Tragic life of Mehshar Lakhnavi

ہے ابھی گردشِ حالات سے جینا دو بھر
وقت یکساں نہیں رہتا ہے گُذر جائے گا
شاعر نے یہ شعر شاید ان لوگوں کے لیے کہا ہوگا جو اوائل عمری میں حالات کی سختی کا شکار ہوتے ہیں۔ وقت یکساں نہیں رہتا، گزر جاتا ہے، غم کے بعد خوشی، مصائب و آلام کے بعد راحت بھی ملتی ہے۔ لیکن 68 برس کی عمر میں کسی کے حالات خراب ہوجائیں تو اچھے وقت کے انتظار میں وہ حرماں نصیب بھلا کتنا جیے گا ?
یہ قصہ ہے کراچی میں مقیم سید محسن رضا نقوی المعروف محشر لکھنوی کا جن کا انٹرویو 8
جولائی 2012 کو ایک مقامی روزنامے میں شائع ہوا۔ محشر لکھنؤی غزل کے شاعر ہیں، اس کے علاوہ منقبت، نوحے اور قطہ نگاری کے فن میں بھی مہارت رکھتے ہیں۔
شورش کاشمیری کے روزنامہ چٹان میں ان کی زیر نگرانی کام کرنے والے محشر لکھنوی ان دنوں
شہر کراچی میں گردش حالات کا شکار ہو کر رات کی تاریکی میں رکشہ چلانے پر مجبور ہیں۔ 1957 میں شورش کاشمیری یہ جان کر کہ محشر کے جد امجد مولانا سید دلدار علی غفران تھے، آبدیدہ ہوگئے تھے، پھر جو بن پڑا، شورش نے ان کے لیے کیا۔ آغا شورش کاشمیری کی بات پرانی ہوئی، اب محشر ایک “شورش زدہ” شہر میں مقیم ہیں جہاں امن و امان کی درگوں صورتحال کی وجہ سے سفید پوش طبقے کی گزر اوقات روز بروز مشکل سے مشکل تر ہوتی جارہی ہے۔ محشر کے والد مولانا حکیم سید محمد یوسف علیم لکھنؤ کے کئی مدارس میں معلم رہے۔
تقسیم کے بعد محشر لکھنؤی نے کراچی میں بیرا گیری کی، ٹرینوں میں لیمن سوڈا کی بوتلیں فروخت کیں، بندر روڈ پر مونگ پھلیاں بیچتے رہے۔ ساحل سمندر پر میٹھا پانی فروخت کرتے رہے، برسوں مکانوں پر رنگ روغن کا کام بھی کرتے رہے۔ کئی دہائیں گزریں جب محشر لکھنؤی عباس ٹاؤن کراچی کے ایک شکستہ مکان میں مقیم تھے، ان کا ننھا سا بیٹا ایک موذی مرض کا شکار ہوا، جو کچھ کماتے، اس کے علاج پر اٹھ جایا کرتا تھا۔ ایک روز اس معصوم نے دم دے دیا۔  چیل کے گھونسلے میں ماس کہاں تھا، ایک دوست سے ادھار لیا اور بیٹے کی لاش کو چھاتی سے لگا کر سہراب گوٹھ میں اس زمانے میں واقع بچوں کے ایک قبرسان پہنچ گئے۔ خود قبر کھودی اور بیٹے کو سپرد خاک کیا۔ آج اس قبرستان کی جگہ ایک پیٹرول پمپ بن چکا ہے۔ محشر جب بھی وہاں سے گزرتے ہیں تو وہ ننھی سی قبر ان کے سینے میں شق ہوجاتی ہے۔ ایسا ہی ایک احوال احسان دانش نے بھی اپنی خودنوشت میں “دو لاشیں” کے باب میں بیان کیا ہے جب ان کے ایک انتہائی غریب مزدور دوست کے دونوں بچوں کا انتقال ہوگیا تھا اور وہ ان کے لاشے سائکل کے کیریئر پر باندھ کر قبرستان پہنچا تھا۔
گردش حالات کے سبب محشر لکھنؤی کا دل بھی تباہ ہے ہمت بھی پست ہے لیکن خوداری کا عالم یہ ہے کہ کسی کے آگے ہاتھ پھیلانے کے روا دار نہیں ہیں۔ محشر، فیڈرل بی ایریا میں واقع کیفے پیالہ کے سامنے ایک غریب پرور بستی میں مقیم ہیں۔ انٹرویو لینے والے صاحب کہ محمد احمد انصاری کہلاتے ہیں، راقم الحروف کے دوستوں میں سے ہیں اور محشر صاحب کی قیام گاہ سے واقف ہیں۔
محشر لکھنؤی کی اہلیہ کے دل کے تین آپریشن ہوچکےہیں، کچھ عرصہ قبل ان کے داماد سید مختار عباس کو قتل کردیا گیا تھا، بیوہ بیٹی کہ کینسر کی مریضہ ہے، پانچ بچوں کو ساتھ لیے انہی کےگھر آگئی تھی۔ اس ہوشربا مہنگائی کے زمانے میں دو کنبوں کی کفالت کا بوجھ اٹھائے محشر لکھنوی کیسے جیتے ہیں، کس طرح جیے جاتے ہیں، ان کی بسر اوقات کا احوال جان کر اہل دل یقننا دل گرفتہ ہوجائیں گے۔ لکھنؤ کے ایک معزز سادات گھرانے سے تعلق رکھنے والا خودار انسان آج شہر میں میں محض اس لیے “بھیس” بدل کر رکشہ چلانے پر مجبور پے کہ کہیں ان کے شناسا انہیں اس حال میں دیکھ کر ملول نہ ہوں۔ غم حسین میں نوحے پڑھنے والا ایک بوڑھا انسان آج اپنی تقدیر پر نوحہ کناں ہے۔ اس کی ہر شام، اب شام غریباں ہے۔
ہمیں کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا
میرے وطن عزیز کا حال ہی میں معزول قرار پانے والا، اسی لاکھ کے سوٹ پہنے والا شخص، دو روز قبل اس شان سے اپنے آبائی شہر ٹرین میں بیٹھ کر چلا تھا کہ اس کے لیے چئرمین ریلوے کا “سیلون” مخصوص کیا گیا جس میں عملی طور پر فائیو اسٹار کی سہولیات میسر ہوتی ہیں۔کسی کو پر مارنے کی اجازت نہ تھی، رستے میں کئی چھوٹے شہروں کی ٹرینیں روکی گئیں جہاں گرمی سے کئی مسافر جاں بلب ہوئے۔

خیر اندیش
راشد اشرف
کراچی

***************************************

Tagged as:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *