoy by browsing these directories.

With best wishes

Muslim Saleem
Reply
lalitjoshilalit joshi says:
December 27, 2011 at 12:12 pm
Muslim saleem
Ap ko is shandaar kaam ke liye dobara mobarakbaad. Apse guftagu chalti rahegi

Lalit Joshi
Muslim Salwwm says:
December 27, 2011 at 1:30 pm
Thanks again
Muslim Saleem
Reply
zest70pk says:
June 26, 2012 at 10:25 am
بہت خوب جناب والا

الہ آباد کے مشاہیر ادب میں جناب ابن صفی، عباس حسینی اور شکیل جمالی کے نام دیکھ کر طبیعت باغ باغ ہوئی۔ خاکسار ابن صفی پر ایک محقق کی حیثیت سے جانا جاتا ہے۔ خاکسار کا ابن صفی پر مضمون، خبرنامہ شب خون کے تازہ شمارے میں شمس الرحمان فاروقی صاحب نے شائع کیا ہے۔

اکرم الہ آبادی کا ذکر پڑھ کر بھی خوشی ہوئی، 21 اکتوبر 1963
کو لکھے گئے اپنے معرکتہ الارا ناول ڈیڑھ متوالے میں ابن صفی نے اکرم صاحب کا ذکر کیا تھا۔

آپ نے اکرم الہ آبادی کا سن وفات درج نہیں کی۔ یہ اتفاق سے ان کے فیس بک والے صفحے پر بھی نہیں ملتی۔ گزشتہ دنوں ابن صفی پر اپنی کتاب لکھنے کے دوران میں نے اکرم الہ آبادی صاحب کی صاحبزادی سے رابطہ کیا تھا۔ اکرم صاحب کا انتقال 1990 میں وہاہ تھا۔

ایک عرض یہ بھی ہے کہ تذکرہ مشاہیر الہ آباد میں پروفیسر مجاور حسین رضوی المعروف ابن سعید کا نام نہیں ہے۔ پروفیسر صاحب، ابن صفی کے بے تکلف دوستوں میں سے ہیں اور ماشاء حیات ہیں۔ خاکسار کا ان سے رابطہ رہتا ہے۔

آخر میں ایک گزارش۔ ملا رموزی کی جائے وفات کی تلاش کراچی کے ایک نامور محقق کو ہے۔ براہ کرم اس بارے میں کچھ تفصیل مل جائے تو ممنون رہوں گا۔ ہمارا خیال ہی ہے کہ وہ بھوپال میں مدفون ہیں۔

خیر اندیش
راشد اشرف
کراچی سے
Reply
muslimsaleem says:
June 26, 2012 at 3:11 pm
Dear Rashid Ashraf Sb,
You are indeed doing a Yeoman’s service for Urdu literature. Hats off to you. I am also doing my bit. I have developed directories of poets and writers of various cities and countries all alone and with very limited resources. Please send me Ibne Saeed’s details. Inshallah, I will include it in the directory of Allahabad poets. I have already mentioned date and year of Mulla Ramuzi’s death and that he was laid to rest at Bhopal. This can be confirmed by clicking following link.
http://khojkhabarnews.com/?p=350

Best wishes

Muslim Saleem
Reply
zest70pk says:
June 27, 2012 at 10:10 am
جناب مسلم سلیم صاحب!
جزاک اللہ جناب والا، سلامت رہیئے

آپ کی بدولت ایک الجھن رفع ہوئی اور بارے ملا رموزی، ایک ابہام جو یہاں کراچی کے چند اہل علم حضرات میں پایا جاتا تھا، دور ہوا۔

پروفیسر مجاور حسین رضوی کے بارے میں تفصیل جلد ارسال کرتا ہوں۔ ان کی سن 50 کی دہائی کی تصویر تو آپ نے یہاں اس بلاگ ہپر شامل کی ہوئی ہے، اس کے علاوہ ایک حالیہ تصویر بھی ارسال کروں گا جسے ان کے صاحبزادے نے فرزند ابن صفی کو بھیجا تھا اور ان کے ذریعے ہمارے پاس پہنچی تھی۔

آپ کی مرتب کردہ ڈائرکٹری دیکھنے کے بعد ہی آپ سے رابطہ کیا تھا۔ میری نااہلی تو دیکھیے کہ اس کو بغور دیکھنے کے باوجود بھی ملا رموزی کے احوال کو دیکھنے میں چوک ہوئی۔

آپ نے لکھا ہے کہ آپ ڈائرکٹری مرتب کرنے کا یہ کام اپنے محدود وسائل کے باوجود سرانجام دے رہے ہیں۔ میری نظر میں یہ سودا جس کے سر میں سما جائے وہ خوش نصیب اور اس سے استفادہ کرنے والے خوش قسمت ترین کہلاتے ہیں۔ دیوانوں کو بخشش کا ایک گداز ہمیشہ ملا کرتا ہے۔ ایسے ہی ایک دوانگی میں یہ خاکسار اردو خودنوشتوں کے تعلق سے مبتلا ہے۔ لنکس یہاں اس لیے درج کررہا ہوں کہ خاکسار کی اس ویب سائٹ کے ہیں جو خالصتا غیر تجارتی ہے لہذا لنکس کو درج کرنے میں کسی ہچکچاہٹ کا سامنا نہیں ہوتا، آپ کے اس بلاگ کو یقیننا ہندوستان کے کئی اہل علم بھی دیکھتے ہوں گے:

http://www.wadi-e-urdu.com/urdu-autobiographies-part-1/
http://www.wadi-e-urdu.com/urdu-autobiographies-part-2/

اردو خودنوشت سوانح عمریوں کا موضوع ایک سدا بہار موضوع ہے۔ درج بالا لنکس پر لگ بھگ 700 سے زائد کتابوں کے سراوراق بمعہ نام مصنف، ناشر و سن اشاعت محفوظ ہیں اور ان میں مستقل بنیادوں پر اضافہ ہوتا رہتا ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ ان کتابوں میں ہندوستانی خودنوشتیں بھی شامل ہیں۔ اس سلسلے میں کئی ہندوستانی احباب نے مدد فرمائی ہے۔ بالخصوص علی گڑھ کے پروفیسر اطہر صدیقی صاحب اور الہ آباد کے چودھری ابن النصیر صاحب نے کئی اہم خودنوشتٰیں خاکسار کو کراچی بھیجیں۔ ادھر دکن سے اعجاز عبید صاحب اور پروفیسر رحمت اللہ یوسف زئی صاحب کی عنایتیں اس حقیر پر رہیں۔ غرض یہ کہ کس کس کا ذکر کروں۔ اردو بک ریویو کے عارف اقبال (جناب ابن صفی کے ایک سچے پرستار) اور جامعہ ملیہ دہلی کے ڈاکٹر خالد جاوید کے نام رہے جاتے ہیں۔

خیر اندیش
راشد اشرف
کراچی سے
Reply
Pingback: Urdu poets and writers of Allahabad | Muslimsaleem’s Blog
Hamza Shah says:
July 11, 2012 at 5:06 am
Sheikh-ul- Mashaiq Hazrat Syed Shah Mohammad Khalilullah Junaidi was among those whose efforts during the creation of Pakistan cannot be over looked. He belonged to the noble family of Ghazi Pur in UP- India and Daira Hazrat Shah Mohammad Ajmal of Allahabad – India . With his knowledge, Khalilullah Junaidi continued to work even after partition in the fields of Urdu literature, English language and religion. In 2006 before leaving for Umrah, a session of mehfil-e-naat was arranged in his honor , in which Sabi- Rehmani dedicated him a special naat ? Dear Land of Medina, do have some space for me.? He was a religious poet and wrote many great Naats which became very famous among the masses.
Hazrat Shah Khalilullah then left for Umrah during the Holy Month of Ramadan in 2006, where on the 21st of Ramadan he passed away in Medina. He was burried in Jannat-ul-Baqi, right below the grave of Hazrat Usman Ghani ( R.A) and Hazrat Halema Sadiya ( R.A)
Reply
muslimsaleem says:
July 11, 2012 at 10:10 am
Dear Hamza Shah
thanks for information. If you have knowledge about any other poet and writer of Allahabad, kindly provide brief details.
Best wishes
Muslim Saleem
Reply
Hamza Shah says:
July 11, 2012 at 4:11 pm
BHAI ASSALAM O ALLIKUM !
Mazrat ke saath arz karna chahta hoon k aap ke blog page per SHAH KHALIL ULLAH JUNAIDI ki main heading mai TAKHALLUS ki spelling me ghalti hoi hai . baraey mehrbani aap tasheeh ferma kar shukrya ka moqa den.
Niazmand
HAMZA SHAH
shah waliullah says:
July 11, 2012 at 1:28 pm
حضرت سید شاہ محمد اکمل اجملی رحمتہ اللہ علیہ
آپ برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے ہیں

برصغیر کی تاریخ میں دائرہ شاہ اجمل الہ آباد وہ اہم ادبی مقام ہے جہاں ریاضت وحق شناسی تعلیم کے ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے اور اس کا ذکر تمام تذکرہ نگاروں نے اپنی کتاب میں کیا ہے،الہ آباد کی تاریخ کا اگر مختلف ادوار پر مبنی مطالعہ کیا جائے تو محض یہ ایک داستان نہیں ہے بلکہ اپنے عہد کی تہذیبی ثقافتی، سیاسی، اور تاریخی اقدار کی آئینہ دار ہے عہد قدیم سے دور جدید کا عکس ہے یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ آج برصغیر میں دینی ،علمی، وادبی رونق باقی رہ گئی ہے ان ہی پرانے چراغوں کا صدقہ ہے، اور الہ آباد کا خطہ ان کی روشنی کا امین ہے، الہ آباد کے مشائخ عظام نے علم و ادب کی جس طرح خدمت کی ہے اس کا اندازہ میرے خال معظم سید شاہ محمد اکمل اجملی نائب سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد رحمتہ اللہ علیہ کے رشحات قلم کا ثمر ہے،حضرت قبلہ سید شاہ محمد اکمل اجملی برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے تھے ، دائرہ شاہ اجمل کی ادبی خدمات پر بڑی گہری نگاہ تھی ،الہ آباد یونیورسٹی سے فارسی میں ایم اے کرنے کے بعد الہ آباد کے مشاہیر کے ادبی کارناموں پر تحقیق کرتے رہے خال معظم مرحوم کے تصانیف میں تذکرة الاولیا،تذکرةالا صفیاء،تذکرة سراج منیر،حیات افضل النور( دنیائے اسلام کی اہم شخصیات کی حیات وکارنامہ) تبصروں کی دنیاکے علاوہ منظوم تصانیف میں مرج البحرین،( قصائد ونظموں کا مجموعہ) العصر غزلوں اور نطموں کے مجموعہ کے علاوہ حضرت رسالت مآبﷺ کی حیات مقدسہ پر مبنی 571 بندوں پر مشتعمل مسدس کے انداز میں قصیدہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جبکہ آخر الذکر الہ آباد کے جدید وقدیم شعراء کی نعتون کا مجموعہ ہے،حضرت میر سید محمد کالپوی رحمتہ اللہ علیہ کی حیات اور نقش دوام بھی اعلی تخلیقات میں شامل ہیں ، حضرت قبلہ اکمل میان رحمتہ اللہ علیہ کی زندگی کا بیشتر وقت دائرہ شاہ اجمل کے بزرگوں کے ادبی خدمات کے جائزہ میں گزرا اور یہ تصنیف بھی حضرت اکمل میاں رحمتہ اللہ علیہ کی تحقیقی کوششوں اور کاوشوں کا نادر نمونہ ہے جس میں دائرہ شاہ اجمل کے مشاہیر کی فارسی و اردو ادب کی خدمات کا جائزہ لیا جارہا ہے ، کتاب پاکستان میں تکمیل کے آخری مراحل میں ہے، میری دعا ہے کہ پروردگار عالم میرے خال معظم کو سرکار دوعالم کی شفاعت نصیب فرمائے آمین بجاہ سید المرسلینﷺ
نیاز کیش راقم
شاہ ولی اللہ
Reply
shah,saad ullah (uk) says:
July 11, 2012 at 1:53 pm
حضرت سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رحمتہ اللہ علیہ
آپ ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا

محترم سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رخمتہ اللہ علیہ کی ہے جو بیک وقت ایک شفیق والد،ہردل عزیز استاد اور روحانی شخصیت کے مالک تھے ،،، آپ بھارت کے صوبہ اتر پردیش ( یوپی) کے شہرغازی پور کے حسنی حسینی سادات گھرانے میں 1932میں پیدا ہوئے، خاندانی اعتبار سے آپ کا شمار غازی پور کے امراء میں ہوتا تھا ،اس خاندان کے بیشتر افراد ہندوستان میں اور قیام پاکستان کے بعد ملک کے اعلی ترین عہدوں پر فائز رہے ،اور آج بھی مختلف شعبوں میں کارہائے نمایا ں انجام دئے رہے ہیں شاہ خلیل اللہ رحمتہ اللہ علیہ کے والد سید شاہ محمد حفیظ اللہ انڈین یولیس میں ایس پی کے عہدہ پر تعینات تھے شاہ صاحب قبلہ کا شمار اپنے بہن بھائیوں میں سب سے آخری تھا، پیدائش سے چند ماہ قبل ہی والد بزرگوار کا سایہ سر سے اٹھ چکا تھا اور پیدائش کے ایک سال بعد والدہ ماجدہ بھی رحلت فرما گئیں آپ کی پرورش کی ذمہ داری بڑی بہنوں اور خاندان کے دیگر بزرگوں کے حصہ میں آئی، ابتدائی تعلیم غازی پور کی ایک درسگا ہ سے حاصل کی جبکہ اعلیٰ تعلیم کے لیے کلکتہ اور الہ آباد کا سفر اختیار کیا، قیام پاکستان سے قبل الہ آباد میں قیام کے دوران ترقی پسند تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ، ترقی پسند تحریک کے ساتھیوں میں ممتاز محقق و شاعر ڈاکٹر اجمل اجملی ، تیغ الہ آباد ی جوپاکستان آمد کے بعد مصطفے زیدی کہلائے اور اردو جاسوسی ناول نگاری کے موجد اسرار احمد جوابن صفی ، اسلام چنگیزی و دیگر شامل تھے جبکہ دیگر ساتھیوں میں نعتیہ شاعرراز الہ آبادی ،نافع رضوی و دیگر شامل تھے، ناموس رسالت کی تحریک میں بھی آپ پیش پیش رہے اور اس دوران جیل کی صعوبتیں بھی برداشت کیں آپ شاعری سے بھی شغف رکھتے تھے اور ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا اسی دوران آپ درس وتدریس اور صحافت کے شعبہ سے بھی وابستہ رہے ،، ملازمت کے حصول میں میں بمبئی چلے گئے جہاں کچھ عرصے روزنامہ انقلاب سے وابستہ رہے ، ، شاہ صاحب قبلہ کے خاندان کے بیشتر افراد قیام پاکستان کے بعد کراچی اور لاہور منتقل ہوچکے تھے اور اعلی سرکاری عہدوں پر فائز تھے آپ کے بڑے ماموں شاہ نذیر عالم جو بھارت کے صوبے یوپی میں ڈی آئی جی پولیس کے عہدہ پر تعینات تھے پاکستان کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کی درخواست پر بھارت سے پاکستان چلے آئے ، اور آئی جی پولیس پاکستان کے عہدے پر فائز رہتے ہوئے محکمہ پولیس کی تنظیم نو کی ، خاندان کے بزرگوں کے حکم پر شاہ صاحب قبلہ بھی انیس سو انسٹھ میں پاکستان چلے آئے۔ خاندان کے افراد چونکہ کراچی کے علاقے ناظم آباد نمبر دومیں قیام پزیر تھے لہذ ا آپ نے بھی ناظم آباد کو ترجیح دی اور درس و تدریس کے اس سلسلے کو جس کاآغاز الہ آباد سے کیا تھا اور دوران ہجرت موقوف ہوگیاتھا ایک بار پھر کراچی پہنچنے پرجاری وساری ہوگیا، ناظم آباد کے علاقے گولیمار کے پسماندہ محلہ علی بستی میں چند دوستوں کے ساتھ مل کر ضیاء العلوم کے نام سے ایک اسکول کی بنیاد رکھی ، تاہم بعدازاں سرکاری ملازمت اختیار کرلی اور گورنمنٹ
بوائزسیکنڈری اسکول نمبر2پی ای سی ایچ ایس سوسائٹی بلاک 6 سے وابستہ ہوکر رہ گئے اور اسی اسکول سے ریٹائرمنٹ حاصل کی،1980کی دہائی میں آپ ایک بار پھر بھارت تشریف لے گئے جہان اپنے آبائی شہر غازی پور میں جد امجد قطب الااقطاب سید شاہ جنید غازی پوری رضی اللہ تعالی عنہ اور دائرہ شاہ اجمل الہ آباد میں حضرت سید شاہ محمد افضل الہ آبادی شاہ اجمل رحمتہ اللہ علیہ سمیت دیگر بزرگان دین کے مزارات پر حاضری دی ۔ الہ آباد میں قیام کے دوران حضرت موصوف میرے جد مادری حضرت ولی کامل واکمل قطب الصمدمولانا شاہ سید احمد اجملی جنیدی قادری رحمتہ اللہ علیہ سابق سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد یوپی انڈیا کے دست حق پرسلسلہ قادریہ جنیدیہ میں بیعت ہوئے حضرت نے خرقہ وخلافت سے سرفراز کیا اورچاروں سلاسل میں بیعت کی اجازت عطا ء فرمائی بھارت سے واپسی کے بعد پاکستان میں باقاعدہ سلسلہ جنیدیہ قادریہ واجملیہ کی ترویج کا کام شروع کیا ۔حضرت شاہ صاحب قبلہ 2006 میں زیارت حرمین شریفین کی غرض سے سعودی عرب تشریف لے گئے تھے جہاں 21رمضان المبارک کو مدینہ منورہ میں بعد نماز تراویح وصال فرما ء گئے حضرت شاہ صا حب کو جنت البقیع کے پرانے حصہ میں حضرت حلیمہ سعدیہ اور حضرت عثمان غنی رضی اللہ تعالی عنہ کی قبروں کے درمیان سپردخاک کیا گیا۔
شاہ صاحب کے چند اشعار

تلخ آب سہی، زہر آب سہی، پینے دے مجھے ایک جام سہی
ہنس بول کے جی لوں چند لمحے یہ زیست برائے نام سہی
ڈھلتی ہے جو شب تو ڈھلنے دو اسکا بھی مداوا ہوتا ہے
چھٹ جائے گی تاریکی یہ صبح خیالِ خام سہی
یہ کم ہے کہ تیرے غم ہی کو اشکوں سے سنوارا کرتا ہوں
تیرا یہ ندیم# ہے نغمہ سرا ،برباد سہی بدنام سہی
شاعری میں ندیم #تخلص کا استعمال کیا کرتے تھے۔ بھارت میں قیام کے دوران اٰیک ناول ”چنوتی ‘ کے نام سے‘ شائع ہوا ہے ۔
Reply
shah,saad ullah (uk) says:
July 11, 2012 at 2:05 pm
حضرت سید شاہ محمد اکمل اجملی رحمتہ اللہ علیہ

آپ کا شماربرصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعروں میں ہوتا ہے

برصغیر کی تاریخ میں دائرہ شاہ اجمل الہ آباد وہ اہم ادبی مقام ہے جہاں ریاضت وحق شناسی تعلیم کے ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے اور اس کا ذکر تمام تذکرہ نگاروں نے اپنی کتاب میں کیا ہے،الہ آباد کی تاریخ کا اگر مختلف ادوار پر مبنی مطالعہ کیا جائے تو محض یہ ایک داستان نہیں ہے بلکہ اپنے عہد کی تہذیبی ثقافتی، سیاسی، اور تاریخی اقدار کی آئینہ دار ہے عہد قدیم سے دور جدید کا عکس ہے یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ آج برصغیر میں دینی ،علمی، وادبی رونق باقی رہ گئی ہے ان ہی پرانے چراغوں کا صدقہ ہے، اور الہ آباد کا خطہ ان کی روشنی کا امین ہے، الہ آباد کے مشائخ عظام نے علم و ادب کی جس طرح خدمت کی ہے اس کا اندازہ میرے خال معظم سید شاہ محمد اکمل اجملی نائب سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد رحمتہ اللہ علیہ کے رشحات قلم کا ثمر ہے،حضرت قبلہ سید شاہ محمد اکمل اجملی برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے تھے ، دائرہ شاہ اجمل کی ادبی خدمات پر بڑی گہری نگاہ تھی ،الہ آباد یونیورسٹی سے فارسی میں ایم اے کرنے کے بعد الہ آباد کے مشاہیر کے ادبی کارناموں پر تحقیق کرتے رہے خال معظم مرحوم کے تصانیف میں تذکرة الاولیا،تذکرةالا صفیاء،تذکرة سراج منیر،حیات افضل النور( دنیائے اسلام کی اہم شخصیات کی حیات وکارنامہ) تبصروں کی دنیاکے علاوہ منظوم تصانیف میں مرج البحرین،( قصائد ونظموں کا مجموعہ) العصر غزلوں اور نطموں کے مجموعہ کے علاوہ حضرت رسالت مآبﷺ کی حیات مقدسہ پر مبنی 571 بندوں پر مشتعمل مسدس کے انداز میں قصیدہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جبکہ آخر الذکر الہ آباد کے جدید وقدیم شعراء کی نعتون کا مجموعہ ہے،حضرت میر سید محمد کالپوی رحمتہ اللہ علیہ کی حیات اور نقش دوام بھی اعلی تخلیقات میں شامل ہیں ، حضرت قبلہ اکمل میان رحمتہ اللہ علیہ کی زندگی کا بیشتر وقت دائرہ شاہ اجمل کے بزرگوں کے ادبی خدمات کے جائزہ میں گزرا اور یہ تصنیف بھی حضرت اکمل میاں رحمتہ اللہ علیہ کی تحقیقی کوششوں اور کاوشوں کا نادر نمونہ ہے جس میں دائرہ شاہ اجمل کے مشاہیر کی فارسی و اردو ادب کی خدمات کا جائزہ لیا جارہا ہے ، کتاب پاکستان میں تکمیل کے آخری مراحل میں ہے، میری دعا ہے کہ پروردگار عالم میرے خال معظم کو سرکار دوعالم کی شفاعت نصیب فرمائے آمین بجاہ سید المرسلینﷺ
Reply
Sahar Fatima says:
September 3, 2012 at 10:34 pm
Regarding Ibne Saeed. He lives in Allahabad and not in Karachi. Some more details about him
Dr. S.M.H. Rizvi a man of diverse caliber has penned 1057 novels in Urdu & Hindi! Under the pen name “Ibne Saeed”. His thesis was titled “Elements of National integration in Urdu Poetry” which received several awards, including the coveted one from the Urdu Academy. He is the man behind Roomani Dooniya.
Roomani Duniyan, is a romantic comedy covering the society of 1950s & 60s with a wider character base in each novel from all socio-economic strata. It may be college students, rich or poor. This series depicts pain, pleasure, struggle and limitations of that era but above board the humour has not been missed out rather it stands out.
Reply
muslimsaleem says:
September 3, 2012 at 11:38 pm
Dear Sahar Fatima, thanks for the comment. Please send some picture of Ibne Saeed to my email address
muslimsaleem@rediffmail.com

Muslim Saleem
Reply
Rashid Ashraf says:
September 9, 2012 at 7:35 am
جناب مسلم صاحب!
احب!
خاکسار کی ارسال کردہ پروفیسر مجاور حسین رضوی کی تازہ تصویر کو شامل کرنے کا شکریہ۔

آپ نے مجاور صاحب کے تحاریر کی تعداد لکھ کر بہت اچھا کیا، اس طرح یہ بات ریکارڈ پر آگئی۔ خاکسار نے کبھی دوران گفتگو ان سے اس بارے میں دریافت نہیں کیا تھا۔

راقم کی ابن صفی پر مرتب کردہ تازہ کتاب “ابن صفی-کہتی ہے تجھ کو خلق خدا غائبانہ کیا” میں مجاور صاحب کا ایک دلچسپ مضمون “ستارہ جو ڈوب گیا، روشنی جو باقی رہے گی” شامل ہے۔

مجاور صاحب الہ آباد کے ادارہ نکہت سے وابستہ رہے بلکہ یوں کہیے کہ اس کے قیام میں جو شخصیات شامل تھیں ان میں سے ایک تھے۔ بقیہ لوگوں میں عباس حسینی، ابن صفی اور شکیل جمالی تھے۔ ملک زادہ منظور احمد نے اپنی خودنوشت “رقص شرر” میں ذکر کیا ہے۔
مسلم صاحب!
ایک عاجزانہ درخواست ہے۔ عباس حسینی صاحب کے بارے میں تفصیل بالخصوص سوانحی حالات ضرور شامل کیجیے
Reply
Dr Zafar Taqvi, Bazm-e-Adab Urdu, Houston, Texas, USA says:
July 6, 2013 at 8:22 am
(Forgive me – my Urdu script is currently not working)
Allahabad meN aur bhi bahut shoara the jin ko maiN ne apne bachpan meN mushaeroN meN suna hai. Aur bhi shoara hain jin ke baare me suna hai jab maiN bahut chhota tha.

In shoara meN ……..

Justice Anand Narain Mulla
Sir Tej Bahadur Sapru
Bismil Allahabadi
Nooh Narvi
Shafique Allahabadi
Rangeen Allahabadi
Ajmal Ajmali
aur bahut se shoara

Sabhi shoara ki tafseel aapko Prof Aqeel se aasani ke sath mil sakti hai. Kuch ka tazkera Prof Aqueel ne apni kitaab me kiya hai.

Aapka

(Dr) Zafar Taqvi [Zafar Kararvi]
Reply
sajid hanfi says:
October 1, 2014 at 10:43 pm
best composition but aap allahabad ke ek aur senior urdu poet ko bhool gaye jinka naam DR. INAM HANFI hai.
Reply
Muslim Saleem says:
October 24, 2014 at 1:45 am
wa alaikum assalam. mazeed matter urdu inpage main irsal karen. INsha Allah zaroor izafa karoonga. \

Muslim Saleem
Reply

Tagged as:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *