Dolphins being raped in coastal areas of Sindh in Pakistan

dolphinA news article that surfaced on social media earlier this week has shocked the people with its grisly details of an alleged tradition in rural Sindh of raping Indus dolphins, a subspecies of freshwater river dolphin found in the Indus river.
The article titled “Disgusting tradition of having sex with blind dolphins in Sindh” was published in Urdu blog HumSub.
The author of the article alleges that the locals are well aware of the tradition but don’t dare to condemn it as it is a well-established tradition of the area and has been widely practised.
“The locals liken Dolphin’s genitals to the sexual organ of women,” the article adds. It goes on to allege that the extinct species is not only endangered by the polluted water but also because of sexual assault.
However, in the wake of all the bizarre claims of the article, no person from the area has confirmed the authenticity of the claims. Furthermore, the locals have expressed reluctance to believe it saying the tradition seems to be an unheard of new phenomenon.
The Islamabad-based author claims that he was informed by some locals from the rural Sindh, but lacks concrete evidence for his claims.
Earlier this week, a WWF-Pakistan and Sindh Wildlife Department team safely released a stranded Indus River dolphin into the main river.
The 42-inch-long female dolphin was spotted by locals stranded in Wassand Wah, a minor tributary of Warah Canal in Larkana. The locals, while considering the urgency, translocated the dolphin to comparatively deeper waters in a nearby fish pond as an immediate response to avoid its stranding-induced mortality. They later informed media and Sindh Wildlife Department officials. The rescue team carefully captured the dolphin following standard rescue protocols and transported it in a sound proof ambulance to release it in the Indus River at Sukkur Barrage upstream.

“سندھ میں زندہ نابینا ڈولفن سے جنسی زیادتی کی مکروہ روایت”👺

ان نابینا ڈولفن کو کئی برسوں سے جنسی تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ کئی وحشی درندے ان بے ضرر مچھلیوں کو اپنی ہوس کا شکار بناتے آ رہے ہیں۔ دریائے سندھ کے کنارے پر آباد لوگ بلھن مچھلی کی شرم گاہ کی مشاہہت انسانی صنف نازک سے کرتے ہیں اور اسے جنسی استحصال کا شکار بناتے آ رہے ہیں۔
دریائے سندھ کے کنارے پر آباد اکثر ملاح اور دیگر لوگ، چرواہے اس معصوم مچھلی کو زیادتی کا نشانہ بناتے آ ریے ہیں۔ مقامی لوگوں کو اس طرح کی زیادتی کا پتا ہے مگر آج تک اس برے فعل کے خلاف کسی نے آواز بلند نہیں کی۔
📢 آواز کون بلند کرے گا؟
ہم جب انسان کے بچوں کو انصاف نہیں دے سکے، آج کے دن تک ہم *سانحہ قصور* کے بچوں کو انصاف نہیں دے پائے- تو مچھلی کو کہاں سے انصاف دے پائیں گے؟ لیکن یہ بات مجھے سوچ لینی چاہیے کہ جہاں میرا رب *رحیم ہے کریم ہے* وہاں *قہار* بھی ہے-
میں بارہا مختلف جہگوں پر اپنا تحریری مطالبہ کر چکا ہوں- عدلیہ کے علاوہ فیس بک پر موجود ہر کسی سے ایک ہی مطالبہ کرتا رہا ہوں اور کرتا رہونگا- کہ
🍁ہم ایسے شخص کو شرعی سزا تو نہیں دیتے- لگتا ہے کہ وہ پولیس اور عدلیہ کا رشتہ دار ہے یا ہیں- چاہے وہ نوٹوں کی رشتہ داری ہو یا خونی رشتہ داری یا برداری یا صوبائی- کم از کم جنسی زیادتی کرنے والے مرد کو اُس کی مردانگی ثابت کرنے والے جنسی اعضاء سے محروم کر دیا جائے- تاکہ جب تک وہ زندہ رہے- معاشرے میں آنے والی نسلوں کے لئے نشان عبرت ہو- زندہ رہے تو موت مانگے- 🍁
توجہ فرمائیں؛
. پولیس والو، وکیلو اور جج صاحبان آپ کی اور میری شناخت ایک سانس کی محتاج ہے- کچھ تو ایسا کر جائو کہ معلوم ہو کہ ہم آخری نبی حضرت محمد مصطفیٰﷺ کے ⁩اُمتی ہیں- 🌴
.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *