Feroze Natique Khusro – ek nazm

 Feroze Natique Khusro

<<<ایک خوبصورت نظم – ( احباب کی نذر)>>>

” کالے دھبے اور مہاسے کیلیں
پیشانی پر لمحوں کی
بیدرد لکیریں
اپنے آپ سے خائف
گم صم
باتیں کرتے کرتے
چپ ہوجانے والی لڑکی !
راتوں کو جلدی سوجانے والی لڑکی !
اپنی بوجھل پلکوں سے
خوابوں کے دھاگے نوچ رہی ہے!
میری جاگتی آنکھوں کی دہلیز پہ بیٹھی
کیا جانے کیا سوچ رہی ہے!!

(فیروز ناطق خسرو)

kalay dahabbay aur mahasay, keelen”
peshani per lamhon ki
bedard lakeeren
apnay aap sey kha’if
gum sum
baten kartey kartey
chup hojanay wali larki
raton ko jaldi sojany wali larki
apni bojhal palkon sey
khabon k dhagay noch rahi hay
meri jagti aankhon ki dehleez pa bethi
“kia janay kia soch rahi hay!!

(Feroze Natique Khus

Tagged as:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *