Khateeb Rafathullah Rafath – ghazal

khateeb-rafathullah-rafath-ghazalwoh to chup ke se muqaabil se nikal ja tey hain
apney dil me kai armaan machal jatey hain
khud hi ek phool hain phoolon se ladey hain kitna 
itni khushbo hai ke mosam hi badal jaatey hain
aas ke qatrey jo amrith ki tarah se tapkey 
zahar ban kar wo lab e dil se ubal jaatey hain
youn bhi naa kaam e muhabbath ka bharam khulta hai 
un ke tewar se iradey hi badal jaatey hain
housiley fitrath e rafath ke barabar therey
girtey hain girtey hain gir gir ke sanbahal jaatey hain

وہ تو چپکے سے مقابل سے نکل جا تے ہیں 
اپنے دل میں کئی ارمان مچل جا تے ہیں
خود ہی اک پھول ہیں پھولوں سے لدے ہیں کتنا 
اتنی خوشبو ہے کہ مو سم ہی بدل جاتے ہیں 
آس کے قطرے جو امرت کی طرح سے ٹپکے
زہر بن کر وہ لبِ دل سے اُبل جا تے ہیں
یوں بھی نا کامِ محبت کا بھرم کُھلتا ہے 
اُن کے تیور سے ارادے ہی بدل جاتے ہیں
حوصلے فطرتِ رفعتؔ کے برا بر ٹھیرے 
گرتے ہیں ، گرتے ہیں ، گر گر کے سنبھل جا تے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *