Great Urdu poet Jafar Askari;s death has caused a void: Muslim Saleem

jafar-askariJafar Askari  was born at Lucknow on June 20, 1945. (Died at Lucknow on Thursday October 20, 2016) Jafar Askari is the son of famous Urdu critic Prof. Syed Ahtesham Hussain. He spent a considerable time in Allahabad where Muslim Saleem had a chance to meet him regularly at his Khuldabad house. Later, Jafar Askari moved to and settled in LucknowHe did his PhD on “Josh Malihabadi bahaisiyat nasr nigar” from Lucknow University in 1988. He retired as lecturer from Shia Post Graduate College in 2007. Jafar Askar is penning high class Urdu poetry for the last 40 years. His collection of poetry will be published soon. He has also written more than two dozen articles, which are also going to the press shortly. Book: Jash Malihabadi as nasr nigar. Compilation of books: 1. Raushni ke dareeche (collection of poetry of Prof. Syed Ahtesham Hussain), 1974 2. Jadeed Adab: manzar aur pas manzar 1978, 3. Josh Malihabadi: insan aur shair 1983.

Jafar Askari poetry

 jafar-askari   Jafar Askari is the son of famous Urdu critic Prof. Syed Ahtesham Hussain. He spent a considerable time in Allahabad where Muslim Saleem had a chance to meet him regularly at his Khuldabad house. Later, Jafar Askari moved to and settled in Lucknow. He joined Shia College there and has now retired as Urdu reader.

ڈاکٹرجعفر عسکری ۔بہترین انسان، لاجواب شاعرتھے: مسلم سلےمjafar-askari
نام: جعفر عسکری۔ولدےت: سےد احتشام حسین مرحوم۔تاریخ پےدائش: ۰۲ جون، ۵۴۹۱ء، بمقام لکھنو¿۔ تاریخ وفات ۰۲اکتوبر ۶۱۰۲ بمقام لکھنو¿۔تعلیم: ۸۸۹۱ءمےں لکھنو¿ ےونی ورسٹی کے شعبہ اردو سے ©©©©” جوش ملیح آبادی بحےثےت نثر نگار“ کے عنوان کے تحت تحقیقی مقالہ لکھ کر پی۔اےچ۔ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔پےشہ: ۷۰۰۲ءمےں لکھنو¿ کے شیعہ پوسٹ گرےجو ےٹ کالج سے لکچرر کی حےثےت سے سبکدوش ہوئے جہاں اےم۔اے (اردو) کے درجات مےں درس و تدریس کی خدمات انجام دےتے رہے تھے۔ادبی سفردرحقیقت تقریباً چار دہائےوں سے کچھ زےادہ عرصے سے شاعری کر رہے تھے۔ ۷۶۹۱ءسے غزلےں او نظمےں بعض موقر ادبی رسائل مثلاً ’نےا دور‘ لکھنو¿ ، ’کتاب‘ لکھنو¿اور ’آہنگ‘ گےا(بہار) وغےرہ مےں شائع ہونے لگی تھیں۔ اس وقت تک ہند و پاک کے ادبی رسائل مےں کلام شائع ہوتا رہا ۔ مجموعہ زےرِ ترتےب تھا لیکن شائع نہیں ہو سکا۔ جہاں تک نثری مضامین کا تعلق ہے تو اس وقت تک تقریباً دو درجن مضامین شائع ہو چکے ہےں۔ مندر جہ ذےل تالےفات کی فہرست پےش کی جارہی ہے:تصنیف: جوش ملیح آبادی بحےثےت نثر نگار۔تالیفات: (۱) روشنی کے دریچے ( شعری مجموع¿ہ ،پروفےسر سےد احتشام حسین، سن اشاعت ۴۷۹۱ئ، الہٰ آباد)۔(۲) جدید ادب منظر اور پس منظر(مجموع¿ہ مضامین،سن اشاعت ۸۷۹۱ئ، ناشر: اتر پردےش اردو اکادمی، مصنف: سےد احتشام حسین)۔ (۳) جوش ملیح آبادی انسان اور شاعر(مصنف : سےد احتشام حسین، سال اشاعت: ۳۸۹۱ئ، ناشر: ےو۔پی۔ اردو اکادمی)۔پتہ: ڈاکٹر جعفر عسکری، ۹۳۲ ممتاز محل کمپاو¿نڈ، گولا گنج، لکھنو¿۔۸۱۰۶۲۲
غزل
زندگی کے بحر غم کو بے کراں کرتا ہے کون  مےری ہر کوشش کو آخر رائےگاں کرتا ہے کون
جب بھی کھلتا ہے سر شاخ تمنا کوئی گل  اہتمام آمد فصل خزاں کرتا ہے کون
مےں تو چپ رہتا ہوں لےکن اندرون شہر جاں  کےا خبر چاروں پہر آہ و فغاں کرتا ہے کون
مندمل ہوتا ہے جب اس سے جدا ہونے کا زخم  خوں نشان زخم سے تازہ رواں کرتا ہے کون
معتبر کوئی بھی اب لگتا نہیں اپنے سوا  مدعّی تو سب ہےں لےکن سچ بےاں کرتا ہے کون
ذات پر اپنی بہت نازاں جو رہتے ہےں انھیں  صفح¿ہ ہستی سے بے نام و نشاں کرتا ہے کون
جب غبار تےرگی پھےلا ہو جعفر ہر طرف  اس گھڑی دل مےں چراغ اک ضو فشاں کرتا ہے کون

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *