Short story writer Naiyer Masud passes away

Naiyer MasudNaiyer Masud (1936-2017 was an Urdu scholar and Urdu-language short story writer. Masud was born in Lucknow and has spent nearly all his life there, working until his retirement as a Professor of Persian at Lucknow University.
Masud was the son of Syed Masud Hasan Rizvi ‘Adeeb’, also a Lucknow University Professor of Persian, a famed scholar of dastaan who was awarded the ‘Padma Shri’ for ‘Literature and Education’ in 1970. He is the elder brother of the noted satirist Azhar Masud.
Masud is the author of many scholarly books and translations (notably of Kafka), but is best known for his short stories, collected in the volumes Ganjifa, Simiya, Itr-e-kaafoor, and Taoos Chaman Ki Myna. For the last, he was awarded the 2001 Urdu prize of the Sahitya Akademi and the Saraswati Samman in 2007.
He received the honor of being the subject of the entire 1997 issue of the Annual of Urdu Studies.

A large selection of his stories have been translated into English by M.U. Memon in the volumes The Snake Catcher and Essence of Camphor.

صاحب اسلوب افسانہ نگار

آج ڈاکٹر نیر مسعود بهی ہم سب کو سوگوار چهوڑ کر ملک عدم روانہ ہوگئے. ان کی رحلت اردو افسانے ہی کی نہیں بلکہ اردو ادب کا نا قابل تلافی نقصان ہے . انهوں نے افسانوں کے علاوہ تحقیق اور ترجمہ کا بهی کام کیا.
وہ نہایت منفرد افسانہ نگار تهے .ان کے افسانوں میں ایک ایسا سحر اور خواب آور تجسس ہوتا تها کہ طوالت کے باوجود قاری پورا پڑه کر ہی دم لیتا تها. اور پهر اس کے اپنے دماغ میں وہ کہانی. اس کا ماحول اور اس کے کردار گردش کرنے لگتے تهے. ان کے افسانے ما ضی کی دیوڑهیوں کے ایک ایک در اس طرح کهولتے تهے کہ قاری خود کو بهی کہانی کا ایک کردار سمجهنے لگتا تها. انهوں نے اردو افسانے کو ایک بالکل نئی جہت عطا کی.
وہ اردو اور فارسی کے عالم تهے .ان کا گهرانہ نہایت علمی گهرانہ تها. ان کے مزاج میں غرور و تکبر نام کو نہیں تها. وہ ان لوگوں میں سے ایک تهے جو کبهی شہرتو ں کے پیچهے بهاگے نہیں بلکہ شہرتیں ان کے پیچهے دوڑا کرتی تهی .اپنے ہمعصروں کے وہ بے لوث رفیق تهے تو میرے جیسے جو ئیر ادیبوں سے بهی بےحد محبت کرتے تهے . انهوں نے میری ہمیشہ ہمت افزائی کی اور جب بهی مشورہ دیا وہ ہمیشہ قابل قبول رہا.

نیر مسعود اور ان کے افسانے ادب میں ہمیشہ زندہ رہیں گے.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *