Aizaz Ahmad Azar passes away

آج اس خوب صورت غزل کے خالق جناب اعزاز احمد آذر اس جہان فانی سے رخصت ہو گئے
……………

تم ایسا کرنا کہ کوئی جگنو کوئی ستارہ سنبھال رکھنا
مرے اندھیروں کی فکر چھوڑو تم اپنے گھر کا خیا ل رکھنا

اُجاڑ موسم میں ریت دھرتی پہ فصل بوئی تھی چاندنی کی
اب اُس میں اُگنے لگے اندھیرے تو کیسا جی میں ملال رکھنا

دیارِ الفت میں اجنبی کو سفر ہے درپیش ظلمتوں کا
کہیں وہ راہوں میں کھو نہ جائے ذرا دریچہ اُجال رکھنا

وہ رسم و رہ ہی نہیں تو پھریہ اثاثے کس کام کے تمھارے
اُدھر سے گزرا کبھی تو لے لوں گا تم مرے خط نکال رکھنا

بچھڑنے والے نے وقتِ رخصت کچھ اس نظر سے پلٹ کے دیکھا
کہ جیسے وہ بھی یہ کہہ رہا ہو، تم اپنے گھر کا خیال رکھنا

یہ دھوپ چھاؤں کاکھیل ہے یاں خزاں بہاروں کی گھات میں ہے
نصیبِ صبح عروج ہو تو نظرمیں شامِ زوال رکھنا

کسے خبر ہے کہ کب یہ موسم اُڑا کے رکھدے گا خاک آذر
تم احتیاطاً زمیں کے سر پر فلک کی چادر ہی ڈال رکھنا

Tagged as:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *