Azeem Afsana, drama and nove nigar Rasheed Anjum by Muslim saleem

عظیم افسانہ نگار، ڈرامہ نگار اور بہترین شاعر رشید انجم کی عظمتوں کا سلام: مسلم سلیمimg_20161019_175544 img_20161019_175655 img_20161019_175813 img_20161019_175925 img_20161019_180059 img_20161019_180331
رشید انجم (اصل نام) عبدالرشید خاں کی جتنی تعریف کی جائے کم ہے۔ وہ نہ صرف ایک عظیم افسانہ نگار، ڈرامہ نگار اور ناول نگار ہی نہیں بہترین شاعربھی ہیں۔ یہی نہیں آپ نے اردو صحافت کے میدان بھی زبردست جولانیاں کی ہیں۔ رشید انجم نے ۰۷۹۱ میں قلمی رسالہ ”فلم دیش“ جاری کیا۔ بعد ازاں ۴۷۹۱ میں ©©©©©©”سمجھوتہ“ اور ۶۷۹۱ میں ©©”گل مہر“ ہفتہ وار رسائل کی ادارت بھی کی۔ آپ ۳۰۰۲ سے پندرہ روزہ ”صدائے اردو©“ میں بلا اجرت مدیرِ معاون کے حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔ فی زمانہ رشید انجم مشہورِ زمانہ اور تاریخی کتب خانہ ©©”اقبال لائبریری“ کے مہتمم بھی ہیں۔
رشید انجم ۰۱فروری ۰۴۹۱ کو بھوپال میں تولد ہوئے۔ آپ کے والد کا نام میاں عبدالرحیم اور والدہ کا سیدہ شفیعہ بیگم تھا۔ بی اے (آنرس ) تک تعلیم حاصل کرنے کے بعد آپ بر سرِ روزگار ہوئے اور ۸۲ مئی ۰۶۹۱ کو بلقیس بیگم سے رشتہ¿ِ ازدواج میں منسلک ہوئے۔ اب تک رشید انجم کی ۴۱ کتب منظرِ عام پر آچکی ہیں جن میں ڈرامے نیز ایڈونچرس ناول شامل ہیں۔ اچھت شاعر بھی ہیں لیکن خاص شناخت افسانہ نگار، ڈرامہ نگار اور ناول نگار ہی کی ہے ۔ان فنون میںرشید انجم عظمتوں کی بلندیوں کا چھو لیا ہے۔ ان کے درجن سے زائد ڈرامے بھوپال و دیگر شہروں میں برپا ہوچکے ہیں۔ انھیں چھ اعزازت سے بھی نوازا گیا ہے ۔
تھقیق اور خاص کر فلمی دنیا کی تحقیق میں تو شاید ہندوستان میں ن کا کوئی ثانی نہیں ہے۔ اس کی مثال رشید انجم کی کتاب ”جہانِ فلم کی مسلم اداکارائیں “ ہیں۔ میگزین سائز میں ۸۶۲ صفحات پر مشتمل یہ کتب مفصل بیان، دقیق تحقیق اور لسانی چابک دستی کی بہترین مثال ہے۔ میں رشید انجم کی فنکارانہ عظمتوں کو سلام کرتے ہوئے یہ کہنے پر مجبور ہوں بیحد بلند قامت کے با وجود ہ حد درجہ منسکر المزاج ہیں جب کہ بھوپال کے بونے اور بزعم خود ©© ”فنکار“ ۔۔ بنا ہے شہہ کا مصاحب، پھرے ہے اتراتا ۔۔کے مصداق غرور و نخوت کی تمثال بنے ہوئے سرقے اور چبائے ہوئے لقموں کو اپنی ادبی اور شعری میراث بنائے ہوئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *