Khateeb Rafathullah Rafath …. pasand ayen agar intishar kay lamhay

khateebKhateeb Rafathullah Rafath NEWYORK U.S.A.

Pasand aayen agar inteshaar ke lamhey 
katen gey khoob gham e khush ganwar ke lamhey
khuda hi jaaney khiley kab meri umeed ky phool
baney they sabr e shikan intezaar ke lamhey
shumar e waqth nahi roodbar ki rou me
baqaa e aab nahi aabshar ke lamhey 
siwaaey fun nahi fankar ki koi qeemath
hayath bantey hain us ky wiqaar ke lamhey 
khuli fizaa.n se parendey bhi lout aatey hain
zameen par bhi kattey she sawaar ke lamhey
gulon me rangath o khushbo samaye gi rafath
khazan khuzedah na hon gar bahaar ke lamhey
پسند آئیں اگر انتشار کے لمحے
کٹیں گے خوب غمِ خوش گنوار کے لمحے 
خُدا ہی جانے کِھلے کب مری اُمید کے پھول
بنے تھے صبر شکن انتظار کے لمحے
شُمارِ وقت نہیں رُود بار کی رَو میں
بقائے آب نہیں آبشار کے لمحے 
سوائے فن نہیں فنکار کی کوئی قیمت 
حیات بنتے ہیں اُس کے وقار کے لمحے 
کُھلی فضا سے پرندے بھی لوٹ آتے ہیں 
زمین پر بھی کٹے شہ سوار کے لمحے 
گُلوں میں رنگت و خوشبو سمائے گی رفعتؔ 
خزاں گُزیدہ نہ ہوں گر بہار کے لمحے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *